PPP

اختیارات کی صوبوں کومنتقلی کیخلاف قوتوں کوکام کرتے دیکھ رہاہوں، رضا ربانی

اسلام آباد جدت ویب ڈیسک چیئرمین سینیٹ رضا ربانی نے کہا ہے کہ پاکستان ایک خود مختار ملک ہے لیکن ہمیں آئی ایم ایف ڈکٹیٹ کر رہا ہے ٗآئی ایم ایف ڈکٹیٹ کرتاہے کہ صوبوں اوروفاق میں وسائل کیسے تقسیم ہوں،ایسے حالات میں کیا 18ویں آئینی ترمیم پرعملدرآمدہوتے دیکھ سکتاہوں؟۔’’فیسکل فیڈرل ازم‘‘کے عنوان سے ہونے والے سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے چیئرمین سینیٹ نے کہا کہ اختیارات کی صوبوں کومنتقلی کیخلاف قوتوں کوکام کرتے دیکھ رہاہوں، شرم آتی ہے کہ کئی بجٹ گزرگئے اوراین ایف سی ایوارڈنہیں آیا۔سینیٹر رضا ربانی نے کہا ہے کہ ورلڈ بینک کی مدد سے وفاق اور صوبوں کے مابین قدرتی وسائل کی تقسیم کے بل کا مسودہ تیار کیا گیا۔ بیوروکریسی کو یہ اختیار کس نے دیا کہ وہ فیصلہ کرے کہ آئندہ بجٹ بھی نئے این ایف سی ایوارڈ کے بغیر آئیگا۔انہوں نے کہا کہ نو آبادیاتی نظام اب ایک نئے نو آبادیاتی نظام میں تبدیل ہو رہا ہے، آئی ایم ایف کہتا ہے صوبوں کو اختیارات کی منتقلی کا نظام کام نہیں کر رہا، ہم ایک خود مختار ملک ہیں اور آئی ایم ایف ہم پر شرائط لگا رہا ہے ٗصوبوں اور وفاق کے مابین قدرتی وسائل کی تقسیم کا معاملہ ایک بین الاقوامی ڈونر ایجنسی چلا رہی ہے۔چیئرمین سینیٹ نے کہا کہ سول اور ملٹری بیوروکرسی سرمایہ دارانہ نظام کی حامی ہیں ٗایسے نظام میں صوبوں کو کیسے اختیارات منتقل کئے جاسکتے ہیں؟رضاربانی نے کہا کہ مضبوط صوبے ہی مضبوط وفاق کی ضمانت ہوں گی۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.