بچوں کو کامیاب بنانے کے دس اصول

January 13, 2021 2:05 pm

لاہور ؛جدت ویب دیسک؛آپ غور کیجیے کہ ایک ایسا انسان جس میں تدریس کی صلاحیت موجود ہے ، جو پیدائشی اُستاد ہے وہ کبھی بھی اپنے کام سے اُکتاتا نہیں ہے ۔ دن ہو یا رات وہ یہ کام بخوشی اور جوش و جذبے کے ساتھ جاری رکھتا ہے ، جس کا مشاہدہ آپ شب و روز کرتے رہتے ہیں۔آپ بھی اپنے آپ میں اور اپنے بچوں میں ایسے کام کی تلاش کریں جسے کرتے وقت آپ اور آپ کے بچے خوب لطف اندوز ہو،خوشی، اطمینان اور سکون حاصل ہوتا ہو، بوریت،اُکتاہٹ اور تھکان بالکل نہ ہوتی ہو۔اس کے لیے اہم بات یہ ہے کہ بچوں پر پڑھائی میں اچھی کارکردگی کے لیے اتنا زور نہیں دینا چاہیے ؛ کیونکہ اس کے دباؤ کی وجہ سے وہ نفسیاتی اور سماجی مسائل کا شکار ہو سکتے ہیں۔اگر آپ چاہتے ہیں کہ آپ کے بچوں کا مستقبل مزید سنور جائے اور کامیاب و کامران ہو کر ہمارے معاشرے کا اچھے انسان بن جائیں تو اس کے لیے ہمیں ذیل میں دس اصولوں کی مستقل پابندی کرنی ہوگی:ہر انسان کے اندر اللہ تعالی نے خوبیاں اور صلاحیتیں رکھی ہیں ۔ ہر ایک کے اندر کوئی نہ کوئی کمال اور خوبی ضرور پنہاں ہوتی ہے اب یہ انسان کی ذمہ داری ہے کہ وہ اس کو تلاش کرے اس کے لئے جدوجہد کرے اور خود پر اعتماد کرے ۔اور یہ بھی ایک حقیقت ہے کہ دنیا میں ہر شخص کی خواہش ہوتی ہے کہ وہ مستقبل میں ایک کامیاب انسان بن جائے ۔ کامیابی و کامرانی اور سرفرازی وسر بلندی اس کا مقدر ہو اور نصیب اچھا بن جائے ۔ عظمت و بلندی اور راحت و سکون اسے میسر ہوجائے وہ سماج اور معاشرہ میں باعزت شہری رہے ،عہدہ و منصب بھی اسے حاصل ہو اور علم و فضل اور فراست و ذہانت اور فہم و ادراک میں بھی لوگ اس کو رشک کی نظر سے دیکھیں اور اسی طرح ہم اپنے بچوں کے لیے بھی یہی سب کچھ چاہتے ہیں کہ وہ ایک عظیم لیڈر بنیں۔ یہ ایک فطرتی بات ہے کہ ان چیزوں کی تمنا اور خواہش تو سبھی کرتے ہیں لیکن یہ مقام و رتبہ اور عزت و وقار انہیں کو ملتا ہے جو تقدیر پر ایمان رکھ کر اس کے لئے تدبیر اور جہد و مشقت کرتا ہے اپنے اندر ہمت عزم اور خود اعتمادی پیدا کرتا ہے ؛ کیونکہ قدرت کا قانون ہے کہ اگر آپ میں کوئی قابلیت ہے ، تو وہ زیادہ دیر پنہاں نہیں رہ سکتی۔ ہمارا ٹیلنٹ بہت جلد ہمارے ارد گرد کے لوگوں کی نظر میں آنے لگتا ہے ، ضروری نہیں کہ یہ عمل شعوری ہو مگر لوگ پھر بھی دوسرے کے ٹیلنٹ سے متاثر ہوئے بغیر نہیں رہ سکتے ۔

متعلقہ خبریں