الیکشن کمیشن کو معلومات ملی تو کارروائی کا فورم بھی وہ ہی ہو گا

جدت ویب ڈیسک :عمران خان نا اہلی اور پی ٹی آئی کی غیر ملکی فنڈنگ کیس کی سماعت سپریم کورٹ میں چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس ثاقب نثار کی سربراہی میں تین رکنی بینچ کر رہا ہے ۔اس دوران چیف جسٹس نےتحریک انصاف کے وکیل انور منصور کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ آ پ نے اپنے جواب میں کہا الیکشن کمیشن کو فارن فنڈنگ کی تحقیقات کا اختیار نہیں اس پر جسٹس ثاقب نثار نے کہا کہ کیا یہ قابل قبول دفاع ہے کہ الیکشن کمیشن اسکروٹنی نہیں کر سکتا ؟۔انہوں نے کہا کہ الیکشن کمیشن کو معلومات ملی تو کارروائی کا فورم بھی وہ ہی ہو گا ،کیوں نہ معاملہ الیکشن کمیشن کو بھیج دیں ۔اس پر انور منصور نے کہا جی ہاں ،میں یہ ہی کہنا چا رہا ہوں کہ چارٹرڈا کاؤنٹنٹ کے بعد الیکشن کمیشن کو آڈٹ کا اختیار نہیں ۔اس پر چیف جسٹس نے استفسار کیا تو کیا آپ یہ کہنا چا ر ہا ہے کہ چارٹرڈ کاونٹنٹ کے بعد الیکشن کمیشن کو آڈٹ کا اختیار نہیں جبکہ آرٹیکل 17تھری کے مطابق ہر سیاسی جماعت فنڈنگ ذرائع سے متعلق جواب دہ ہے ۔انہوں نے سوال کیا کہ کیا تفصیلات دینے کے بعد وصول شدہ فنڈ کی الیکشن کمیشن جانچ پڑتال نہیں کر سکتا ؟۔اس پر انور منصور نے کہا کہ میں اس سے منحرف نہیں ہو ر ہا ،کچھ اور کہنا چاہتا ہوں ،قانون میں ایسی کوئی اجازت نہیں ہے ۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.