Daily archive

April 01, 2021

In picture : Hira Mani Criticized For Wearing Saree With A T-Shirt

Web Desk ::Recently, Pakistani actress Hira Mani did a fusion of eastern and western clothing by wearing a saree with a t-shirt. She took to her Instagram account and shared almost 10 photos wearing the out-of-the-world saree.actress paired her fusion saree with yellow khussa, golden bangles, and a black crossbody bag.

Take a look at the photos

!

لاہور میں ملک کی پہلی وٹامن ڈی اکیڈمی کا افتتاح ,گورنر پنجاب چوہدری محمد سرور نے اس اکیڈمی کے سرپرست اعلیٰ کا عہدہ قبول کر لیا

/

ویب ڈیسک ::گورنر پنجاب محمدسرور نے لاہور میں ملک کی پہلی وٹامن ڈی اکیڈمی کا افتتاح کردیا جو یونیورسٹی آف ہیلتھ سائنسز لاہور کے وائس چانسلر ڈاکٹر جاوید اکرم کی سربراہی میں کام کرے گی۔

گورنر ہاؤس لاہور میں وٹامن ڈی اکیڈمی کی افتتاحی تقریب میں خطاب کرتے ہوئے گورنر محمد سرور نے کہا کہ پاکستان کو صحت کے شعبے میں بے شمار مسائل کا سامنا ہے جن میں سے ایک اہم مسئلہ وٹامن ڈی کی شدید کمی بھی ہے۔انہوں نے کہا کہ اعداد و شمار کے مطابق پاکستان کی 85 فیصد آبادی اس اہم ترین وٹامن کی کمی کی وجہ سے مختلف بیماریوں کا شکار ہو رہی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ یونیورسٹی آف ہیلتھ سائنسز لاہور کے وائس چانسلر پروفیسر جاوید اکرم کی سربراہی میں قائم ہونے والی اکیڈمی نہ صرف وٹامن ڈی کے حوالے سے قومی سفارشات تیار کرے گی بلکہ پورے ملک میں ڈاکٹروں اور طبی عملے کو اہم اور سپر وٹامن کے حوالے سے تربیت بھی فراہم کرے گی۔

اس موقع پر یونیورسٹی آف ہیلتھ سائنسز لاہور کے وائس چانسلر پروفیسر جاوید اکرم، پاکستان سوسائٹی آف انٹرنل میڈیسن کی جنرل سیکریٹری ڈاکٹر صومیہ اقتدار اور مقامی فارماسوٹیکل کمپنی کے چیف ایگزیکٹو افسر سید جمشید احمد نے ایک مفاہمتی یادداشت پر دستخط بھی کیے جس کے تحت یونیورسٹی آف ہیلتھ سائنسز لاہور میں پاکستان کی پہلی وٹامن ڈی اکیڈمی قائم کی جائے گی۔گورنر پنجاب کا کہنا تھا کہ پاکستان میں وٹامن ڈی کی کمی کو بڑی حد تک نظر انداز کیا گیا ہے حالانکہ اس کی کمی کی وجہ سے ہمارے بچے نشوو نما کے شدید مسائل کا شکار ہیں جبکہ بڑے اور نوجوان مختلف بیماریوں میں مبتلا ہو رہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ایک ایسے ملک میں جہاں پر 85 فیصد آبادی اس اہم ترین غذائی عنصر کی کمی کا شکار ہو، وہاں ذیابطیس، ہائی بلڈ پریشر اور موٹاپے جیسے بیماریوں کی جتنی اہمیت دینی چاہیے۔ان کا کہنا تھا کہ وہ ملک کے تمام وزرائے اعلیٰ اور گورنروں سے رابطے میں ہیں اور جلد ہی اس اکیڈمی کو دوسرے صوبوں تک توسیع دینے کے لیے کراچی، پشاور اور کوئٹہ کا دورہ بھی کریں گے۔

