حکومت نے کھاد کی صنعت کو مستقبل کی ادائیگیوں میں سہولت کی فراہمی اورزیر التواء بڑے کلیمز کے جلد حل کی یقین دہانی کرا دی

لاہور جدت ویب ڈیسک :حکومت نے کھاد کی صنعت کو مستقبل کی ادائیگیوں میں سہولت کی فراہمی اور زیر التواء بڑے کلیمز کے جلد حل کی یقین دہانی کرا دی۔ فرٹیلائزر مینوفیکچررز آف پاکستان ایڈوائزری کونسل کے ایگزیکٹو ڈائریکٹر بریگیڈیئر شیر شاہ نے نو تعینات شدہ وفاقی سیکریٹری برائے وزارت نیشنل فوڈ سیکورٹی اینڈ ریسرچ فضل عباس میکن کے ساتھ ملاقات کی اور انہیں ادائیگیوں میں متوقع تاخیر کے بارے میں آگاہ کیا۔یہ اسلام آباد میں معنی خیز ملاقات تھی۔ ملاقات کے دوران وفاقی سیکریٹری نے کھاد کی صنعت کو مستقبل کی ادائیگیوں میں سہولت کی فراہمی اور زیر التواء بڑے کلیمز کے جلد حل کی یقین دہانی کرائی۔ انہوں نے وعدہ کیا کہ حکومت 9 ارب روپے کے دستیاب فنڈز ایک ہفتہ میں جاری کر دے گی جو سبسڈی کی ادائیگی میں تاخیر کے باعث پیدا ہونے والے کیش فلو کے مسائل کو حل کرے گا۔زیر التواء سبسڈی کلیمز کی بقیہ رقم کے لئے وزارت نیشنل فوڈ سیکورٹی ریسرچ تیسرے فریق کی توثیق کر رہی ہے جو حکومت کی سبسڈی بحران جس نے کھاد کی صنعت کے لئے شدید مالیاتی چیلنجز پیدا کئے، کے حل کے لئے سنجیدہ عزم اور کوششوں کی عکاسی کرتی ہے۔ کھاد کی صنعت سے وابستہ سٹیک ہولڈرز نے امید ظاہر کی کہ وفاقی سیکریٹری برائے وزارت نیشنل فوڈ سیکورٹی اینڈ ریسرچ کے یہ ٹھوس کوششیں اہم قدم ثابت ہوں گی جو سبسڈی کی ادائیگیوں میں تاخیر کے باعث کھاد کی صنعت کو درپیش مالیاتی مشکلات کا خاتمہ کریں گی۔یہ غذائی اجناس کی قیمتوں میں کمی کے ذریعے زرعی شعبہ کی نمو کو تیز کرنے کیلئے حکومت کی سنجیدگی کو بھی ظاہر کرتی ہے۔ کھاد کی صنعت کی بحالی کیلئے زیادہ ضروری مالیاتی مدد اور ریلیف میں توسیع کے ذریعے یوریا پر یہ سبسڈی بہت سے اقتصادی فوائد کا وعدہ کرتی ہے جو قومی دھارے میں سب سے بڑا ریونیو فراہم کنندہ ہے۔ گزشتہ چند سالوں سے حکومت نے فرٹیلائزرز پر سبسڈی کی اجازت دی۔ یوریا تیار کرنے والوں نے عام کسانوں کی حوصلہ افزائی کے لئے سہولت کار اور ثالث کی حیثیت سے شرکت پر رضامندی ظاہر کی تھی۔ اب کھاد کمپنیوں نے بڑی مقدار میں کھاد ارزاں نرخوں پر فروخت کر دی ہے، حکومت کو سبسڈی کلیمز کے توثیقی عمل کو آسان بناتے ہوئے واجب الادا ادائیگیوں میں تیزی لانی چاہئے

Leave a Reply

Your email address will not be published.