Daily archive

April 16, 2021

شاہینوں نے جنوبی افریقا کیخلاف ٹی ٹوئنٹی سیریز جیت لی

/

ویب ڈیسک  ::پاکستان نے چوتھے ٹی ٹوئنٹی میں جنوبی افریقا کو 3 وکٹوں سے شکست دے کر چار میچوں کی سیریز تین ایک سے جیت لی۔

سنچورین میں کھیلے گئے سیریز کے آخری میچ میں بولرز نے شاندار کارکردگی کا مظاہرہ کرتے ہوئے میزبان ٹیم کو 144 رنز پر چلتا کیا تو ہدف کے تعاقب میں فخرزمان نے لاٹھی چارج کرتے ہوئے بولرز کے چھکے چھڑائے اور ٹیم کی فتح میں کلیدی کردار ادا کیا۔

فخرزمان نے جارحانہ بیٹنگ کرتے ہوئے 34 گیندوں پر 60 رنز کی برق رفتار اننگز کھیلی جس میں 4 جاندار چھکے اور 5 دلکش چوکے شامل تھے۔ بابراعظم 24 رنز کی باری کھیلی جب کہ اوپنر محمد رضوان بغیر کھاتا کھولے پویلین لوٹے۔

پاکستان نے مطلوبہ ہدف 7 وکٹوں کے نقصان پر آخری اوور میں حاصل کر لیا۔

اس سے قبل  پاکستان نے ٹاس جیت کر پہلے بولنگ کرنے کا فیصلہ کیا

Women players to assemble in Karachi for training camp on 17th

Web Desk ::Twenty-six women cricketers will undergo skills and fitness training at the DHA Sports Club Moin Khan Academy in Karachi during the National Women High Performance Camp.

Head Coach David Hemp who is currently conducting a camp for the emerging women players at the same venue will take charge of this camp once it formally commences on Saturday 24 April following a seven-day quarantine period for the players in a Karachi hotel between 17-23 April.

Player names (in alphabetical order): Aiman Anwar, Aliya Riaz, Anam Amin, Ayesha Naseem, Ayesha Zafar, Bibi Nahida, Diana Baig, Fatima Sana Khan, Iram Javed, Javeria Wadood, Jaweria Rauf, Kainat Imtiaz, Kaynat Hafeez, Maham Tariq, Muneeba Ali, Najiha Alvi, Nashra Sandhu, Natalia Pervaiz, Nida Rashid, Omaima Sohail, Rameen Shamim, Saba Nazir, Sadia Iqbal, Sidra Amin, Sidra Nawaz and Syeda Aroob Shah.

Let,s Meet three Pakistani students who make ACCA’s global toppers list

Web Desk :: ACCA (the Association of Chartered Certified Accountants) has announced the pass rates of its latest exam sitting for March 2021 and three students from Pakistan are on the list of its global prizewinners who’ve made the country proud by scoring the highest marks among all exam sitters from around the world.

Inspired by the recent successes of Pakistani students like Zara Naeem Dar and Muhammad Abdullah, it’s heartening to see the country’s youth vying for the top spots in the field of education and highlighting Pakistan globally as a hub for world-class talent in accountancy and finance.

Sajjeed Aslam, head of ACCA Pakistan, said: “Whilst Covid-19 continues to be the greatest challenge of our time, our students have made tremendous strides in their ACCA journeys in this latest exam session. We’re particularly proud of the fact that ACCA students from Pakistan are consistently making the country proud with their excellent exam performance. We’ll continue to nurture the dreams of our youth by offering them global platforms and exciting career opportunities”

Considered the gold standard in accountancy, the ACCA Qualification rigorously tests the skills, abilities and competencies that a modern-day business professional needs, with a firm grounding in ethics and professionalism. It prepares students for a rewarding, global career as a qualified and ethical finance professional.

