PPP

ہولی پر مستحق لوگوں کو حکومت کی جانب سے امدادی رقوم فراہم کی گئیں ،کھٹومل جیون

کراچی جدت ویب ڈیسک وزیر اعلیٰ سندھ کے معاونین خصوصی برائے اقلیتی امور ڈاکٹر کھٹو مل جیون نے مسلم لیگ (فنکشنل) کے رکن اسمبلی نندکمار گوکھلانی کے اس الزام کو سراسر بے بنیاد قرار دیا ہے کہ اس بار ہندوؤں کے مذہبی تہوار ہولی کے موقع پر مستحق لوگوں کو حکومت سندھ کی جانب سے امدادی رقوم کے چیک سے محروم رکھا گیا ۔ وہ پیر کو سندھ اسمبلی کے اجلاس میں نندکمار کے ایک توجہ دلاؤ نوٹس کا جواب دے رہے تھے ، جس میں اپوزیشن رکن نے یہ شکایت کی تھی کہ حکومت سندھ کی جانب سے اس بار ہندو برادری کے مستحق افراد کو امدادی رقوم کے چیک سے محروم رکھا گیا ۔ انہوں نے کہا کہ ایسا محسوس ہوتا ہے کہ مستحق لوگوں کے یہ پیسے بھی کرپشن کی نظر ہو جائیں گے اور اگر ایسا ہے تو یہ قیامت کی نشانی ہو گی ۔ ڈاکٹر کھٹو مل نے کہا کہ نہ صرف ہندو برادری کے غریب افراد کو چیک دیئے گئے ہیں بلکہ کمیٹی میں متعلقہ افراد کو بھی شامل کیا گیا ہے ۔ فاضل رکن اس حوالے سے غلط بیانی کر رہے ہیں ۔ رکن اسمبلی امیر حیدر شاہ شیرازی نے اپنے توجہ دلاؤ نوٹس میں کہا کہ ٹھٹھہ اور جام شورو کے کوہستانی علاقوں میں قحط کی صورت حال ہے ۔ لوگ پینے کے پانی کو ترس رہے ہیں ۔ زمینیں بنجر ہو رہی ہیں ۔ حکومت متاثرہ علاقوں کے لیے خصوصی پیکیج کا اعلان کرے ، جس پر صوبائی وزیر بہبود آبادی اور ریلیف ممتاز حسین جاکھرانی نے کہا کہ حکومت اس حوالے سے تمام تر صورت حال سے باخبر ہے اور تمام ضروری انتظامات کیے جا رہے ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ ہر سال صورت حال دیکھ کر متعلقہ ڈپٹی کمشنر کسی بھی علاقے کو قحط زدہ قرار دیتے ہیں ۔ تاہم انہوں نے حکومت سندھ کی جانب سے یہ یقین دہانی کرائی کے کوہستان کے لوگوں کو اکیلا نہیں چھوڑا جائے گا ۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.