پدماوتی کی مخالفت، انتہا پسند ہندوؤں نے ایک شخص کو پھانسی لگا دی

جدت ویب ڈیسک :بھارتی میڈیا کے مطابق آج صبح بھارتی ریاست جے پور کے مشہور ’نہر گڑھ‘ قلعے پر ایک شخص کی پھندہ لگی لاش لٹکی ہوئی پائی گئی ہے، جب کہ لاش کے قریب پتھر پر ایک دھمکی آمیز تحریر بھی درج تھی جس پر لکھا تھا ’ہم پتلے نہیں جلاتے بلکہ انسان کو لٹکادیتے ہیں‘۔ اس تحریر کے نیچے ’پدماوتی‘لکھا ہوا تھا۔ یہ نوٹ اور ملنے والی لاش واضح طور پر سنجے لیلا کو دی جانے والی دھمکی ہے جس سے ظاہر ہوتا ہے کہ فلم کے خلاف ملک بھر میں جاری مظاہرے خالی دھمکیاں نہیں ہیں بلکہ کچھ لوگ ان دھمکیوں کو لے کر نہایت سنجیدہ ہیں اور اگر فلم ریلیز کی گئی تو جان لینے سے بھی دریغ نہیں کریں گے۔فلم انڈسٹری کودیوداس، ہم دل دے چکے صنم اور رام لیلا جیسی شہرہ آفاق فلمیں دینے والے نامور بھارتی ہدایت کار سنجے لیلا بھنسالی اور اداکارہ دپیکا پڈوکون کی فلم ’پدماوتی‘کی مشکلات ختم ہونے میں ہی نہیں آرہی ہیں۔ فلم اپنے موضوع اور مرکزی کردار’رانی پدماوتی‘کے باعث تنازعات کی زد میں ہے۔ ہندو انتہا پسندوں نے دھمکی دیتے ہوئے کہا ہے کہ اگر فلم ریلیز کی گئی تو فلم کی ہیروئن دپیکا پڈوکون کی ناک، سنجے لیلا بھنسالی کا سر اور اداکار رنویر سنگھ کی ٹانگیں کاٹ دیں گے تاہم پہلی بار کسی بھی فلم کی مخالفت اس حد تک بڑھ گئی ہے کہ ایک شخص اپنی جان سے ہاتھ دھو بیٹھا۔ کچھ لوگوں نے شوٹنگ کے وقت فلم کا سیٹ جلانے کے ساتھ سنجے لیلا بھنسالی پر تشدد بھی کیا تھا دھمکیوں اور تشدد تک رہتی تو ٹھیک تھا کیونکہ ماضی میں کئی فلموں کو دھمکیوں کا سامنا رہا ہے

https://www.youtube.com/watch?v=NxM-gEFcAIo

 

Leave a Reply

Your email address will not be published.