 

Meet the ACCA’s March 2021 global prizewinners from Pakistan:

KAHAF MOID

Kahaf Moid, a young girl from Karachi, has scored the highest marks in the Audit and Assurance paper and once again proved that young women are the bright future of our country. Kahaf’s father is a telecom engineer currently working in Dubai and her mother is here in Pakistan providing her all the support, allowing her to test her wings in professional accountancy.

“My mother was unable to continue her education after matric, so she is doing everything that she can to see her daughter realise her full potential and become a source of pride for the family,”’ said Kahaf Moid, ACCA global prizewinner. Kahaf was a science student and has completed her A-Level with subjects like Biology, Physics, Chemistry and Maths. Due to her extraordinary exam performance, she was awarded a full scholarship by her college in Karachi at A-level.Global recognition, flexibility, and affordability are some of the reasons that made Kahaf choose ACCA, she added: “I was also impressed by the idea that while pursuing ACCA you also have the option to earn a BSc from Oxford Brookes and an MSc from the University of London. It’s the best combination one can ask for.”After qualifying ACCA, Kahaf wants to represent Pakistan on various international fora and serve at global organisations. She wants to correct the outdated perception about Pakistani women for being backwards and forbidden.“We’re not the ones with our wings clipped, we’re already flying high and making a difference. Pakistani women are the future global leaders and it’s just about the time that the world will see it for themselves.”

FAKIHA MAQSOOD

Fakiha Maqsood, another bright young girl from Faisalabad, is the global topper and has scored the highest marks in the Advanced Taxation paper. She has also achieved the highest marks by any student in Pakistan in the Strategic Business Reporting exam. After completing her O/A levels from Pakistan, Fakiha went to the UK to attend City, the University of London for a BSc Hons in accounting and finance where she scored the second position in the entire batch. Faikha had topped Punjab in her A-level exams and was previously national position holder in ACCA’s Financial Management exam.

“My father is also a professional accountant and it’s his integrity, discipline and composure that made me choose accountancy as a career for myself. Having studied in the UK, I knew the global recognition of ACCA and the limitless opportunities this qualification offers. And that’s why I enrolled myself in ACCA soon after returning to Pakistan,” said Fakiha.

After qualifying for ACCA, Faikha wants to play a part in the modernisation of the textile sector in Faisalabad. Using her global expertise and future-focused insights acquired in ACCA, she wants to help the sector prepare for the future and revive its global standing as world’s biggest exporting city by embracing digitization and innovation.

ALI SHAN

Ali Shan from Karachi has scored the highest marks in the Financial Reporting exam and has been declared the global prizewinner outshining students from around the world.Ali is the eldest son in a family of 5 and wants to do something big for himself, as well as for the people around him. Ali’s father is in the field of marketing and his mother teaches at a school. He started ACCA after completing Intermediate in Commerce with an A-1 grade.

“I’ve always been fascinated by numbers and enjoy being analytical. So accounting was a natural choice for me. I want to change how businesses operate in the country and would like to play my role in promoting innovation and ethics at the workplace. As a country, we’ve been left behind because we’ve unfortunately normalised unethical practices and discourage new way of doing things. Using my knowledge gained in ACCA, I will be a catalyst for change in the corporate sector,” said Ali Shan. With 227,000 members and 544,000 future members based in 176 countries, ACCA is recognised as a global passport to building a truly international career with the world’s leading brands.

