Jan Muhammad Baloch

ڈی ایم سی ملیر کرپشن کا گڑھ‘عملی کارکردگی صفر‘جان محمدبلوچ مکمل طور پر ناکام

کراچی جدت ویب ڈیسک ضلع ملیر جو شہر کا سب سے سرسبز علاقہ ہوا کرتا تھا اب ضلعی حکومت کی نااہلی و کرپشن کے باعث تیزی سے کچرا کنڈی میں تبدیل ہوتا جا رہا ہے۔ ہر طرف گندگی کے ڈھیر نے ہزاروں افراد کو ڈینگی ،چکن گونیا ،نمونیہ سمیت دیگر وائرل بیماریوں میں مبتلا کردیا ہے ،ٹوٹی سڑکیں و ابلتے گٹر ملیر کی شناخت بن چکے ہیں ، جگہ جگہ سیوریج کا پانی اور گندگی کے ڈھیر لگے ہوئے ہیں جبکہ ضلعی حکومت کے راشی افسران کی موجیںجاری ہیں اور شہریوں سے ہر بہانے رقوم کی وصولی کی جارہی ہے، تجاوزات کی بھرمار کے باعث سڑکیں مسلسل ٹریفک جام کا شکار ہیں،پارکنگ و دیگر ٹھیکوں میں اقربا پروری و کرپشن کے ریکارڈ قائم کئے جا رہے ہیں جبکہ چیئرمین ڈی ایم سی جان محمد بلوچ صورتحال کنٹرول کرنے میں بری طرح ناکام ثابت ہورہے ہیں، عوام نے ضلعی انتظامیہ کے خلاف احتجاج کرتے ہوئے وزیر اعلی سے فوری نوٹس کا مطالبہ کیا ہے۔دوسری طرف کونسل ممبران سب اچھا ہے کی رپورٹ دے رہے ہیں۔ ماہرین صحت نے ضلع میں گندگی کے باعث بڑے پیمانے پر وبائی امراض پھوٹ پڑنے کا خدشہ ظاہرکرتے ہوئےخبر دار کیا ہے کہ صفائی ستھرائی کی ابتر صورتحال یہی رہی تو وبائی امراض پر قابو پانا مشکل ہوجائے گا، اس لیے احتیاط اور صفائی ضروری ہے۔ضلعی حکومت کے دفاتر و ادارے جو عوام کے لئے سہولت کا سبب ہونے چاہیے تھے ، راشی افسران کے باعث ان کے لئے عذاب بن گئے ہیں اور چھوٹے سے چھوٹا جائز کام بھی بنا رشوت کے ہونا ناممکن بن گیا ہے۔ رشوت کے عوض تجاوزات کی اجازت دی جارہی ہے جس سےگاڑیاں تو درکنار لوگوں کی آمدورفت بھی مشکل ہوگئی ہے۔ ملیر ندی سے دن رات ریتی بجری نکالی جا رہی ہے جس سے زیر زمین پانی کی سطح دن بہ دن نیچے جارہی ہے اور زراعت کو بھی شدید نقصان ہورہا ہے مگر ضلعی حکومت کے راشی افسران ہزاروں روپے کے عوض کارروائی جاری رکھے ہوئے ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.