نواز دور میں شریف خاندان کاسرکاری ہیلی کاپٹرکا رکشہ کی طرح بے دریغ استعمال

اسلام آباد :جدت ویب ڈیسک ::ہیلی کاپٹر آج کل پاکستانی سیاست میں خاصا دخیل ہو رہا ہے۔ وزیر اعظم عمران خان کے بنی گالا سے وزیر اعظم ہائوس تک ہیلی کاپٹر میں سفر کو تنقید کا نشانہ وہی ماجے ساجے بنا رہے ہیں جو گزشتہ ادوار میں قومی دولت کا بے دریغ استعمال کرتے رہے ہیں۔ نواز دور میں شریف خاندان نے سرکاری ہیلی کاپٹرکا بے دریغ استعمال کیا، نوازشریف کے بچوں کے ہیلی کاپٹر اور سرکاری جہاز کے استعمال پر پونے دو کروڑ روپے خرچ ہوئے جبکہ سابق وزیراعظم کا کھانا بھی ہیلی کاپٹر سے مری پہنچایا جاتا تھا۔
تفصیلات کے مطابق نواز شریف کے دور حکومت میں ہیلی کاپٹر رکشے کی طرح استعمال ہوتا تھا، نوازشریف کے زیراستعمال سرکاری ہیلی کاپٹرز ان کے اہل خانہ بھی استعمال کرتے رہے اور جہاز اور ہیلی کاپٹرز کے استعمال پر قومی خزانے کی خطیر رقم خرچ کی گئی۔ نوازشریف کے بچوں حسن، حسین اورمریم نواز کے جہازاستعمال کرنے پر 1کروڑ 72لاکھ اور ہیلی کاپٹر کے استعمال پر 62 لاکھ 30 ہزار خرچ ہوئے۔
نوازشریف نے بھی ہیلی کاپٹر اور جہاز کا غیر سرکاری استعمال کیا، سابق وزیراعظم کے لیے لاہور سے کھانا بھی ہیلی کاپٹر پر مری پہنچایا جاتا تھا، چند سو روپے کا کھانا لاکھوں میں مری پہنچتا تھا۔
خیال رہے کہ عمران خان کے وزیراعظم ہاؤس سے بنی گالا ہیلی کاپٹر پر جانے کے معاملے پر وزیرِ اطلاعات فواد چوہدری کے بیان پر حکومت کو کڑی تنقید کا سامنا ہے۔
وگل نقشے کے مطابق بنی گالا سے پاک سیکرٹیریٹ کا فاصلہ 15 کلومیٹر بنتا ہے، ہوا بازی کی زبان میں یہ فاصلہ 8 ناٹیکل مائل بنتا ہے، آگسٹا ویسٹ لینڈ کمپنی کا ہیلی کاپٹر اے ڈبلیو139وزیراعظم کے زیر استعمال ہے۔دوسری جانب ایوی ایشن ماہر کے مطابق وزیراعظم عمران خان کے زیر استعمال ہیلی کاپٹر حکومتِ پاکستان کی ملکیت ہیں، وزیر اعظم کے زیر استعمال ہیلی کاپٹر کا فی ناٹیکل میل خرچ 13 ڈالر یعنی1600 روپے بنتا ہے، پاکستانی روپوں میں مجموعی خرچہ دس ہزار سے 12 ہزار روپے تک بنتا ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.