January 17, 2019

سپریم کورٹ میں چیف جسٹس پاکستان جسٹس ثاقب نثار کے اعزاز میں فل کورٹ ریفرنس جاری

جدت ویب ڈسیک :چیف جسٹس پاکستان جسٹس ثاقب نثار آج ریٹائر ہورہے ہیں، ان کے اعزاز میں سپریم کورٹ میں ریفرنس جاری ہے۔ اس موقع پر سپریم کورٹ کے فاضل جج صاحبان، اٹارنی جنرل آف پاکستان، وکلا تنظیموں کے نمائندگان موجود ہیں تاہم جسٹس منصورعلی شاہ نے ریفرنس میں شرکت نہیں کی۔
چیف جسٹس کی طرح ملک کا قرض اتارنا چاہتا ہوں، جسٹس کھوسہ
سپریم کورٹ کے سینئر جج جسٹس آصف سعید کھوسہ نے فل کورٹ ریفرنس کے دوران اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ ہم دونوں ایک ساتھ جڑے ہوئے بچوں کی طرح ہیں جو آج الگ ہو جائیں گے، چیف جسٹس ثاقب نثار نے بہت مشکل حالات میں عدالت چلائی، انہوں نے سیاسی، سماجی ، معاشرتی اور آئینی سمیت کئی مشکلات کا سامنا کیا، ان کی انسانی حقوق کے حوالے سے خدمات یاد رکھی جائیں گی.
جسٹس آصٖ سعید کھوسہ نے کہا کہ میں بھی چیف جسٹس ثاقب نثار کی طرح ملک کا قرضہ اتارنا چاہتا ہوں، 3 ہزار ججز 19 لاکھ مقدمات نہیں نمٹا سکتے بطور چیف جسٹس انصاف کی فراہمی میں تعطل کو دورکرنے کی کوشش کروں گا، ماتحت عدلیہ میں برسوں سے زیرالتواء مقدمات کے جلد تصفیہ کی کوشش کی جائے گی، غیر ضروری التواء کو روکنے کے لئے جدید آلات کا استعمال کیا جائے گا، مقدمات کی تاخیر کے خلاف ڈیم بناؤں گا، عرصہ دراز سے زیر التواء مقدمات کا قرض اتاروں گا۔
چیف جسٹس کے تعلیم اور پانی پر شاندار فیصلے دیئے،اٹارنی جنرل
اٹارنی جنرل نے ریفرنس سے خطاب کے دوران کہا کہ چیف جسٹس ثاقب نثار نے 20 سال تک بطورجج خدمات سر انجام دیں، فراہمی انصاف میں چیف جسٹس ثاقب نثار کی خدمات کو یاد رکھا جائے گا، چیف جسٹس کو از خود نوٹسز پر تنقید کا نشانہ بنایا گیا لیکن انہوں نے صحت، تعلیم اور پانی کے معاملات پر شاندار فیصلے دیئے۔
ججز کی تقرری کا طریقہ درست نہیں،صدرسپریم کورٹ بار
صدرسپریم کورٹ بار نے کہا کہ ججز کی تقرری کا طریقہ درست نہیں، ججز کو ہٹانے کے طریقہ کار میں بھی بنیادی تبدیلیوں کی ضرورت ہے۔ خلفاء کا احتساب سر عام ہو سکتا ہے تو قاضی کا کیوں نہیں؟، دوسرے ممالک میں ججز کا محاسبہ پارلیمنٹ کرتی ہے، کئی ججز سپریم جوڈیشل کونسل کے فیصلوں کےبعد چلے گئے جب کہ اسلام آباد اور لاہورہائیکورٹ کے ایک ،ایک جج کو الزامات سے مبرا قرار دیا گیا، اس عمل سے سپریم جوڈیشل کونسل کی ساکھ کو نقصان پہنچا۔سپریم کورٹ بار ایسوسی ایشن کے صدر امان اللہ کنرانی نے فل کورٹ ریفرنس سے خطاب کے دوران کہا کہ کچھ عرصے سے ججز کے لہجےمیں ترشی بڑھ جاتی ہے،ججز کےلہجے میں ترشی عدالت اور وکیل کو بنیادی مقصد سے ہٹا دیتی ہے، وکلاء اور ججوں کے درمیان تلخ جملوں کا تبادلہ سائلین کے ذہنوں کو متاثر کرتا ہے۔ وکیل کو حقائق بیان کرنے اور دلائل دینے کا موقع نہیں دیا جاتا، عدلیہ اور بار ایک گاڑی کے پہیے لیکن اب ایک پہیہ صرف اضافی ہے۔ حکومتی اور انتظامی امور میں بے جا مداخلت سے ادارے کمزور ہوتے ہیں، ازخود نوٹس کی کثیر تعداد سے عام مقدمات میں تاخیر ہوتی ہے۔ ازخود فیصلے پر نظر ثانی یا اپیل کا حق دیا جانا چاہیے۔

