June 3, 2020

انٹر سروسز انٹیلی جنس ( آئی ایس آئی) کی قربانیاں اور انتھک کاوشیں‌ قابلِ تعریف ہیں۔وزیرِ اعظم عمران خان

اسلام آباد:جدت ویب ڈیسک :: وزیر اعظم عمران خان نے کہا ہے کہ انٹر سروسز انٹیلی جنس ( آئی ایس آئی) کی قربانیاں اور انتھک کاوشیں‌ قابلِ تعریف ہیں۔

رپورٹ کے مطابق وزیرِ اعظم عمران خان نے چیف آف آرمی اسٹاف جنرل قمر جاوید باجوہ ، وفاقی وزراء شاہ محمود قریشی اور اسد عمر اور معاون خصوصی ڈاکٹر معید یوسف کے ہمراہ  ہیڈ کوارٹرز آئی ایس آئی کا دورہ کیا۔

ڈائریکٹر جنرل آئی ایس آئی لیفٹننٹ جنرل فیض حمید نے ہیڈ کوارٹرز آمد پر وزیر اعظم سمیت دیگر مہمانوں کا استقبال کیا۔

 

اس موقع پر ایک اہم اجلاس بھی ہوا جس میں وزیرِ اعظم کو پیچیدہ علاقائی اور داخلی چیلنجز کے ساتھ امن کی بحالی کے لئے پاکستانی کاوشوں کے متعلق تفصیل اور امن کی بحالی کے حوالے سے پاکستان کی جانب سے اٹھائے جانے والے اقدامات سے آگاہ کیا گیا۔

وزیرِ اعظم نے اجلاس میں شریک شرکاء سے گفتگو کرتے ہوئے اس امر پر زور دیا کہ ملکی سلامتی اور خودمختاری کے تحفظ کے لئے کسی بھی بات کو معمولی سمجھ کر نظر انداز نہیں کیا جائے گا۔

وزیرِ اعظم نے آئی ایس آئی کی قربانیوں اور انتھک  کاوشوں کو خصوصی طور پر سراہا۔

June 3, 2020

بھارت سن لے، ہم تیار ہیں بھرپور جواب دیں گے، بھارت نے کوئی ایڈونچر کیا تو اس کے نتائج بھی خوفناک ہوں گے۔ ڈی جی آئی ایس پی آر میجر جنرل بابر افتخار

راولپنڈی۔جدت ویب  ڈیسک : ڈی جی آئی ایس پی آر میجر جنرل بابر افتخار کا کہنا ہے کہ بھارت سن لے، ہم تیار ہیں بھرپور جواب دیں گے، بھارت نے کوئی ایڈونچر کیا تو اس کے نتائج بھی ہوں گے۔

رپورٹ کے مطابق ڈی جی آئی ایس پی آر میجر جنرل بابر افتخار کا کہنا ہے کہ بھارت وہاں بھی مداخلت کررہا ہے جہاں اس کی سرحدیں نہیں ملتیں، بھارتی فوج کی مہم جوئی کے نتائج ناقابل کنٹرول ہوں گے۔

میجر جنرل بابر افتخار نے کہا کہ ایل او سی پر کچھ عرصے سے صورتحال تشویشناک ہے، بھارت کا سب سے بڑا ڈرامہ پلواما ٹو تھا، پاک فوج بھارت کو بہتر طریقے سے جواب دے رہی ہے۔

ڈی جی آئی ایس پی آر نے کہا کہ بھارت کو نیپال بارڈر پر بھی کافی شرمندگی کا سامنا رہا، بھارت کے مقبوضہ کشمیر میں تمام اقدامات بیک فائر کرگئے۔

انہوں نے کہا کہ بھارت نے کسی طرح کی جارحیت کی تو پوری طاقت سے جواب دیں گے، خطے کے تمام مسائل کا تعلق بھارت کے ساتھ ہے، بھارت کو بعض محاذوں پر بڑی شرمندگی کا سامنا ہے۔