وٹامن ڈی اکیڈمی کی اہمیت پر زور دیتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ سیاست سے بالاتر ہو کر سوچنے کا وقت آگیا ہے کیونکہ پوری قوم اس وقت کورونا کی وبا سے لڑ رہی ہے۔انہوں نے عوام سے اپیل کی کہ وہ ایس او پیسز کا خیال رکھیں کیوں کہ ہسپتالوں میں بستروں کی گنجائش ختم ہوتی جارہی ہے اور اس وقت آکسیجن اور ادویات کی کمی کا بھی سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔اس موقع پر یونیورسٹی آف ہیلتھ سائنسز لاہور کے وائس چانسلر پروفیسر جاوید اکرم کا کہنا تھا کہ کورونا کی وبا کے باعث ہمیں یہ جاننے کا موقع ملا ہے کہ پاکستان کی کتنی بڑی آبادی اس وقت وٹامن ڈی کی کمی کا شکار ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ ان کی یونیورسٹی میں کی جانے والی تحقیق کے مطابق وٹامن ڈی کی کمی کا شکار لوگ کورونا وائرس سے بہت جلد متاثر ہوتے ہیں، جب کہ ایسے لوگ جن میں اس وٹامن کی کمی ہو تو ان میں کورونا وائرس کے نتیجے میں ہونے والی پیچیدگیوں سے انتقال کرجانے کے امکانات 3 گنا بڑھ جاتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ہو سکتا ہے کہ آنے والے دنوں میں کورونا ویکسین کے پاکستان میں ہونے والے تجربات میں وٹامن ڈی کے کردار کو بھی جانچا جائے اور اُمید ظاہر کی کہ نئی قائم ہونے والی وٹامن ڈی اکیڈمی تحقیق اور سفارشات کی مدد سے عوام کو بیماریوں سے تحفظ میں مدد فراہم کرے گی۔مقامی فارماسوٹیکل کمپنی فارم ایوو کے مینجنگ ڈائریکٹر ہارون قاسم کا کہنا تھا کہ اس وقت دنیا کی ایک ارب آبادی وٹامن ڈی کی کمی کا شکار ہے لیکن بدقسمتی سے پاکستان میں تقریباً 85 فیصد سے زائد افراد اس غذائی عنصر کی کمی کا سامنا کر رہے ہیں۔فارم ایوو کے چیف ایگزیکٹو آفیسر سید جمشید احمد کا کہنا تھا کہ وٹامن ڈی اکیڈمی کے قیام کے بعد وہ ذیابطیس، بلڈ پریشر اور ہیپاٹائٹس کی اکیڈمیاں بنانے کا منصوبہ بھی رکھتے ہیں تاکہ مقامی طور پر تحقیق کرکے ان بیماریوں کو اس ملک سے ختم کیا جا سکے۔

ڈاکٹر جاوید اکرم نے کہا کہ گورنر پنجاب چوہدری محمد سرور نے اس اکیڈمی کے سرپرست اعلیٰ کا عہدہ قبول کر لیا ہے اور وہ چاہتے ہیں کہ نہ صرف پنجاب بلکہ پورا ملک وٹامن ڈی اور دیگر غذائی عناصر کی کمی پر قابو پاکر ایک صحت مند قوم بن سکے۔

— فوٹو: ڈان نیوز

مارگلہ کے دامن میں رپورٹ لکھتے وقت گیدڑوں کی موجودگی بھی ہوتی تھی۔ گیدڑ بھبھبکیاں مجھے کام کرنے سے نہیں روک سکتیں۔جسٹس ریٹائرڈ عظمت سعید

//

اسلام آباد: ویب ڈیسک :: براڈ شیٹ کمیشن رپورٹ نے بیوروکریسی کے عدم تعاون کی قلعی کھولتے ہوئے کہا ہے کہ افسران نے ریکارڈ چھپانے اور گم کرنے کی ہر ممکن کوشش کی۔

