حماد صدیقی کی پاکستانی منتقلی‘اگلے ہفتے ممکن۔۔۔مزید جانئے

کراچی جدت ویب ڈیسک کے بلدیہ ٹاؤن کی فیکٹری میں ڈھائی سو لوگوں کو زندہ جلانے کے مرکزی ملزم حماد صدیقی کو پاکستان حوالگی کی قانونی کارروائی مکمل کرلی گئی ہے اور آئندہ ہفتے انہیں پاکستان منتقل کیے جانے کا امکان ہے ۔حماد صدیقی نے بلدیہ ٹاؤن فیکٹری سانحے میں دو ساتھیوں دانش اور نوید کے ملوث ہونے کا انکشاف کیا ہے ۔دونوں ملزمان حماد صدیقی کی گرفتاری کے وقت ساتھ موجود تھے تاہم بعد میں فرار ہوگئے ۔اس سے قبل حماد صدیقی کے بارے میں انکشاف ہوا کہ وہ دبئی میں جنرل ٹریڈنگ کمپنی کا ملازم تھا۔حماد صدیقی پارٹی ڈسپلن کی خلاف ورزی پر رکنیت کی معطلی کے بعد 2013 میں دبئی منتقل ہوا تھا، وہ پاکستان میں متحدہ قومی موومنٹ ایم کیو ایم کی کراچی تنظیمی کمیٹیکے ٹی سی کا انچارج تھا۔ ذرائع سے حاصل ہونے والی معلومات کے مطابق حماد صدیقی کے پاس 2014 سے التکاتف جنرل ٹریڈنگایل ایل سی میں مارکیٹنگ مینیجر کا ویزہ تھا۔ دستاویز کے مطابق حماد صدیقی متحدہ عرب امارات میں مستقل ویزے پر رہائش پذیر تھا جبکہ ویزے پر اس کا نام حماد صدیقی مسیح الحق صدیقی درج ہے ۔ بلدیہ کی ٹیکسٹائل فیکڑی میں ستمبر 2012 آتشزدگی کا واقعہ پیش آیا تھا جس میں 250 سے زائد افراد جاں بحق ہو گئے تھے ۔گذشتہ برس انسداد دہشت گردی کی ایک عدالت نے پاکستانی حکام کو حکم دیا تھا کہ وہ حماد صدیقی کو انٹرپول کے ذریعے گرفتار کریں، جس کے بعد عدالتی احکامات پر عمل کرتے ہوئے وزارت داخلہ نے حماد صدیقی کے ریڈ وارنٹ جاری کردیے تھے ۔دسمبر 2016 میں بلدیہ فیکٹری کیس کے ایک اور ملزم رحمان بھولا کو تھائی لینڈ کے شہر بینکاک میں انٹرپول نے گرفتار کیا تھا۔رحمان بھولا نے اعتراف کیا تھا کہ اس نے ایم کیو ایم لیڈر حماد صدیقی کی ہدایات پر فیکٹری میں آگ لگائی تھی۔ملزم نے مزید انکشاف کیا تھا کہ ایم کیو ایم رہنما نے بھتہ ادا نہ کرنے پر بلدیہ فیکٹری میں آگ لگانے کی ہدایات دی تھیں۔اس نے مزید دعویٰ کیا کہ فیکٹری میں آگ لگانے کا مقصد مالکان کو ڈرانا تھا اور اس کا مقصد ہرگز یہ نہیں تھا کہ اس طرح سیکڑوں جانیں ضائع ہوجائیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.