Eid-ul-Azha Islamic festival

عید الاضحی پرایک ارب ڈالر تک کا کاروبار متوقع

اسلام آباد جدت ویب ڈیسک ایف پی سی سی آئی کی ریجنل کمیٹی برائے صنعت کے چیئرمین عاطف اکرام شیخ نے کہا ہے کہ امسال ملک میں عید الاضحی پرایک ارب ڈالرتک کا کاروبار متوقع ہے جس سے لاکھوں افراد اور زراعت و لائیو سٹاک کے علاوہ معیشت کے کئی شعبوں کو بھرپور فائدہ ہو گا ۔ گزشتہ سال کی طرح امسال بھی عید کے موقع پر ایک کروڑ بیس لاکھ جانور قربان کئے جانے کا تخمینہ ہے ۔گزشتہ عیدالاضحی پر پینتیس لاکھ گائیں بیل اور بھینسیں، پچیاسی لاکھ بکرے بکریاں دنبے اور اسی ہزار اونٹ قربان کئے گئے تھے جس میںامسال کسی خاص اضافہ کا امکان نہیں کیونکہ کیونکہ سیاسی عدم استحکام کی وجہ سے اس کاروبار کا پھیلائو متاثر ہوا ہے۔عاطف اکرام شیخ نے یہاں جاری ہونے والے ایک بیان میں کہا کہ گزشتہ سال کی طرح اس سال بھی کم از کم چھ سے سات ارب روپے مالیت کی کھالیںنا تجربہ کار قصائیوں، موسم گرما، ذخیرہ کرنے کے نامناسب انتظامات، لوڈ شیڈنگ اور کھالوں کو محفوظ رکھنے کے متعلق اگہی نہ ہونے کی وجہ سے ضائع ہو جائیں گی جس سے برامدی شعبہ کو چار سو ملین ڈالر تک کا نقصان اٹھانا پڑے گا۔انھوں نے کہا کہ سیاسی عدم استحکام کی وجہ سے امسال بڑے تاجروں نے جانوروں کی خرید و فروخت میں بھاری سرمایہ کاری نہیں کی جس سے اس شعبہ سے وابستہ افراد کی مشکلات میں اضافہ ہوا ہے کیونکہ ان میں سے بہت سے اپنا پورا سٹاک ایک بیوپاری کو فروخت کر دیتے تھے مگر اب انھیںجانور بیچنے کیلئے مختلف شہروں میں قائم منڈیوں کا رخ کرنا پڑ رہا ہے۔ عام طور پر سرمایہ کار عید سے چند ماہ قبل ہی فارم مالکان کو پورے ریوڑ کا ایڈوانس ادا کر دیا کرتے تھے مگر امسال صورتحال مختلف ہے جس سے اس کاروبار میں لوگوں کی دلچسپی کم ہو سکتی ہے۔انھوں نے کہا کہ ترسیلات میں کمی اور سرمایہ کاروں کی پراپرٹی مارکیٹ میں دلچسپی سے بھی اس کاروبار پر اثر پڑا ہے۔ پاکستان ایشیائ میں خام چمڑے کی سب سے بڑی منڈی ہے اور صنعتی شعبہ کو تیس سے چالیس فیصد خام مال عید الاضحی کے موقع پر سستے داموں مل جاتا ہے مگر اگر اس کا ضیاں کم ہو جائے تو تمام شراکت داروں کو فائدہ ہو گا۔اگر جانوروں کی سمگلنگ کم ہو جائے تو انکی قیمت بھی کم ہو جائے گی اور عوام کو سارا سال سستا گوشت دستیاب ہو گا۔انھوں نے کہا کہ حکومت عید کی معیشت کے تمام رموز جاننے کیلئے ایک تفصیلی رپورٹ بنائے تاکہ تمام حقائق کی روشنی میں عوام کی فلاح کیلئے اقدامات کئے جا سکیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.