فیا کیفے کی مالک پاکستانی شیف، فوربس 30 انڈر 30 کی فہرست میں شامل

/

لندن ۔ ویب ڈیسک :: پاکستانی نژاد شیف، زہرہ خان کو ان کی اعلیٰ صلاحیتوں کی بنا پر فوربس 30 انڈر 30 میں شامل کیا گیا ہے۔ یہ اعزاز ہرسال فوربس میگزین کی جانب سے عطا کیا جاتا ہے۔
فوربس کی جانب سے 30 انڈر 30 کا اعزاز ملنے کے بعد زہرہ نے سوشل میڈیا پر کہا کہ ’ وہ ممتاز ابھرتے ہوئے اور ماحول تبدیل کردینے والے اینٹرپرونیئرز میں شمولیت پر بہت شکرگزار ہیں۔‘
انہوں ںے کہا کہ ان کی کیفے کا اکثر اسٹاف خواتین پر مشتمل ہے جن کا بنیادی کردار ہے۔ وہ اس اعزاس کےلئے اپنے اہلِ خانہ، اپنی خواتین ملازم اور دوستوں کی شکرگزار ہیں جو ان کی لیے بڑی تحریک ہے۔ اس کے علاوہ فیا اور ڈائس ریستوران میں اپنی ٹیم کی ممنون ہیں جن کی بدولت یہ سب کچھ ممکن نہ تھا۔
’ پاکستان سے برطانیہ آنے والی زہرہ خان نے تارکینِ وطن کے متعلق لگے بندھے تصورات کی نفی کرتے ہوئے برطانیہ میں خواتین کو مضبوط کیا۔ وہ ایک ماں بھی ہیں اور شیف بھی جو فیا کیفے اور کئی دکانوں کی مالک ہیں۔ یہاں 30 کے قریب مستقل لوگوں کا اسٹاف ہے جو کھانا پکانے سے لے کر ان کی ڈیزائننگ اور پیکنگ میں مصروف ہے۔ ادارے کا 10 فیصد منافع خواتین کی پیشہ ورانہ تربیت پر خرچ ہوتا ہے،‘ فوربس نے لکھا۔زہرہ خان نے کہا کہ وہ صارفین کی ضروریات کے تحت کام کرتی ہیں اور یہی کامیابی کا راز بھی ہے۔ وہ اپنی مضبوط ٹٰیم کے ساتھ اشیائے خوردونوش کے بدلتے انداز پر کام کررہی ہیں۔
2015 میں زہرہ خان لندن چلی گئی تھیں اور وہاں گورڈن رامسے اسکول سے وابستہ ہوئیں جو شیف اور اس سے وابستہ امور سکھانے والا ایک ممتاز ادارہ ہے۔ اب وہ لندن کی بونڈ اسٹریٹ پر واقع فیا کیفے کی مالک بھی ہیں۔ اس پورے سفر میں انہوں نے غیرمعمولی محنت کی اور دنیا میں اپنا نام بنایا ہے۔

جاتی امرا کا اصل نام موضع مانک ہے ، شہزاد اکبر

//

لاہور : شہزاد اکبر کا کہنا ہے جاتی امرا کا اصل نام موضع مانک ہے۔

شہزاد اکبر نے کہا موضع مانک میں 839 کنال سرکاری زمین لوگوں کو غیر قانونی طورپر منتقل کی گئی، حکومت نے وہ منسوخ کر دی۔ سرکاری زمین کسی کے نام منتقل نہیں کی جا سکتی۔ سستی شہرت کے لیے کہا گیا کہ پنجاب حکومت آپریشن کرنے جارہی ہے۔ کل سے سنسنی پھیلانے کی کوشش ہو رہی ہے۔ میرا نام لے کر باتیں کی جارہی ہیں۔ دو دن سے ن لیگ کی جانب سے مجھ پر بارش کی جارہی ہے۔شہزاد اکبر نے کہا لاہور کے ریونیو ڈیپارٹمنٹ کے ریکارڈ کی پڑتال ہوئی تو پتہ چلا کہ 1966،67 میں موضع مانک  میں حکومت پنجاب کی 839 کنال اراضی تھی۔ آج ایک مرلہ بھی نہیں ہے۔ موضع مانک میں بہت سی زمین 1989 اور 1994 میں ٹرانسفر ہوئی۔شہزاد اکبر کا کہنا تھا کوئی نہیں کہہ رہا کہ شریف خاندان نے غیر قانونی طریقے سے زمین اپنے نام کرائی۔ ریکارڈ خود بولتا ہے، ریکارڈ تبدیل نہیں کیا جا سکتا۔ شریف خاندان نے کاغذوں میں وحیدہ بیگم سے زمین خریدی ہے۔

