October 15, 2018

صارفین کے لیے فیس بک بہت جلد میسج ’ان سینڈ‘ کا آپشن پیش کرے گا

کیلیفورنیا: جدت ویب ڈیسک ::فیس بک کی تجربہ گاہوں میں اس وقت فیس بک میسنجر کے لیے ان سینڈ آپشن کی آزمائش شروع کردی گئی ہے جسے جلد ہی فیس بک کا حصہ بنادیا جائے گا۔ ایک اور خبر کے مطابق اسے مارک زکربرگ بھی استعمال کررہے ہیں۔پہلے مرحلے پر اسے میسنجر ایپ کےلیے متعارف کیا جائے گا۔ مارک زکربرگ اس آپشن کو کئی بار استعمال کرکے اپنے پیغامات ڈیلیٹ کرچکے ہیں۔ تاہم اس اہم آپشن کا فیس بک کی جانب سے باضابطہ اعلان نہیں کیا گیا ہے۔ بعض تجزیہ نگاروں نے اس ضمن میں کچھ اسکرین شاٹس ضرور شیئر کیے ہیں۔
ٹیک کرنچ ویب سائٹ نے اس کا تفصیلی جائزہ پہلی مرتبہ پیش کیا ہے۔ ٹیک کرنچ نے یہ بھی لکھا ہے کہ شاید فیس بک اپنی ایپس کےلیے مزید سہولیات کا اعلان کرے گا جنہیں پوری دنیا کے صارفین فوری طور پر استعمال کرسکیں گے۔ایک اور ویب سائٹ اینڈروئیڈ پولیس نے کہا ہے کہ پیغام کو واپس لینے یا مٹانے کا ایک مخصوص وقت ہوگا جیسا کہ عام طور پر ہوتا ہے۔ اس مدت کے بعد میسج جسے بھیجا جائے گا، وہ وہیں موجود رہے گا۔ تاہم یوزر جب میسج پر آئیں گے تو کچھ دیر بعد پاپ اپ ونڈو میں ’کاپی، پیسٹ یا ان سینڈ‘ کے آپشن دکھائی دیں گے جن میں سے ان سینڈ کا آپشن منتخب کیا جاسکے گا۔ اینڈروئیڈ پولیس کے مطابق اسے ایپ کےلیے ہی پیش کیا جائے گا تاہم ویب سائٹ نے کہا ہے کہ یہ کہنا قبل ازوقت ہوگا کہ اسے کس پیمانے پر پیش کیا جائے گا۔