 

January 17, 2019

سوئٹزرلینڈ حکومت نے پاسپورٹ ایڈریس پرچالان گھر بھیج دیا، قوانین کی خلاف ورزی جے یوآئی کے رہنما کومہنگی پڑگئی

پشاور جدت ویب ڈسیک ::: سوئٹزرلینڈ میں ٹریفک قوانین کی خلاف جمیعت علماء اسلام ضلع پشاور کے سیکرٹری اطلاعات کو مہنگی پڑگئی۔سوئٹزرلینڈ حکومت نے پاسپورٹ ایڈریس پرفاروق جان کو چالان بھیج دیا جواب 105 یورو کے بجائے 301 یورو کا چالان ہے۔فاروق جان کا کہنا ہے کہ انہیں اس حوالے سے معلوم نہیں تھا لیکن چالان ملنے پروہ سوئٹزلینڈ میں دوست کے ذریعے چالان اداء کررہے ہیں۔ ۔ فاروق جان کا شمار جے یو آئی کے سر کردہ کارکنوں میں ہوتا ہے جو پشاورسے 2013 میں پی کے چار اور 2018 میں پی کے 75 سے الیکشن میں حصہ لے چکے ہیں، وہ جے یوآئی کی صد سالہ تقریبات کو اسپانسر کرنے والوں میں شامل تھے۔جے یوآئی سے تعلق رکھنے والی مقامی رہنما ارباب فاروق جو چار ماہ قبل فیملی کے ساتھ یورپ کے دورے پرگئے تھے اورسوئزر لینڈ میں سیروتفریح کے لیے کرائے پرگاڑی حاصل کی، سفرکے دوران رفتارکی حد 100 کوعبور کیا تو قانون کی زد میں آگئے، انہیں 105 یوروکا چالان کیا گیا لیکن چالان اداء کیے بغیرہی پشاورپہنچ گئے

January 16, 2019

نعلین پاک کی چوری کا کیس: سپریم کورٹ کا برآمدگی کیلئے الیکٹرانک اور پرنٹ میڈیا پر تشہیر کا حکم

اسلام آباد: جدت ویب ڈسیک ::سپریم کورٹ نے بادشاہی مسجد سے حضور اکرمﷺ کے نعلین مبارک کی چوری سے متعلق کیس میں نعلین پاک کی برآمدگی کے لیے الیکٹرانک اور پرنٹ میڈیا پر تشہیر کا حکم دیا ہے۔یہ تو ایسی نایاب چیز ہے جس کی قیمت ہی کوئی نہیں، اس معاملے کو ہم نے نہیں چھوڑنا،چیف جسٹس پاکستان کی سربراہی میں 3 رکنی بینچ نے نعلین پاک کی چوری سے متعلق کیس کی سماعت کی، اس موقع پر نمائندہ پنجاب پولیس نے عدالت کو بتایا کہ نعلین مبارک 31 جولائی 2002 کو مغرب اور عشاء کے درمیان برونائی سے واپس آتے ہوئے چوری ہوئے، ہم نے اس پہلو کی تفتیش بھی کی نعلین مبارک کہ اسمگل نا ہوگئے ہوں۔
چیف جسٹس پاکستان جسٹس میاں ثاقب نثار نے ریمارکس دیے کہ نعلین مبارک جب سے چوری ہوئے درخواست گزار ننگے پاؤں پھر رہا ہے، یہ تو ایسی نایاب چیز ہے جس کی قیمت ہی کوئی نہیں، اس معاملے کو ہم نے نہیں چھوڑنا، اپنے آرڈر میں لکھوادیں گے، پولیس بتادے کہ آئندہ کیا کرنا ہے

