محبت اور انقلاب کا حسین امتزاج،فیض احمد فیض

کراچی جدت ویب ڈیسک بیسویں صدی کے ترقی پسند شاعر فیض احمد فیض کو بچھڑے 33 برس گزر گئے، لیکن ان کی شاعری کا حسن آج بھی برقرار اور لوگوں کے دل و دماغ میں زندہ ہے۔
فیض احمد فیض وہ عہد ساز شاعر تھے، جنہیں زندگی ہی میں بے پناہ شہرت، عزت اور محبت ملی۔فیض انگریزی، اردو اور پنجابی کے ساتھ فارسی اور عربی زبان پر بھی عبور رکھتے تھے، ان کی شعری تصانیف میں غمِ جاناں اور غم دوراں ایک ہی پیکر میں یکجا ہیں ۔۔۔۔مجھ سے پہلی سی محبت۔۔۔۔،گُلوں میں رنگ بھرے۔۔۔، ‘بہار آ ئی اور ‘بول کے لب آزاد ہیں تیرے۔۔۔، فیض کے وہ گیت ہیں، جو امر ہوچکے ہیں
فیض کی شاعری میٹھے پانی کا ایسا چشمہ ہے، جس کی مٹھاس روح تک اتر جاتی ہے۔فیض کی شاعری میں امن، محبت، ہجر اور وفا سمیت معاشرتی نشیب و فراز اور مظالم کے خلاف انقلاب کا رنگ بھی نمایاں نظر آتا ہے۔فیض ایک طرف انقلاب تو دوسری طرف محبت کے گیت الاپتے نظر آئے۔ان کا مخصوص لہجہ اور اسلوب ہی وہ جادو ہے جو آج تک مداحوں کو اپنا اسیر کیے ہوئے ہے۔فیض کو سوشلزم سے وابستگی اور آزادانہ اظہارِ خیال کی کڑی سزا بھگتنی پڑی، انہوں نے زندگی کے بہترین ماہ و سال قیدو بند میں گزارے، لیکن ان کی سوچ پر پہرے نہ لگ پائے۔

 

Leave a Reply

Your email address will not be published.