لینڈ مافیا نے عدالتی احکامات ہوا میں اڑا دئیے محکمہ اینٹی کرپشن نے آنکھیں بند کر لیں

جدت ویب ڈیسک :کراچی کی زمینوں پر ہونے والے نا جائز قبضوں اور تعیمرات نے کراچی ماسڑپلان کی حیثیت کو مشکوک بنا رکھا ہے ، یہاں زمین کے ایک حصے سے متعلق مختلف نقشے منظور کیے جاتے ہیں نقشوں اور زمینی حقائق واضح فرق ہونے کی وجہ کرپٹ عناصر ہیں ،جن پر نقشوں کی ہیرپیھر کے ذریعے کروڑوں روپے کمانے کا الزام ہے جو کہ محدد سے دورانیہ گلستان جوہر کی درمیانی رہایش گاہ سے اچانک ڈیفنس میں اعلیٰ طرذرہائش اختیار کر چکے ہیں کیونکہ انہیں مخصوص سیاسی جماعتوں کےلینڈ مافیا گروہوں کی پشت پناہی حاصل ہے،کراچی ماسٹر پلان ڈیپارنمنٹ پر منظور نظر افراد کا قبضہ برقرار ہے کرپٹ عناصر اور لینڈ مافیا کا کھڑ جوڑ ،قبضے اور نا جائز تعمیرات سے متعلق نقشوں کی منظوری کا سلسلہ جاری ہے ۔ماسٹر پلان ڈیپاریمنٹ کے کرپٹ عنا صر لینڈ مافیا گرہووں سے بھا ری رشوت کے عوض غیر قانونی طریقے سے نقشہ منظور کر لیتے ہیں ۔بعدمیں زمین کا اصل وارث سامنے آجائے غیر قانونی طریقے سے منظور شدہ نقشہ منسوخ کر کے پیچھلے نقشے کو بحال کر دیا جاتا ہے ،اس وقت کراچی کی متعدد قبضہ اراضی کا نقشہ غیرقانونی طریقے سے منظور شدہ ہے ۔عدالت عظٰمی کے احکامات کو تسلیم نہ کرنے افسران پر کروڑوںروپے کا الزام صوبائی احتساب بیودو اور محکمہ اینٹی کرپشن نے آنکھیں بند کر لیں

Leave a Reply

Your email address will not be published.