شریف خاندان کا کلیم وحیدہ بیگم کے ورثا سے بنتا ہے۔ بورڈ آف ریونیو نے کہا ہے کہ ریکارڈ درست کیا جائے۔انہوں نے کہا کسی جگہ کنٹینر نہیں لگائے گئے۔ نیلی بتی کہیں بھی دیکھ کر چور ڈر جاتا ہے۔ کنٹینرز کو دیکھ کر بھی یہی کچھ ہوا۔ مسماری کنٹینر سے نہیں بلڈوزر وغیرہ سے کی جاتی ہے۔

مکی آرتھر بھی بابر اعظم کی تعریف کیے بنا نہ رہ سکے

کراچی:جدت ویب دیسک: دورہ جنوبی افریقہ میں شاندار کارکردگی پر قومی ٹیم کے سابق کوچ مکی آرتھر بھی بابر اعظم کی تعریف کیے بنا نہ رہ سکے۔
قومی ٹیم کے سابق کوچ مکی آرتھر نے کہا کہ بابر اعظم بہترین کھلاڑی ہے، بابر نے سخت محنت کی جس کا صلہ اسے مل رہا ہے۔مکی آرتھر نے کہا کہ بابر اعظم اپنے کھیل سے مخلص کھلاڑی ہے، پاکستان ٹیم میں بابر اعظم ایک خاص ٹیلنٹ ہے اور وہ جو اعزاز حاصل کررہا ہے اس کا مستحق ہے کیونکہ وہ اپنے کھیل میں سخت محنت کرتا ہے۔واضح رہے کہ گزشتہ روز بابر اعظم نے جنوبی افریقہ کے خلاف تیسرے ٹی ٹوینٹی میچ میں 59 گیندوں پر شاندار 122 رنز کی اننگز کھیلی تھی اور ٹیم کی جیت میں اہم کردار ادا کیا تھا۔یاد رہے کہ مکی آرتھر کو بابر کے کامیاب کیریئر کے پیچھے اہم افراد میں سے ایک سمجھا جاتا ہے، انہوں نے قومی ٹیم کی کوچنگ اور پی ایس ایل میں کراچی کنگز کنگز کی کوچنگ کے فرائض انجام دیے۔ابابر اعظم آئی سی سی ون ڈے رینکنگ میں بھی ویرات کوہلی کو پیچھے چھوڑتے ہوئے پہلے نمبر پر آگئے ہیں، گزشتہ پانچ سالوں سے ویرات کوہلی نے پہلی پوزیشن پر قبضہ جما رکھا تھا۔

وزیراعظم عمران خان کا کابینہ میں تبدیلی کا فیصلہ

//

اسلام آباد:جدت ویب ڈیسک: وزیراعظم عمران خان نے بڑے پیمانے پر کابینہ میں ردوبدل کردی۔
عمر ایوب خان سے وزارت توانائی کی ذمہ داریاں لے کر یہ وزارت حماد اظہر کو دینے کا فیصلہ کیا گیا ہے، جب کہ عمرایوب کو وزیراقتصادی امور مقرر کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے، وفاقی وزیر خسرو بختیار کو وزیرصنعت و پیداوار بنایا جائے گا۔ذرائع کے مطابق وزیراعظم عمران خان نے کابینہ میں ردوبدل کا فیصلہ کیا ہے، اور وفاقی حماد اظہر سے وزارت خزانہ اور عمرایوب سے وزارت توانائی کا چارج واپس لے لیا گیا ہے، جب کہ شوکت ترین کو وزیرخزانہ بنانے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔واضح رہے کہ گزشتہ روز وفاقی وزیر فواد چوہدری کو وزارت اطلاعات کی ذمہ داری دی گئی تھی، جب کہ شبلی فراز سے وزارت اطلاعات لے کر سائنس اینڈ ٹیکنالوجی کی وزارت دینے کا فیصلہ کیا گیا تھا۔

