Sharjeel Memon PPP

شریف خاندان اورہمارے لیے الگ قانون ہے‘،شرجیل میمن

کراچی جدت ویب ڈیسک قومی احتساب بیورو â نیب á کے ہاتھوں گرفتار ہونے والے پیپلز پارٹی کے رکن سندھ اسمبلی شرجیل انعام میمن نے کہا ہے کہ کہ شریف خاندان کے لیے الگ اور ہمارے لیے الگ قانون ہے۔ نواز شریف اور اسحاق ڈار کے نام ای سی ایل میں نہیں ڈالے جاتے اور انہیں گرفتار نہیں کیا جاتا جبکہ مجھے عدالت کے احاطے میں بغیر وارنٹ کے گرفتا رکیا جاتا ہے ۔ یہ اداروں کی دوغلی پالیسی ہے تاہم ہم اپنے اوپر لگے ایک ایک الزام کا جواب دیں گے۔وہ بدھ کو سندھ اسمبلی میں پیپلز پارٹی کے رکن خورشید جونیجو کی طرف سے نیب کے رویہ کے خلاف مذمتی قرار داد پر اظہار خیال کر رہے تھے ۔ شرجیل انعام میمن نے کہا کہ ان کے ساتھ دو مرتبہ نیب نے زیادتی کی ۔ ایک مرتبہ جب وہ پاکستان واپس آئے تو اسلام آباد ایئرپورٹ کے ایپرن پر جا کر مجھے گرفتار کیا گیا جبکہ کیپٹن صفدر کی گرفتاری کے وقت نیب کے انہیں اہلکاروں کو اسلام آباد ایئرپورٹ میں داخل ہی نہیں ہونے دیا گیا ۔ انہوں نے یاد لایا کہ کچھ عرصہ قبل سندھ ہائیکورٹ کے احاطے سے باہر سے ذوالفقار مرزا کے کچھ گارڈ ز کو پولیس نے حراست میں لیا تھا ، جس پر فاضل عدالت عالیہ حرکت میں آئی ۔ اس نے سوموٹو نوٹس لیا اور کئی سینئر پولیس افسران کو معطل کر دیا گیا لیکن انہیں احاطہ عدالت سے گرفتار کیا گیا ، اس کے باوجود نیب سے کسی نے کوئی جواب طلب نہیں کیا ۔ انہوں نے کہا کہ نیب نے اپنے ریکارڈ میں میری گرفتاری شاہراہ عراق اور مسجد خضریٰ سے ظاہر کی ہے جبکہ تمام میڈیا گواہ ہے کہ مجھے عدالت کی سیڑھیوں سے گرفتارکیا گیا ۔ شرجیل انعام میمن نے کہا کہ ان کے ساتھ 11 دیگر افراد کو بھی بغیر وارنٹ گرفتار کر لیا گیا ہے اور ہمارے ساتھ امتیازی سلوک روا رکھا جا رہا ہے ۔ انہوں نے کہاکہ اسی امتیازی سلوک کے خلاف سندھ اسمبلی نے احتساب کا وفاقی قانون منسوخ کرکے اپنا قانون وضع کیا تھا ۔ اس عمل میں وہ بھی شریک تھے لیکن اس کے باوجود انہوں نے وزیر اعلیٰ سندھ کو خط لکھا اور یہ درخواست کی کہ ان کے خلاف کیس اینٹی کرپشن کو منتقل نہ کیے جائیں اور نیب کے پاس ہی رہنے دیئے جائیں تاکہ کوئی یہ انگلی نہ اٹھا سکے کہ شرجیل میمن نے نئے قانون سے فائدہ اٹھایا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ نیب کے نئے چیئرمین سے میرے یہ سوالات ہیں کہ نیب کا یہ دہرا معیار کیوں ہے ۔ ایک صوبے کے لےے الگ اور دوسرے صوبے کے لےے الگ قانون کیوں ہے ؟ کتنے لوگوں کے خلاف ریفرنسز چل رہے ہیں ۔ کیا سب کا نام ای سی ایل میں ہے ؟انہوں نے کہا کہ میرے خلاف نیب ریفرنس غلط ہے ۔سندھ حکومت کے اشتہارات کے ریٹ وفاقی حکومت سے کم ہیں ۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.