Image result for facebook unsend

Image result for facebook unsend

October 13, 2018

فیس بک پر بڑا سائبر حملہ 3کروڑ صارفین کی معلومات چوری

نیویارک: جدت ویب ڈیسک ::فیس بک نے کہا ہے کہ اس پر ایک بڑا سائبر حملہ ہوا ہے جس کے نتیجے میں 3 کروڑ اکاؤنٹس کی تفصیلات چوری ہوگئی ہیں۔
فیس بک پر یہ پہلا حملہ نہیں ہے۔ اس سے پہلے بھی ویب سائٹ پر متعدد حملے ہوچکے ہیں جن میں کروڑوں صارفین کی معلومات ہیکرز کے ہاتھ لگ چکی ہیں۔ صارفین کو خدشہ ہے کہ ہیکرز ان کی ذاتی معلومات کا غلط فائدہ بھی اٹھا سکتے ہیں۔
سماجی رابطوں کی مقبول ویب سائٹ ہیکرز کے پے درپے حملوں کی وجہ سے انتہائی غیر محفوظ ثابت ہوتی جارہی ہے۔ گزشتہ ماہ ستمبر میں فیس بک پر حملے میں 5 کروڑ صارفین کا ڈیٹا چوری ہوا تھا اور کمپنی کی جانب سے جاری کردہ نئے بیان کے مطابق ایک اور حملے میں مزید 3 کروڑ صارفین کے اکاؤنٹس ہیک ہوگئے ہیں۔
فیس بک کے بیان کے مطابق ہیکرز 3 کروڑ صارفین کی ای میلز اور فون نمبر چرانے میں کامیاب ہوگئے۔ ہیکرز نے 4 لاکھ اکاؤنٹس کو استعمال کرکے 3 کروڑ صارفین کے ’’ایکسس ٹوکنز‘‘ حاصل کیے۔ فیس بک میں پاس ورڈ ڈالے بغیر اکاؤنٹ لاگ ان کرنے کے لیے Access token استعمال کیے جاتے ہیں۔اس حملے میں 1.4 کروڑ صارفین کے نام، رابطہ نمبر، نجی معلومات بشمول جنس، ازدواجی حیثیت اور کہاں کہاں وہ جاتے رہے ہیں، یہ سب معلومات چوری ہوگئی ہیں۔ دیگر 1.5 کروڑ صارفین کے نام اور رابطہ نمبر چوری ہوئے ہیں۔فیس بک نے پیج بھی جاری کیا ہے جہاں جاکر صارفین یہ معلوم کرسکتے ہیں کہ متاثرہ افراد میں وہ شامل ہیں یا نہیں۔ صارفین وہ پیج کھولیں گے تو اس میں فیس بک کی جانب سے پیغام لکھا آجائے گا کہ ان کا اکاؤنٹ محفوظ ہے یا ہیک ہوچکا ہے۔ متاثرہ صارفین کو کمپنی کی طرف سے پیغام ملے گا جس میں انہیں اکاؤنٹ کی ہیکنگ سے آگاہ کیا جائے گا۔ایف بی آئی نے فیس بک کی درخواست پر واقعے کی
تحقیقات شروع کردی ہیں۔ فیس بک نے صارفین کی سیکورٹی یقینی بنانے کے لیے ایکسس ٹوکنز بدل دیے ہیں اور مشکوک سرگرمیوں میں ملوث 559 مشتبہ پیجز اور 251 اکاؤنٹس بھی بند کرنے کا اعلان کیا ہے۔

October 12, 2018

راکٹ کی ایمرجنسی لینڈنگ، دونوں خلا باز معجزانہ طور پر محفوظ،جانیے

جدت ویب ڈیسک ::ماسکو، بین الاقوامی خلائی اسٹیشن کے لیے روانہ ہونے والے روسی خلائی راکٹ کو خرابی کے باعث ہنگامی لینڈنگ کرنا پڑی ۔ دونوں خلا باز معجزانہ طور پر محفوظ رہے۔
روس کی جانب سے بین الاقوامی خلائی اسٹیشن کیلئے روانہ ہونے والے خلائی راکٹ نے قازقستان میں واقع روسی خلائی اسٹیشن ’بیکانور‘ سے اڑان بھری تھی جس میں ایک امریکی اور ایک روسی خلاباز سوار تھے۔روس نے واقعے کی مکمل تفتیش شروع کرتے ہوئے بین الاقوامی خلائی اسٹیشن کے لیے اپنی اگلی پروازیں وقتی طور پر روکنے کا اعلان کیا۔پرواز کے نوے سیکنڈز بعد سویوز راکٹ میں اس وقت خرابی پیدا ہوئی جب وہ فضا اور خلا کے کنارے پر تھا۔ یہ خرابی راکٹ بوسٹر میں پیدا ہوئی تھی جس کے بعد خلابازوں نے واپسی کا فیصلہ کیا اور قازقستان میں ہنگامی لینڈنگ کی ۔ دونوں خلا باز اس واقعے میں محفوظ رہے جب کہ انہیں کسی قسم کی طبی امداد دینے کی ضرورت نہیں پڑی۔

Image result for russian rocket landing emergency

Image result for russian rocket landing emergency

Related image

Related image

October 12, 2018

سمارٹ فونز کے خلاف آپریشن 20 اکتوبر کے بعد ملک بھر میں لاکھوں سمارٹ فونز ناکارہ ہونے کا امکان

