جوہری توانائی پر امریکی دباؤ ایٹمی معاہدے کے منافی ہے، ایران

تہران جدت ویب ڈیسک ایران کے وزیر خارجہ محمد جواد ظریف نے آئی اے ای اے پر امریکی دباؤ کو جامع ایٹمی معاہدے کے متن اور اس کی روح کے منافی قرار دیدیا۔ارنا نیوز کے مطابق یورپی یونین کے امور خارجہ کی انچارج فیڈریکا موگرینی کے نام لکھے مراسلے میں ایران کے وزیر خارجہ محمد جواد ظریف نے اقوام متحدہ میں امریکی نمائندہ نکی ہیلی کے دورہ ویانا کا حوالہ دیتے ہوئے کہا ہے کہ عالمی ادارہ برائے جوہری توانائی’’ آئی اے ای اے‘‘ پر امریکی دباؤ جامع ایٹمی معاہدے کی خلاف ورزی اور اس کی روح کے منافی ہے۔ وزیر خارجہ نے یورپی یونین کے امور خارجہ کی انچارج اور آئی اے ای اے کے ڈائریکٹر کے نام اپنے الگ الگ مراسلوں میں یہ بات زور دے کر کہی ہے کہ نکی ہیلی کا دورہ ویانا آئی اے ای اے پر دباؤ بڑھانے کی غرض سے انجام پایا لہذا اس معاملے سے پیشہ ورانہ طور پر نمٹنے کی ضرورت ہے۔انہوں نے کہا کہ نکی ہیلی کے اس قسم کے اقدامات سے آئی اے ای کی ساکھ متاثر ہوگی کیونکہ جامع ایٹمی معاہدے کی نگرانی کرنا اس ادارے کی ذمہ داری ہے۔ ایران کے وزیر خارجہ نے یہ بات زور دے کر کہی کہ آئی اے ای اے کو ، ایران کی ایٹمی سرگرمیوں کے متعلق معلومات کسی تیسرے فریق کو دینے سے گریز کرنا چاہیے۔انہوں نے کہا کہ جامع ایٹمی معاہدے اور سلامتی کونسل کی قرار داد 22 اکتیس کے تحت آئی اے ای اے کو ایران کی اقتصادی اور فنی ترقی میں رکاوٹ ڈالنے سے بھی گریز کرنا چاہیے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.