لینڈ مافیا کی پولیس کی سرپرستی میں حسن پنہور گوٹھ پر چڑھائی

ملیر سے رحیم شاہ کی رپورٹ : حسن پنہور گوٹھ پر لینڈ مافیا کی پولیس کی سرپرستی میں چڑہائی، ہندو برادری کی خواتین سے بدسلوکی،بچوں پر تشدد، ہندو برادری کے گھر اور مذہبی عبادت گاہوں کو مسمار کرنے کی کوشش، مکینوں کی مزاحمت پر لینڈ مافیا کے کارندے ہوائی فائرنگ کرتے ہوئے واپس روانہ، مشتعل مکینوں کا قومی شاہرا پر احتجاجی مظاہرہ اور دھرنا، پیپلز پارٹی چیئرمین بلاول بھٹو زرداری، چیف جسٹس سندھ ہائی کورٹ، ڈی جی رینجرز، آئی جی سندھ پولیس، کور کماندڑ کراچی سے نوٹس لینے کی اپیل، تفصیلات کے مطابق: ملیر کے علاقے حسن پنہور گوٹھ کے ہندہ محلہ پر لینڈ مافیا کے کارندوں نے پولیس کی سرپرستی میں چڑہائی کرتے ہوئے ہندو برادری کی خواتین سے بدسلوکی کی اور معصوم بچوں ،بزرگوں کو تشدد کا نشانہ بناتے ہوئے ہندو برادری کے گھروںاور مذہبی عبادت گاہوں ،مندروں کو مسمار کرنے کی کوشش کی جس کے خلاف حسن پنہور گوٹھ کے مکینوں رشید سدھایو ،ممتاز سولنگی اور ہندو برادری کے شام لال، میگھو بھیل اور دیگر کی سربراہی میں سینکڑو ںخواتین ،بچوں اور مردوں نے احتجاجی مظاہرا کرتے ہوئے کراچی سے ٹھٹھہ جانے والی قومی شاہرا پر دھرنا دیا، مظاہرین نے صحافیوں کو بتایا کہ آغا تجمل نامی لینڈ مافیا کے سرپرست اور اس کے مسلح افراد نے پولیس کے ہمراہ گوٹھ پر چڑہائی کرتے ہوئے گھروں اور ہماری عبادت گاہوں کو مسمار کرنے کی کوشش کی مزاحمت پر گالیاں ،دھمکیاں،ہوائی فائرنگ کرتے ہوئے واپس ہوگئے،مظاہرین نے بتایا کہ آغا تجمل نے اس سے پہلے بھی گوٹھ کی زمین پر قبضے کرنے کے لئے ہمیں حراساں کرنے کی کوشش کی جس کی ہم نے درخواست کے ذریعے علاقہ پولیس کو اطلاع دی اس کے بعد ملیر کورٹ میں حراسمنٹ پٹیشن نمبر458/2017دائر کی جس کا فیصلہ بھی 27/05/2017کو ہمارے حق میں آیا مگر اس کے باوجود آغا تجمل ہمیں منگھڑت مقدمات میں پھنسانے اور جانی نقصان پہنچانے کی دھمکیاں دیتا رہتا ہے آج اس نے اپنے کارندوں کے ہمراہ ہمارے گوٹھ کو بھی مسمار کرنے کی کوشش کی ہے ہم چیف جسٹس سندھ ہائی کورٹ ،آئی جی سندھ پولیس، ڈی جی رینجرز، کورکمانڈر کراچی سے نوٹس لینے کی اپیل کرتے ہوئے مطالبہ کرتے ہیں کہ آغا تجمل کے خلاف سخت کاروائی کرتے ہوئے ہمارے گوٹھ کی زمین اور ہمارے جان و مال کو تحفظ فراہم کیا جائے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.