میجر جنرل بابر افتخار نے کہا کہ بھارت میں اسلامو فوبیا کی اٹھنے والی لہر کو دنیا نے محسوس کیا ہے، دنیا بھارت سے انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں پر سوال پوچھ رہی ہے، بھارت یو این مبصر گروپ، عالمی میڈیا کو رسائی دے تو چیزیں کلیئر ہوجائیں۔

June 3, 2020

جعلی اکانٹس کیس: نیب راولپنڈی نے وزیراعلی سندھ مراد علی شاہ کو کل طلب کرلیا

راولپنڈی:جدت ویب ڈیسک :نیب نے وزیراعلی سندھ مراد علی شاہ کو کل طلب کرلیا۔ سندھ میں سولر لائٹس کا ٹھیکہ لینے والی کمپنی کے 2 ڈائریکٹرز نے پلی بارگین کرلی۔ قومی احتساب بیورو کے راولپنڈی دفتر سے وزیراعلی سندھ کی طلبی کے سمن جاری کر دیئے گئے۔ مراد علی شاہ کو جعلی اکانٹس اور سندھ روشن منصوبے میں بے ضابطگیوں سے متعلق تحقیقات میں پوچھ گچھ کے لئے طلب کیا گیا ہے۔ سولر لائٹس کیس میں ڈائریکٹرز محمد جعفر اور عزیر تحسین نے اعتراف جرم کرلیا۔ دونوں ڈائریکٹرز نے لوٹے گئے 21 کروڑ روپے واپس قومی خزانے میں جمع کرا دیئے۔ ادھر مراد علی شاہ کی پیشی کے حوالے سے نیب نے ضلعی انتظامیہ اور پولیس سے سیکیورٹی بھی طلب کرلی۔ چیف کمشنر اسلام آباد کو خط میں نیب نے سیکیورٹی کو یقینی بنانے کی درخواست کی ہے۔واضح رہے کہ وزیراعلی سندھ سید مراد علی شاہ کو دو مرتبہ پہلے بھی نیب پنڈی کی جانب سے طلب کیا جا چکا ہے جب کہ مراد علی شاہ ایک مرتبہ نیب پنڈی کے دفتر میں پیش ہو چکے ہیں۔

June 3, 2020

حادثے کا شکار ہونے والے طیارے کے پائلٹ نے ہدایات پر عمل نہیں کیا، سول ایوی ایشن

کراچی: جدت ویب ڈیسک :سول ایوی ایشن اتھارٹی نے حادثے کا شکار ہونے والے پاکستان ایئر لائنز(پی آئی اے) کے طیارے کے کپتان کی دوران پرواز ضابطوں کی خلاف ورزیوں سے متعلق رپورٹ جاری کردی ہے۔ایڈیشنل ڈائریکٹر آپریشن افتخار احمد کی جانب سے پی آئی اے کے شعبہ سیفٹی کے جی ایم کو لکھے گئے خط کے مطابق ایئرٹریفک کنٹرولر لینڈنگ سے متعلق کپتان کو ہدایت دیتا رہا تاہم کپتان نے عمل درآمد نہیں کیا۔ خط کے متن کے مطابق طیارہ کنٹرول زون اپروچ پوائنٹ پر تھا تو طیارے کی بلندی زیادہ تھی۔ کنٹرولر نے کپتان کو وارننگ دی کہ بلندی زیادہ ہے،طیارہ سات ناٹیکل میل پر تھا تو طیارے کی اونچائی 5ہزار دوسو فٹ تھی جو کہ اپروچ پروفائل سے زیادہ تھی۔ کنٹرولر نے دومرتبہ کپتان کو ہدایت کی کہ طیارے کو بلندی پر قابو رکھنے کے لیے بائیں جانب180ڈگری پر لے جانے کی ہدایت کی تھی۔ لیکن کپتان نے ائیر کنٹرول کی ہدایت کو نظر انداز کردیا۔