JI

حکومت آئین میں ترمیم واپس لے ، سراج الحق

پشاور جدت ویب ڈیسک امیر جماعت اسلامی پاکستان سینیٹر سراج الحق نے حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ حکومت نے آئین میں جو ترمیم کی ہے اس ترمیم کو واپس لے ۔ہم حکمران پارٹی کے آئین میں اس ترمیم کی مذمت کرتے ہیں، عوام نے حکومت کو اس لئے مینڈیٹ نہیں دی ہے کہ وہ سپریم کورٹ کے فیصلے پر شب خون ماردے،اب وہ شخص کبھی بھی اہل نہیں ہوسکتا جسے عدالت نے نااہل قرار دیا نہ وہ پاکستان کی قیادت کرسکے گا۔اکثریت کے بل بوتے پر سپریم کورٹ کے فیصلے کو بلڈوز کرنے کی مذمت کرتے ہیں ،بونیر اسلام کا قلعہ ہے اور آنے والے انتخابات میں بونیر کے عوام غلامان محمد کو ووٹ دینگے،ان خیالات کا اظہار انہوں نے بونیر کے علاقہ طوطالئی میں ایک بڑے شمولیتی جلسے سے خطاب کرتے ہوئے کیا اس موقع پرسابق امیدوار صوبائی اسمبلی وسابق ناظم طوطالئی راج ولی خان نے اپنے سینکروں ساتھیوں سمیت پی ٹی آئی سے مستغفی ہوکرجماعت اسلامی میں شمولیت کا اعلان کیا جبکہ سابق سپیکر صوبائی اسمبلی بخت جہان ،امیر جماعت اسلامی خیبرپختونخوا مشتاق احمد خان ،صدر جے آئی یوتھ عبدالغفار خان نے بھی خطاب کیا سینیٹر سراج الحق نے کہا کہ آنے انتخابات غلامان امریکہ اور غلامان محمد کے درمیان معرکہ ہوگا اور اس معرکے میں عوام اب غلامان محمد کے صف میں کھڑے ہونگے انہوں نے کہا کہ سینکڑوں کی تعداد میں جماعت اسلامی میں اہم سیاسی عمائدین کی شمولیت اس بات کی گواہی ہے کہ اب عوام کو ورغلانے کا وقت گذر چکا ہے اور اب عوام کا اپنا دور آنے والا ہے ،انہوں نے کہا جماعت اسلامی اس ملک میں عدل و انصاف پر مبنی نظام کے قیام کیلئے جدوجہد کررہی ہے اور اس جدوجہد میں اب عوام جماعت اسلامی کی پشت پر کھڑے ہیں جماعت اسلامی کے امیر نے کہا کہ جماعت اسلامی کی حکومت آئیگی تو ہم شہریوں کو انکے حقوق دینگے ،بے گھر افراد کو گھر دینا ،بچے کی ہاتھ میں کتاب دیکر تعلیم سے آراستہ کرنا ،طبی سہولیات ،خواتین کوانکے اصل حقوق دینا یہ ریاست کی ذمہ داری ہے انہوں نے کہا کہ یہ کام صرف جماعت اسلامی ہی کرسکتی ہے انہوں نے کہا کہ اس بڑے کام میں عوام کو میرے ساتھ کھڑاہونا ہوگا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.