January 16, 2019

جہانگیر ترین کی نااہلی کے خلاف نظر ثانی درخواست خارج، تحریری فیصلہ جاری

جدت ویب ڈسیک ::تحریری فیصلہ چیف جسٹس میاں ثاقب نثار نے تحریر کیا، فیصلے میں کہا گیا ہے کہ جہانگیر ترین کو دستاویزات پیش کرنے کے کئی مواقع دئیے گئے، ان کی نااہلی کے خلاف نظر ثانی خارج کی جاتی ہے۔سپریم کورٹ نے تحریک انصاف کے رہنما جہانگیر ترین کی تاحیات نااہلی اور نظر ثانی کیس کا تحریری فیصلہ جاری کر دیا ہے۔ چیف جسٹس میاں ثاقب نثار کی جانب سے تحریر کیے گئے فیصلے میں کہا گیا ہے کہ جہانگیر ترین ہائیڈ ہاؤس کے بینیفشل مالک ہیں، ان کے وکیل عدالت کو مطمئن نہیں کرسکے۔ ٹرسٹ ڈیڈ کے مطابق جہانگیر ترین آف شور کمپنی کے لائف ٹائم بینیفشل اور کنڑولر ہیں۔
فیصلے میں کہا گیا ہے کہ جہانگیر ترین کے پاس ٹرسٹ سے متعلق فیصلہ سازی کا اختیار ہے۔ ہائیڈ ہاؤس کیلئے زمین اور خریداری کیلئے جہانگیر ترین نے پاکستان سے پیسہ بھیجا۔ نامعلوم وجوہات کی بنا پر ہائیڈ ہاؤس اور آف شور کمپنی کی ملکیت پر پردہ ڈالا گیا۔
کیس کے تفصیلی فیصلے میں کہا گیا کہ عوامی عہدہ رکھنے والوں کیلئے اثاثے اور آمدن کے ذرائع ظاہر کرنا لازمی ہیں، اثاثے چھپانے پر آرٹیکل 62 ون ایف متحرک ہو جاتا ہے۔ مقدمہ میں حقائق چھپانے کی دانستہ کوشش کی گئی۔
تحریری فیصلے قرار دیا گیا ہے کہ عوامی عہدہ رکھنے والے کیلئے شفافیت ضروری جبکہ آرٹیکل 62 ون ایف کی روح کیلئے ایمانداری اور عوام کا اعتماد لازمی ہے۔ فیصلے میں کہا گیا کہ جہانگیر ترین کے وکیل نے نظر ثانی مقدمے میں نئی دستاویزات پیش کیں، نظر ثانی کا دائرہ محدود ہوتا ہے، قانون شہادت کے مطابق بار ثبوت جہانگیر ترین کے کندھوں پر تھا۔

January 15, 2019

صحافیوں کے لئے انشورنس اور ہیلتھ کارڈز اور پی آئی ڈی اشتہارات کی تقسیم میں نئی پالیسی لا رہے ہیں، فواد چوہدری

