Dawood Ibrahim

دؤاد ابراہیم سے تعلق کا الزام، برطانیہ میں گرفتار پاکستانی تاجر کے ریمانڈ میں توسیع

لندن جدت ویب ڈیسک :لندن کی ایک عدالت نے انڈر ورلڈ ڈان داؤد ابراہیم سے تعلق کے الزام میں گرفتار کراچی کے کاروباری شخص جابر صدیق موتی کے ریمانڈ میں چار ہفتے کی توسیع کر دی ہے۔ گزشتہ روز مقدمے کی سماعت کے دوران جابر موتی جیل سے وڈیو لنک کے ذریعے عدالت کے سامنے پیش ہوئے۔عدالت نے اْن کی شناخت سے متعلق چند سوالات کے بعد جج نے انھیں مزید چار ہفتے کے لیے جیل میں رکھنے کا حکم جاری کیا۔جابر موتی کے وکیل ٹوبی کیڈمین نے عدالت کو بتایا کہ وہ اس موقع پر ضمانت کی درخواست نہیں دے رہے لیکن ممکن ہے کہ وہ 25 ستمبر کو ہونے والی اگلی سماعت میں اپنے موکل ان کی ضمانت کی نئی درخواست دائر کریں۔جابر موتی کو 17 اگست کو لندن میٹروپولیٹن پولیس کے ایکسٹراڈیشن یونٹ نے پیڈنگٹن میں واقع ایک فائیو سٹار ہوٹل سے گرفتار کیا تھا۔لندن میں ان کی گرفتاری امریکی تحقیقاتی ادارے کی درخواست پر ہوئی تھی اور انھیں گرفتار کر کے ڈسٹرکٹ جج کے سامنے پیش کیا گیا تھا۔21 اگست کو ان کی ضمانت کی درخواست کی سماعت کے دوران کراؤن پراسیکیوشن سروس کی نمائندگی کرتے ہوئے استغاثہ کی وکیل نے عدالت کو بتایا تھا کہ جابر موتی داؤد ابراہیم کی سربراہی میں کام کرنے والے کرائم سنڈیکیٹ ڈی کمپنی کے سینئیر رکن ہیں، جو دہشت گردی، منشیات کی سمگلنگ، منی لانڈرنگ اور بھتہ خوری جیسے جرائم میں ملوث ہے۔انھوں نے عدالت کو بتایا کہ ایف بی آئی سنہ 2012 سے ڈی کمپنی کے بارے میں معلومات اکٹھی کر رہی ہے۔عدالت کو بتایا گیا کہ ڈی کمپنی کی قیادت پاکستان میں موجود ہے اور اس کے سمگلنگ روٹ جنوبی ایشیا، مشرقِ وسطیٰ اور افریقہ تک پھیلے ہوئے ہیں۔عدالت کو یہ بھی بتایا گیا کہ جابر موتی کی شمار ڈی کمپنی کے اہم رہنماؤں میں ہوتا ہے جو اس کمپنی کے سربراہ داؤد ابراہیم کو براہراست رپورٹ کرتے ہیں اور بین الاقوامی سطح پر ہونے والی ملاقاتوں میں ان کی نمائندگی کرتے ہیں۔جابر موتی کے وکیل ٹوبی کیڈمین نے عدالت کو بتایا کہ اْن کے موکل کراچی کے ایک کامیاب بزنس مین ہیں اور اچھے کردار کے مالک ہیں۔ وکیل نے کہا کہ جابر کے پاس برطانیہ کا دس سال کا ویزہ ہے اور ماضی میں امریکہ بھی جا چکے ہیں۔وکیل کیڈمین نے کہا کہ ان کے موکل کسی بھی مالیت کے ضمانتی مچلکے جمع کرانے اور ضمانت کے لیے سخت سے سخت شرائط قبول کرنے کے لیے تیار ہیں۔تاہم ڈسٹرکٹ جج مارگوٹ کولمین نے ان کی ضمانت کی درخواست مسترد کرتے ہوئے خدشہ ظاہر کیا کہ اگر انھیں ضمانت دی گئی تو وہ ملک سے فرار ہو جائیں گے۔کورٹ کے سامنے ناکافی شواہد سے متعلق جابر موتی کی دلیل کا حوالہ دیتے ہوئے جج کولمین نے کہا کہ امریکہ ایک جمہوری ملک ہے اور دونوں ملک باہمی اعتماد کی بنیاد پر امور سرانجام دیتے ہیں۔ جج نے کہا کہ ’اگر انھوں نے کہا کہ ان کے پاس ان الزامات سے متعلق ثبوت ہیں تو میں ان کے اس دعوے کو اسے طرح قبول کرتی ہوں جیسے اسے بیان کیا گیا ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.