جدت ویب ڈیسک ::پاکستان میں جعلی انٹرنیشنل موبائل ایکویپمنٹ آئی ڈینٹیٹی (آئی ایم ای آئی) والے سمارٹ فونز کے خلاف آپریشن کے نتیجے میں 20 اکتوبر کے بعد ملک بھر میں لاکھوں سمارٹ فونز ناکارہ ہونے کا امکان ہے۔
پاکستان ٹیلی کمیونی کیشن اتھارٹی (پی ٹی اے) نے ملک بھر میں ڈوپلی کیٹ آئی ایم آئی والے سمارٹ فونز بند کرنے کا فیصلہ کر لیا ہے۔ اس حوالے سے شہریوں کو ایس ایم ایس کے ذریعے آگاہ بھی کیا جا رہا ہے کہ وہ اپنے موبائل فون کا آئی ایم ای آئی نمبر 20 اکتوبر سے پہلے چیک کر لیں۔
اینڈرائڈ سمارٹ فونز کیلئے دستیاب پی ٹی اے کی ایپلی کیشن کے ذریعے آئی ایم ای آئی نمبر کی تصدیق کرنا بھی انتہائی آسان ہے۔ یہاں کلک کر کے ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کریں، ایپلی کیشن کے ہوم پیج پر دئیے گئے خانے میں آئی ایم ای آئی نمبر لکھیں اور چیک کا بٹن دبا دیں۔
آئی ایم ای آئی نمبر کی تصدیق موبائل ایپلی کیشن، ایس ایم ایس اور پی ٹی اے کی ویب سائٹ کے ذریعے کی جا سکتی ہے اور اگر آپ بھی آئی ایم ای آئی نمبر کی تصدیق کرنا چاہتے ہیں تو ذیل میں دی گئی ہدایات پر عمل کیجئے۔کسی بھی موبائل فون کا آئی ایم ای آئی نمبر حاصل کرنے کیلئے فون میں #06#* ملائیں، سکرین پر آئی ایم ای آئی نمبر ظاہر ہو جائے گا۔ ایس ایم ایس کے ذریعے تصدیق کیلئے آئی ایم ای آئی نمبر لکھیں اور 8484 پر بھیج دیں۔پی ٹی اے نے اس مقصد کیلئے خصوصی ویب سروس کا آغاز بھی کر رکھا ہے جسے استعمال کرنے کیلئے
www.dirbs.pta.gov.pk  وزٹ کریں اور دی گئی ہدایات پر عمل کرتے ہوئے آئی ایم ای آئی کی تصدیق کرلیں

 

September 29, 2018

ہیکرز کافیس بک پر سائبر حملہ 5 کروڑ صارفین کا ڈیٹا چوری

جدت ویب ڈیسک ::غیر ملکی میڈیا کے مطابق ہیکرز نے سماجی رابطے کی ویب سائیٹ فیس بک کے ‘وویوایز’ نامی فیچرکا استعمال کرتے ہوئے 5 کروڑصارفین کے اکاونٹس تک رسائی حاصل کرکے ان کی لاگ ان کیزچوری کیں جس کے ذریعے دوسروں کے اکاونٹس تک رسائی حاصل کی گئی۔فیس بک کے چیف ایگزیکٹو مارک زکربرگ نے ہیکنگ کی سائبرحملے کی تصدیق کرتے ہوئے کہا کہ ہمارے علم میں نہیں کہ کسی کے اکاونٹ کا کوئی غلط استعمال ہوا یا نہیں البتہ ہمیں اس مسئلے کا چند روزقبل معلوم ہوا تاہم مسئلے کوحل کرلیا گیا ہے۔ احتیاطی طورپر9 کروڑفیس بک صارفین کے لاگ انز کو ری سیٹ کیا گیا ہے۔
’ویو ایز‘ کیا ہے
فیس بک کا ’ویو ایز‘ ایک پرائیویسی فیچر ہے جس کے ذریعے لوگ یہ جان سکتے ہیں کہ ان کی اپنی پروفائل دیگر صارفین کو کیسے نظر آتی ہے۔
اس سے قبل بھی فیس بک رواں برس اپریل میں تنقید کی زد میں رہی جب کیمبرج انالیٹیکا نامی فرم نے لاکھوں فیس بک صارفین کا ڈیٹا چوری ہونے انکشاف کیا اوراپریل میں ہی کمپنی کی پرائیوسی پالیسیوں کے بارے میں منعقدہ سماعت کے دوران زکربرگ کانگریس کے سامنے پیش بھی ہوئے تھے