August 18, 2019

وادی کشمیر میں 6 ہزار سے زائد اجتماعی قبریں دریافت ہو چکی ،آسٹریلوی کالم نویس کا انکشاف

سڈنی جدت ویب ڈیسک :معروف آسٹریلین کالم نویس کے کشمیر میں بھارتی جارحیت سے متعلق ہوش رْبا اعداد و شمارجاری کر دیئے ہیں۔یہ اعدادو شمار مڈل ایسٹ آئی اور بائی لائنز کے کالم نویس سی جے ورلیمن نے بھارتی قبضے کے تحت کشمیر میں زندگی کے عنوان سے سوشل میڈیا پر شیئر کیے ہیں۔جس کے مطابق مقبوضہ کشمیر میں ہر 10 کشمیریوں پر ایک بھارتی فوجی تعینات ہے اور مقبوضہ وادی میں 6 ہزار سے زیادہ نامعلوم قبریں یا اجتماعی قبریں دریافت ہو چکی ہیں اور کہا جاتا ہے کہ یہ ان لوگوں کی قبریں ہیں جنہیں بھارتی فورسز نے غائب کیا تھا۔ اس کے علاوہ 80 ہزار سے زائد بچے یتیم ہو چکے ہیں۔اعداد و شمار میں بتایا گیا ہے کہ مسلسل ظلم و ستم اور تناؤ کے باعث 49 فیصد بالغ کشمیری پی ایس ٹی ڈی نامی دماغی مرض کا شکار ہو چکے ہیں، جن متنازع علاقوں میں سکیورٹی اہلکاروں کے ہاتھوں جنسی تشدد کی شرح سب سے زیادہ ہے ان میں مقبوضہ کشمیر بھی شامل ہے،آسٹریلین مصنف نے یہ بھی بتایا ہے کہ گرفتار کیے گئے زیادہ تر افراد کو تشدد کا نشانہ بنایا گیا اور بھارتی فورسز تشدد کو ہتھیار کے طور پر استعمال کر رہی ہیں۔ مقبوضہ کشمیر میں 7000 سے زیادہ زیر حراست ہلاکتیں بھی ہو چکی ہیں۔سی جے ورلیمن کے مطابق مقبوضہ کشمیر سے متعلق اقوام متحدہ کی 18 قراردادیں موجود ہیں اور کشمیر کو متنازع علاقہ تسلیم کیا گیا ہے لیکن 2016 میں بھارت نے اقوام متحدہ کے وفد کو انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کے تحقیقات کے لیے مقبوضہ کشمیر جانے سے روک دیا۔آسٹریلین کالم نویس نے مقبوضہ کشمیر سے متعلق یہ سارے اعداد و شمار ’اسٹینڈ ود کشمیر‘ ہیش ٹیگ کے ساتھ شیئر کیے۔

August 18, 2019

کابل میں شادی کی تقریب میں خودکش بم دھماکا، 63 افراد جاں بحق ، 100 سے زائد زخمی

کابل جدت ویب ڈیسک :افغانستان کے درالحکومت کابل میں شادی کی تقریب میں خودکش بم دھماکے کے نتیجے میں 63 افراد جاں بحق اور 100 سے زائد زخمی ہوگئے۔افغان میڈیا کے مطابق خودکش بم دھماکا پولیس ڈسٹرکٹ 6 میں واقع شارع دبئی ہال کے اندر ہوا جس کے نتیجے میں 63 افراد جاں بحق اور 100 سے زائد زخمی ہوگئے۔افغان وزارت داخلہ کے ترجمان نصرت رحیمی نے خودکش بم دھماکے کی تصدیق کی اور بتایا کہ حادثہ گزشتہ شب 10 بج کر 40 منٹ پر ہوا۔عینی شاہدین کا کہنا ہے کہ خودکش بم دھماکا اس وقت پیش آیا جب شادی کی تقریب جاری تھی اور شادی ہال مہمانوں سے بھرا ہوا تھا۔ادھر افغان طالبان کی جانب سے جاری ایک بیان میں حملے میں ملوث ہونے کی تردید کردی گئی ہے۔ واضح رہے کہ کابل میں گزشتہ ماہ جون کے آخر میں یکے بعد دیگرے ہونے والے تین بم دھماکوں کے نتیجے میں کم سے کم 15 افراد جاں بحق اور 40 زخمی ہوگئے تھے۔#/s#

