Syed Ali Gilani Kashmir

سید علی گیلانی کاکنٹرول لائن کے آر پار انسانی جانوں کے زےاںپر اظہارتشویش

سرےنگر جدت ویب ڈیسک :مقبوضہ کشمےر مےں کل جماعتی حرےت کانفرنس کے چےئرمےن سےدعلی گےلانی نے کنٹرول لائن کے آر پار انسانی جانوں کے زےاں پر گہری تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ تنازعہ کشمیر دو ایٹمی طاقتوں کے درمیان کوئی سرحدی تنازعہ نہیں بلکہ یہ ایک انسانی مسئلہ ہے جس کو تاریخی حقائق کو مد نظررکھتے ہوئے پُرامن مذاکرات کے ذرےعے حل کیا جاسکتا ہے۔ کشمےرمےڈےا سروس کے مطابق سےد علی گےلانی نے سرےنگر مےں جاری اےک بےان مےں کہاکہ جنوبی اےشےا کی ڈیڑھ ارب سے زائد انسانی آبادی کو ایٹمی جنگ کی ہولناک تباہیوں سے نجات دلانے کے لیے مسئلہ کشمیر کو حل کرنا ناگزیرہے۔ انہوں نے افسوس کا اظہارکےا کہ بھارت اقوامِ متحدہ کی منظورکردہ قراردادوں سے مکرگےا ہے اور اپنے غریب عوام کی پیٹ پر لات مارکر ہتھیاروں کی دوڑ میں لگا ہواہے۔ حریت چےئرمےن نے کہا کہ مسئلہ کشمیر کے حوالے سے جُوں کی توں صورتحال سے بھارت کو جموں وکشمیرمےں اپنی جنگی مشقوں کے لیے ایک وسیع میدانِ جنگ میسر ہوچکا ہے اور بھارت کی دلچسپی اسی میں ہے کہ یہ مسئلہ اِسی طرح مدّت دراز تک لٹکتا رہے۔ انہوںنے بلالحاظ رنگ وملّت قیمتی انسانی جانوں کے اتلاف کو جنگی جنون کے شوروغل میں تحلیل کرنے پر تعجب اور حیرت کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اقوامِ متحدہ جیسے معتبر ادارے کو جنگ بندی لائن پر جاری قتل وغارت کا سنجیدہ نوٹس لےنا چاہےے اور دو ایٹمی طاقتوں کے درمیان محاذ آرائی کو خاموش تماشائی کی طرح نہےں دےکھنا چاہےے بلکہ محاذ آرائی کے بنیادی سبب ےعنی مسئلہ کشمیر کو یہاں کے عوام کی اُمنگوں کے مطابق حل کرانے کی پہل کرنی چاہیے تاکہ خطے کے کروڑوں عوام کو امن وسکون کے ساتھ زندگی گزارنے کا موقع میسر ہوسکے۔ درےں اثنائ سےد علی گےلانی نے حریت کانفرنس کے جنرل سیکریٹری حاجی غلام نبی سمجھی کو گھر مےں نظربند کرنے کو انسانی اور جمہوری حقوق کی سنگےن خلاف ورزی قراردےتے ہوئے اس کی شدےد مذمت کی ہے۔انہوںنے پُرامن سیاسی سرگرمیوں پر عائد پابندیوں پر گہری تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہاکہ بھارت کو برطانوی سامراج کے زےر تسلط اپنے جنگ آزادی کے دوران مےسرسہولیات اور انسانی حقوق کی آزادی کا موازنہ آج کے جمہوری دور میں جموں وکشمیرمےں انسانی حقوق کی پامالیوں سے کرنا چاہیے اور اپنے گرےبان مےں جھانکنا چاہےے۔ حریت چےئرمےن نے انسانی حقوق کی پامالیوں کے حوالے سے بھارتی پولیس کے کردار کو ناقابل قبول قرار دیتے ہوئے اسے آمریت اور سامراجیت قراردےاہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.