کرکٹ کا سونامی؛ خطرے کی گھنٹی بجا دی

دبئی:جدت ویب ڈیسک: کرکٹ کے سونامی نے آئی سی سی کیلیے خطرے کی گھنٹی بجا دی جب کہ 8 برس کے اگلے دورانیے میں انٹرنیشنل میچز، نئے ایونٹ اور ڈومیسٹک لیگز کو جگہ دینا چیلنج بن چکا۔
اگر 2027 کے ورلڈ کپ میں ٹیموں کی تعداد بڑھائی جاتی ہے تو ہے پھر سپر لیگ کا مقصد ہی ختم ہوجائے گا،اگر سپر لیگ میں بھی ٹیموں کی تعداد میں اضافہ ہوا تو پھر یہ کیلینڈر کا کافی ہڑپ کرجائے گی، یہی معاملہ ٹیسٹ چیمپئن شپ کا ہے جس میں زمبابوے، افغانستان اور آئرلینڈ بھی شامل ہونا چاہتے ہیں۔دوسری جانب ہر ملک اپنی ڈومیسٹک لیگ کیلیے کیلنڈر میں جگہ چاہتا ہے، اس حوالے سے پاکستان اور جنوبی افریقہ کی لیگز کو پہلے ہی مشکلات کا سامنا ہے، یہ ایسے موقع پر کھیلی جاتی ہیں جب تمام ٹاپ 6 ٹیمں ایک ساتھ فارغ نہیں ہوتیں، یہ صورتحال آئی سی سی کیلیے کسی دردسر سے کم نہیں اور وہ اسے سلجھانے کی خواہاں ہے۔انٹرنیشنل کرکٹ کونسل کی چیف ایگزیکٹیوز کمیٹی نے 33-2023 کے اگلے 8 سالہ دورانیہ کے خدوخال کا جائزہ لینا شروع کردیا،کرک انفو کے مطابق اب تک کمیٹی اس حوالے سے مختلف بورڈز کی رائے حاصل کررہی ہے۔کمیٹی کے سامنے 2 بڑے سوال ہیں، ایک یہ کہ آئی سی سی ایونٹس اور ڈومیسٹک لیگز کی وجہ سے کیلنڈر میں باہمی سیریز کیلیے کتنی جگہ بچے گی، دوسرا سوال یہ ہے کہ ورلڈ کپ سپر لیگ اور ٹیسٹ چیمپئن شپ کیسی ہونا چاہیے۔آئی سی سی اگلے دورانیے میں ایک اور انٹرنیشنل ایونٹ کیلنڈر میں شامل کرنا چاہتی ہے جو ون ڈے یا ٹی 20 ٹورنامنٹ ہوسکتا ہے، بھارتی کرکٹ بورڈ اس کا سب سے بڑا مخالف ہے،اس معاملے میں آسٹریلیا اور انگلینڈ بھی اس کے ہمنوا ہیں۔اس وقت ون ڈے کرکٹ کا مستقبل بھی زیر غور ہے کیونکہ ٹی 20 اور ٹیسٹ کرکٹ مستحکم نظر آتے ہیں مگر باہمی ون ڈے سیریز میں زیادہ دلچسپی ظاہر نہیں کی جا رہی، ایک فرمائش ون ڈے ورلڈ کپ میں ٹیموں کی تعداد بڑھانے کی ہے،سپر لیگ کی ٹاپ 8 ٹیمیں 2023 کے میگا ایونٹ میں براہ راست انٹری پائیں گی، باقی 2 جگہوں کیلیے کوالیفائنگ ایونٹ ہوگا، سپر لیگ میں ابھی 13 ٹیمیں شامل ہیں۔

 

1 2 3 5