August 17, 2019

بحران میں کشمیریوں کو مہروں کی طرح استعمال نہ کیا جائے‘ایمنسٹی انٹرنیشنل

کراچی جدت ویب ڈیسک :انسانی حقوق کی نگرانی کرنے والی عالمی تنظیم ایمنسٹی انٹرنیشنل نے ایک مرتبہ پھر بھارت سے مطالبہ کیا ہے کہ مقبوضہ کشمیر کے عوام کےساتھ عالمی انسانی حقوق کے قوانین اور معیارات کے مطابق سلوک کیا جائے‘جس میں سیاسی مخالفین کی گرفتاریاں، آزادی سے رہنے اور آزادانہ نقل و حمل کا حق بھی شامل ہے۔ہفتہ کو ایک بیان میں عالمی تنظیم کے سیکریٹری جنرل کومی نائیڈو نے کہا کہ کئی عشروں میں پہلی مرتبہ اقوامِ متحدہ کی سلامتی کونسل نے مسئلہ کشمیر پر بات کی ہے‘سلامتی کونسل کے اراکین کو یہ یاد رکھنے کی ضرورت ہے کہ ان کے پاس عالمی امن اور سلامتی کو محفوظ رکھنے کی ذمہ داری ہے۔انہوں نے کہا کہ اس کےساتھ ان ممالک کو یہ صورتحال اس طریقے سے حل کرنے کی کوشش کرنی چاہیے کہ مشکلات کا شکار خطے کے عوام کے انسانی حقوق کو مرکزی حیثیت حاصل رہے‘۔انہوں نے کہا کہ ’بھارتی حکومت کے اقدامات نے عام عوام کی زندگیاں مشکل میں ڈال دی ہیں اور سالوں سے انسانی حقوق کی خلاف ورزیاں سہنے والوں کو مزید غیر ضروری تکلیف اور پریشانی کا سامنا ہے‘۔ان کا کہنا تھا کہ سیاسی بحران میں مقبوضہ کشمیر کے عوام کو مہروں کی طرح استعمال نہیں کیا جانا چاہیے اور عالمی برادری سے مطالبہ کیا کہ انسانی حقوق کے احترام کے لیے سب کو اکٹھا ہونا چاہیے۔

August 16, 2019

بھارت کا جوہری ہتھیاروں کے استعمال میں پہل نہ کرنے کی پالیسی میں تبدیلی کا عندیہ

جدت ویب ڈیسک ::بھارت خطے کا امن و امان تباہ کرنے پر تل گیا ۔ بھارت نے جوہری ہتھیاروں کے استعمال میں پہل نہ کرنے کی پالیسی میں تبدیلی کا عندیہ دے دیا۔
بھارت کی انتہا پسند حکمران جماعت بی جے پی کے عزائم ایک ایک کر کے دنیا سامنے کھل رہے ہیں۔ مقبوضہ کشمیر کی صورتحال پر سلامتی کونسل کے اجلاس سے پہلے مودی سرکار دھمکیوں پر اتر آئی اور نیوکلئیر پالیسی میں تبدیلی کا عندیہ دے دیا۔بھارتی وزیر دفاع راج ناتھ سنگھ نے اپنے ایک ٹویٹ میں لکھا پوکھران وہ علاقہ ہے جس نے بھارت کو جوہری طاقت بنایا۔ پوکھران اٹل بہاری واجپائی کے جوہری عزم کا عکاس ہے۔ انہوں نے کہا کہ جوہری حملے میں پہل نہ کرنے کے ڈاکٹرائن پر قائم ہیں تاہم مستقبل کا فیصلہ حالات دیکھ کر کریں گے۔
1974 میں بھارت نے تمام بین الاقوامی قوانین کی دھجیاں بکھیرتے ہوئے ایٹمی دھماکا کیا اور جوہری دھماکے کو Smiling Budha کا نام دیا۔ بھارت کے اس عمل نے جنوبی ایشیا کے امن کو خطرے میں ڈال دیا ۔ بھارت کو اس عمل سے باز رہنے کے لئے نیوکلئیر سپلائرز گروپ کا 1974میں قیام عمل میں آیا تاہم بھارت نے اپنی ہٹ دھرمی جاری رکھی۔ بھارت نے 11-13 مئی 1998 میں ایک مرتبہ پھر پوکھران میں 5 ایٹمی دھماکے کیے اور عالمی قوانین کی دھجیاں بکھیر کر رکھ دیں۔بھارتی وزیر دفاع کے اس بیان کے بعد خطے میں جوہری تصادم کا خطرہ بڑھ گیا۔ راج ناتھ کا یہ اشتعال انگیز بیان خطے کو ایٹمی جنگ کی طرف دھکیل رہا ہے۔ اس بیان سے کشمیر کا نیوکلئیرفلیش پوائنٹ ہونا ثابت ہو گیا۔ ان کا بیان ایک خطرنا ، اک انتہا پسند سوچ اور جوہری جنگ کے خطرے کی طرف اشارہ ہے۔