وزیراعظم عمران خان کی سینیٹ سے واپسی پراپوزیشن کا احتجاج کرتے ہوئے واک آؤٹ

اسلام آباد: جدت ویب ڈیسک ::تفصیلات کے مطابق سینیٹ سے توہین آمیز خاکوں کے خلاف مذمتی قرار داد کی منظوری کے بعد وزیراعظم واپس لوٹ گئے، جس پر اپوزیشن کی جانب سے احتجاج کیا گیا.اپوزیشن ارکان نے سوال اٹھایا کہ انھیں سنے بغیر وزیراعظم کیوں ایوان سے چلے گئے، انھیں رکنا چاہیے تھا. اس موقع پر وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا کہ وزیراعظم نےنئی حکومت کے بعد پہلے اجلاس میں شرکت کی، اپوزیشن کووزیراعظم کی آمدکوسراہنا چاہیے تھا.شاہ محمودقریشی کا کہنا تھا کہ ماضی میں وزیراعظم سینیٹ میں نہیں آتے تھے، ماضی میں وزیراعظم کو سینیٹ میں بلوانے کے لیے احتجاج کیا جاتے تھے.انھوں‌نے مزید کہا کہ وزیراعظم عمران خان نے سینیٹ میں اپنانقطہ نظرپیش کیا، وفاقی کابینہ ایوان کوجواب دہ ہے.یاد رہے کہ آج سینیٹ میں توہین آمیز خاکوں کے خلاف مذمتی قرار داد منظور کی گئی۔ اس موقع پر وزیراعظم عمران خان نے بھی متخصر خطاب کیا اور اس ضمن میں او آئی سی کو متحرک کرنے اور معاملہ اقوام متحدہ میں اٹھانے کا اعلان کیا۔اپوزیشن کے واک آؤٹ کے بعد کورم پورانہ ہونےپرسینیٹ کااجلاس کل تک کے لیے ملتوی کر دیا گیا.   وزیراعظم عمران خان کا کہنا ہے کہ توہین آمیزخاکوں کامعاملہ اقوام متحدہ میں اٹھائیں گے.ان خیالات کا اظہار انھوں نے سینیٹ اجلاس میں توہین آمیزخاکوں کے خلاف مذمتی قرارداد کی منظوری کے بعد کیا.وزیراعظم نے کہا کہ سینیٹ کی منظور کردہ قرارداد اقوام متحدہ میں پیش کریں گے، آزادی اظہار کے نام پراس قسم کی حرکتوں سے مسلم امہ کو تکلیف پہنچتی ہے. یورپ میں بہت کم افراد کوعلم ہے کہ ایسے خاکوں سے ہمیں کیا صدمہ پہنچتا ہے.انھوں نے کہا کہ توہین آمیز خاکوں کے خلاف اوآئی سی کومتحد کریں گے، اوآئی سی کےذریعے ایک واضح پیغام عالمی سطح پرپہنچایا جائے گا، یقین دلاتا ہوں کہ معاملے کو اقوام متحدہ میں اٹھائیں گے، البتہ پہلے ہمیں‌ خود کو منظم کرنا ہوگا.عمران خان نے کہا کہ ہردوہفتے میں وزیراعظم سینیٹ میں سوالات کے جوابات دے گا، ہمارے وزرا، سینیٹرزجواب دہ ہیں، احتساب کےنظام کومضبوط کریں گے، وزرا،سینیٹرزکی اسمبلیوں میں حاضری یقینی بنائیں گے.وزیراعظم نے کہا کہ ملکی معاشی صورت حال آپ کے سامنے ہے، ہمیں اپنے حالات میں بہتری کے لیے اقدامات کرنے ہوں گے.وزیراعظم نے مزید کہا کہ عوام کےٹیکس کاپیسہ ہماری شاہانہ زندگی کے لئےنہیں، عوام کے مستقبل کے لئے ہے، اگرہم چاہیں گے، تو تبدیلی آئے گی، ورنہ نہیں آئے گی.ان کا کہنا تھا کہ گورننس سسٹم ٹھیک کریں گے، تو عوام کااعتمادبڑھےگا، ہماری پوری کوشش ہے کہ اپنی قوم کو اپنےپیروں پرکھڑاکریں، کفایت شعاری مہم سےسب سےزیادہ فائدہ عوام کوہوگا، وزیراعظم ہاؤس کی گاڑیوں کونیلام کریں گے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.