MQM

گلی محلوں کی لڑائی ایوان میں نہ لائی جائے،سیدہ شہلا رضا

کراچی جدت ویب ڈیسک سندھ اسمبلی میں منگل کو متحدہ قومی موومنٹ ( ایم کیو ایم ) پاکستان کی خاتون رکن شازیہ فاروق کی صحت یابی کے لیے دعا کی گئی ، جن کے بارے میں یہ افواہیں چلی تھیں کہ انہوں نے مبینہ خود کشی کی کوشش کی ہے ۔ اسمبلی میں ایم کیو ایم کے دو ارکان محفوظ یار خان اور ندیم رضی آپس میں الجھ پڑے ۔ قائم مقام اسپیکر سیدہ شہلا رضا نے ان سے کہا کہ گلی محلوں کی لڑائی ایوان میں نہ لائی جائے ۔ وقفہ سوالا ت کے دوران پبلک ہیلتھ انجینئرنگ کے وزیر فیاض بٹ اور پاکستان تحریک انصاف کے رکن خرم شیر زمان کے مابین بھی تلخ جملوں کا تبادلہ ہوا ۔ سندھ اسمبلی کا اجلاس منگل کو پونے 2 گھنٹے تاخیر سے شروع ہوا ۔ فاتحہ خوانی اور دعا کے وقفہ کے دوران ایم کیو ایم کی خاتون رکن شازیہ فاروق کی صحت یابی کے لیے دعا کی گئی جبکہ پیپلز پارٹی کے رہنما عبداللہ مراد شہید کے ایصال ثواب کے لیے فاتحہ خوانی بھی کی گئی ۔ اجلاس میں ملکی سلامتی اور پانی کی کمی کے خاتمے کی بھی دعا کی گئی ۔ دعا کے وقفہ کے دوران ایم کیو ایم کے محفوظ یار خان نے کہا کہ اللہ تعالی سے یہ بھی دعا کی جائے کہ وہ ضمیر فروشوں کو ہدایت دے ۔ اس پر ایم کیوا یم سے منحرف ہو کر پاک سرزمین پارٹی میں شامل ہونے والے رکن ندیم رضی نے بولنے کی کوشش کی تو محفوظ یار خان اور ندیم رضی الجھ پڑے ۔ قائم مقام اسپیکر نے ان سے کہا کہ گلی محلوں کی لڑائی ایوان میں نہیں آنی چاہئے ۔ فاتحہ خوانی کے دوران پوائنٹ اسکورنگ نہ کی جائے ۔ اجلاس میں پیپلز پارٹی کی کئی خواتین ارکان نے شازیہ فاروق کی صحت یابی کے لیے دعا کی درخواست کی اور کہا کہ پتہ چلنا چاہئے کہ شازیہ فاروق کس وجہ سے ذہنی دباؤ کا شکار ہوئیں ۔ ایم کیوایم سے منحرف ہونے والے اور پاک سرزمین پارٹی میں شامل ہونے والے ایک اور رکن محمد دلاور نے کہا کہ شازیہ فاروق پر دباؤ ان کی پارٹی کا تھا ۔ دعا کے وقفہ کے بعد محکمہ پبلک ہیلتھ انجینئرنگ سے متعلق وقفہ سوالات شروع ہوا ۔ صوبائی وزیر فیاض بٹ نے بتایا کہ 2010 ء میں واٹر سپلائی اور ڈرینیج کی اسکیموں پر ایک ارب 60 کروڑ روپے خرچ ہوئے ۔ پاکستان تحریک انصاف کے رکن خرم شیر زمان نے کہا کہ اربوں روپے خرچ کیے گئے ہیں ، اس کے باوجود سندھ میں صاف پانی نہیں مل رہا ہے ۔ واٹر کمیشن کی رپورٹ ہے کہ سندھ کے 70 فیصد لوگوں کو آلودہ اور گندہ پانی ملتا ہے ۔ لوگ زہریلا پانی پی رہے ہیں ۔ اس پر صوبائی وزیر فیاض بٹ نے کہا کہ خرم شیر زمان ایسے بول رہے ہیں ، جیسے انہیں سندھ کے لوگوں سے محبت ہے ۔ خرم شیر زمان نے کہاکہ جب نااہل لوگوں کو وزارت دی جاتی ہے تو ایسا ہی ہوتا ہے ۔ فیاض بٹ نے کہا کہ ہمیں ان کی صلاحیتوں کا پتہ ہے اور یہ کس طرح کے کام کرتے ہیں ۔ خرم شیر زمان نے کہا کہ پانی کی ایک اسکیم پر 19 ملین روپے خرچ ہوئے ہیں لیکن وہ اسکیم غیر فعال ہے ۔ اس تکرار میں دونوں کے درمیان تلخ کلامی بھی ہوئی ۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.