جدت ویب ڈسیک :: کراچی میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے فواد چوہدری کا کہنا تھا کہ میرے آنے سے سندھ حکومت پریشان ہے، ٹانگیں کانپ رہی ہیں۔ وفاقی وزیر اطلاعات فواد چوہدری نے کہا ہے کہ پیپلزپارٹی کے 12 ارکان سے زاید ارکان پی ٹی آئی سے رابطے میں ہیں.
صحافیوں کے لئے انشورنس اور ہیلتھ کارڈز لا رہے ہیں۔۔فواد چوہدری نے کہا کہ سندھ میں جو 80 ہزار کروڑ روپے پہلے آئے وہ کہاں خرچ ہوئے بتایا جائے، کرپشن اتحاد کا آج اجلاس ہوا، جو ان کے ساتھ تھے، ان کی ہمدردیاں بھی ختم ہوچکی ہیں، اپوزیشن عوامی مسائل کے بجائے صرف اپنے کیسز پر بات کرتی ہے۔ان کا کہنا تھا کہ فوجی عدالتوں کا قیام غیرمعمولی حالات میں ہوا تھا، ہم سمجھتے ہیں کہ فوجی عدالتوں کی اسٹریٹجی کامیاب رہی ہے، احتساب کاعمل آگے بڑھےگاکسی کونہیں چھوڑا جائے گا، ہم سے کوئی علیحدہ ہونے کو نہیں بلکہ متحد ہونے کو تیار ہیں،وفاقی وزیر اطلاعات کا کہنا تھا کہ ریڈیوبلڈنگ کابجٹ کم کیا ،اسلام آباد میں اسکول کھول رہے ہیں، اسکول میں ڈانس، ایکٹنگ و دیگر فنون کی تعلیم دی جائے گی، ایک میڈیا ٹیکنالوجی اسکول بنا رہے ہیں.
فوادچوہدری نے کہا کہ اگلی دنیا کی جنگ آئیڈیاز کی جنگ ہے، حکومت سینسرشپ نہیں کرسکے گی، ٹیکنالوجی غالب آجائے گی، پگڑی اچھالنے کی اجازت نہیں ہونی چاہیے، کے پی میں پی ٹی آئی صحافیوں کے تحفظ کا بل لائی، صحافیوں کے لئے انشورنس اور ہیلتھ کارڈز لا رہے ہیں.ان کا کہنا تھا کہ 5 لاکھ تک کا انشورنس کارڈ متعارف کرانے جا رہے ہیں، صحافیوں کے تحفظ کا بل قومی اسمبلی میں بھی لارہے ہیں، پی آئی ڈی اشتہارات جاری کرتا ہے، جس میں تبدیلی لائے، نئی پالیسی لا رہے ہیں
فواد چوہدری نے کہا ہے کہ میں تو اپنی وزارت کا کام کرنے سندھ آیا ہوں، جب خود میں اہلیت نہ ہو، کمزور ہوں، تو یہی ہوتا ہے.
وفاقی وزیر اطلاعات نے کہا کہ پی ٹی آئی نے سندھ میں آنا ہی آنا ہے، ابھی ہم صرف یہ چاہتے ہیں کہ یہ مراد علی شاہ کو خود ہٹا دیں.
فواد چوہدری کا کہنا تھا کہ سندھ میں مراد علی شاہ کی حکومت رہنا مشکل لگتا ہے، بہتر ہے، پی پی خود تبدیلی لے آئے.
ان کا کہنا تھا کہ جوسمجھ رہےہیں سندھ میں پی پی کاراج رہے گا، وہ پنجاب سے سیکھ لیں، پنجاب میں 30 سال بعد نواز شریف کا تختہ الٹا ہے اور ایسا تختہ الٹا ہے کہ ن لیگ کا کوئی آدمی مل نہیں رہا، جس طرح پنجاب میں ن لیگ کا خاتمہ ہوا، سندھ سے پیپلزپارٹی کا بھی خاتمہ ہوگا۔انھوں نے کہا کہ آصف زرداری، فریال تالپور اور مرادعلی شاہ مرکزی کردار ہیں، جے آئی ٹی رپورٹ کے بعد تینوں کو گرفتار کرکے تفتیش بڑھانی چاہیے، آصف زرداری کی بادشاہت اور اومنی گروپ کی بادشاہت ختم ہوچکی، جعلی 32اکاؤنٹس کے بینفشری بلاول ہاؤس اور وزیراعلیٰ ہاؤس کے مکین ہیں، حیران ہوں اومنی گروپ کے مرکزی کردار اب تک گرفتارکیوں نہیں ہوئے۔آصف زرداری، فریال تالپور اور مرادعلی شاہ مرکزی کردار ہیں، جے آئی ٹی رپورٹ کے بعد تینوں کو گرفتار کرکے تفتیش بڑھانی چاہیے۔ان کا کہنا تھا کہ نیب کی اب تک کی کارکردگی کافی سست روی کا شکار ہے، منی لانڈرنگ جعلی اکاؤنٹس کیس میں فوری گرفتارکرکے پیش کیا جائے، سندھ میں یہ پپوچھو کہ پیسے کہاں خرچ کئے، تو جمہوریت خطرے میں آجاتی ہے، میں نہیں سمجھتا کہ ایم کیوایم ہمیں چھوڑنےکاسوچ رہی ہے، تمام اتحادی وفاقی حکومت کے ساتھ کھڑے ہیں۔

January 15, 2019

سی ٹی ڈی کی فیصل آباد میں کارروائی،علی حیدرگیلانی کے اغوا میں ملوث 2 دہشتگرد ہلاک، 3 گرفتار

فیصل آباد جدت ویب ڈیسک:سی ٹی ڈی نے فیصل آباد اور بہاولپور میں دہشتگردوں کے خلاف مختلف کارروائیوں میں 2 دہشتگرد ہلاک اور 3 گرفتار کر لئے۔ فیصل آباد میں ایکشن کے دوران 2 دہشت گردوں کو ہلاک کر دیا گیا۔ ہلاک دہشت گرد سابق وزیراعظم یوسف گیلانی کے بیٹے علی حیدر گیلانی کے اغوا سمیت وارداتوں میں ملوث تھے۔ دوسری طرف انسداد دہشت گردی فورس نے بہاولپور میں خفیہ کارروائی کے دوران کالعدم تنظیم کے 3 دہشت گرد گرفتار کر لئے۔ دہشت گردوں سے خودکش جیکٹس، اسلحہ، ہینڈ گرنیڈ سمیت دیگر سامان بھی برآمد ہوا۔قانون نافذ کرنے والے ادارے چوکس، دہشت گردوں کے گرد گھیرا تنگ کر دیا۔ سی ٹی ڈی نے خفیہ اطلاع پر فیصل آباد میں کارروائی کی، ذرائع کے مطابق دہشت گرد کرائے کےگھر میں مقیم تھے، محاصرہ کئے جانے پر دہشت گردوں نے فائرنگ کر دی، جوابی فائرنگ میں 2 دہشت گرد مارے گئے۔ہلاک ہونےوالے دہشت گردوں کی شناخت عدیل حفیظ اور عثمان ہارون کے نام سے ہوئی۔