براڈ شیٹ سکینڈل انکوائری کمیشن کی سفارشات میں کہا گیا ہے کہ بین الاقوامی کمپنیوں کی خدمات کیلئے ضروری بنیادی چیزیں یقینی بنائی جانی چاہیں۔ کسی بھی غیر ملکی کمپنی کی خدمات لینے سے پہلے اس کی تصدیق کرائی جائے۔کمیشن کی جانب سے سفارش کی گئی ہے کہ وزارت خارجہ متعلقہ ملک کی وزارت خارجہ سے کمپنی کی تصدیق کرائے۔ کمپنی کی رجسٹریشن، مالیاتی حیثیت اور مقدمے بازی کا معلوم کرایا جائے۔ اس کے علاوہ غیر ملکی کمپنیوں اور اداروں کی پاکستانی سرکاری اداروں تک کھلی رسائی کی حوصلہ شکنی ہونی چاہیے۔جسٹس ریٹائرڈ عظمت سعید نے براڈ شیٹ کمیشن کی رپورٹ لکھے گئے نوٹ میں کہا ہے کہ مارگلہ کے دامن میں رپورٹ لکھتے وقت گیدڑوں کی موجودگی بھی ہوتی تھی۔ گیدڑ بھبھبکیاں مجھے کام کرنے سے نہیں روک سکتیں۔

Pakistani Fashion Designer HSY Meets COAS General Qamar Javed Bajwa

Web Desk ::Pakistani Fashion Designer HSY Meets COAS In the photo he shared, HSY can be seen with General Qamar Javed Bajwa.

Hassan Sheheryar Yasin described the meeting with General Qamar Javed Bajwa as an honor for him and also wrote a beautiful emotional message for the Pakistani forces in the caption of the photo.

Hassan Sheheryar wrote, “It was a huge honor to get to meet Chief of the Army General Bajwa. My mammoos and chachas have all served with honor and dignity in the Pakistan Army, the Air force and the Pakistan Navy. I have seen first hand their dedication and commitment and their willing to put their lives in danger to protect and safeguard our Country.”

HSY added, “I have always held the armed forces in the highest regard and was humbled to have met Gen Bajwa at the Pride of Pakistan Pavilion.”

The designer further said that his meeting with General Qamar Javed Bajwa was a beautiful meeting and that it is a great honor for him to meet the COAS at the Pride of Pakistan Pavilion.

CNS Satisfied Over Operational Readiness Of Pakistan Navy

Web Desk :: Chief of the Naval Staff (CNS) Admiral Muhammad Amjad Khan Niazi on Thursday expressed complete satisfaction over the operational readiness of the Pakistan Navy.

According to the details, Pakistan Navy Command and Staff Conference was held at Naval Headquarters in Islamabad. Chief of Naval Staff Admiral Muhammad Amjad Khan Niazi presided over the conference.Spokesperson of the Pakistan Navy said that the conference reviewed the security situation in the region, operational readiness of the Pakistan Navy and training and welfare of its personnel.On the occasion, the Naval Chief was given a detailed briefing on the ongoing and future plans of the Pakistan Navy.

During the conference, the Naval Chief also directed for full implementation of government policies to curb the spread of Coronavirus pandemic in the country.The conference reiterated that the Pakistan Navy is always ready to respond to any kind of aggression.

وفاقی کابینہ نے بھارت سے چینی اور کپاس درآمد کرنے کی تجویز مسترد کردی۔

//

اسلام آباد: : وفاقی کابینہ نے بھارت سے چینی اور کپاس درآمد کرنے کی تجویز مسترد کردی۔ ای سی سی نے بھارت سے چینی اور کپاس منگوانے کی تجویز پیش کی تھی۔

Hyundai Nishat Reduces Santa Fe’s Price by Rs. 5 Million

Web Desk ::Hyundai Nishat has reduced the price of Santa Fe by Rs. 5 million, bringing it down to Rs. 13.5 million. Santa Fe is not popular in Pakistan because it is being offered in its 4th generation form as a CBU for a whopping Rs. 18.5 million, while the Fortuner can be purchased for just over Rs. 9.3 million and the Sorento can be had for a million less.

Although the midsize SUV segment of Pakistan’s auto market has long been ruled by the Toyota Fortuner, the Kia Sorento has recently come along to battle Toyota for a larger share of the market. However, another midsize SUV in the market that does not get a lot of attention is the Hyundai Santa Fe.