October 14, 2019

چین کیخلاف سازش کرنے والوں کی ہڈیا ں توڑ دی جائینگی،شی جن پنگ

بیجنگ جدت ویب ڈیسک:چینی صدر شی جن پنگ نے ہانگ کانگ میں جاری مظاہرے کے ردعمل میں مخالفین کو متنبہ کیا ہے کہ چین کے خلاف سازش کرنے والوں کی ہڈیاں توڑ دی جائیں گی۔تفصیلات کے مطابق ہانگ کانگ میں گذشتہ چار ماہ سے چین اور حکومت مخالف مظاہروں کا سلسلہ جاری ہے، جس پر چینی حکام نے امریکا سمیت دیگر ممالک کو اس معاملے پر مداخلت سے خبردار کیا ہے۔غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق چینی صدر شی جن پنگ کا دورہ نیپال کے موقع پر کہنا تھا کہ ہانگ کانگ چین کا حصہ ہے، اسے توڑنے کے لیے بیرونی طاقتیں محنت کررہی ہیں لیکن یہ صرف ایک خواب ہے۔ہانگ کانگ کے مختلف علاقوں میں مظاہروں کا سلسلہ تاحال جاری ہے، کئی علاقوں میں ٹرانسپورٹ کا نظام بند رہا جبکہ ریلوے لائن بھی جزوی طور پر متاثر رہی۔ہانگ کانگ تنازعے کے باعث چین اور امریکا کے درمیان تجارتی جنگ میں بھی شدت آچکی ہے، حال ہی میں امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے کہا تھا کہ اگر ایسی صورت حال رہی تو بات چیت کرنا مشکل ہوجائے گا۔واضح رہے کہ رواں سال ستمبر میں انسانی حقوق پر نگاہ رکھنے والی بین الاقوامی تنظیم ایمنسٹی انٹرنیشنل کا کہنا تھا کہ ہانگ کانگ کی پولیس کی طرف سے جمہوریت نوازوں کے مظاہروں کے دوران طاقت کا غیرضروری استعمال جاری ہے۔واضح رہے کہ ہانگ کانگ چین کا انتظامی علاقہ تصور کیا جاتا ہے، اسی سبب بیجنگ حکام نے امریکا سمیت دیگر ممالک کو خبردار کیا ہے کہ وہ ان کے اندرونی معاملات میں مداخلت سے گریز کریں۔

October 14, 2019

کرددوں کا ترکی سے نمٹنے کیلئے شامی فوج سے معاہدہ

دمشق/انقرہ جدت ویب ڈیسک:شام میں کردوں کا کہنا ہے کہ شامی حکومت نے ترکی کی جانب سے ان کے خلاف جاری کارروائی کو روکنے کے لیے اپنی فوج کو شمالی سرحد پر بھیجنے پر اتفاق کیا ہے۔یہ فیصلہ امریکہ کی جانب سے شام کی غیر مستحکم صورتحال اور وہاں سے اپنی باقی تمام فوج کو نکالنے کے بعد سامنے آیا ہے۔اس سے قبل شام کے سرکاری میڈیا نے بتایا تھا کہ فوج کو شمال میں تعینات کر دیا گیا ہے۔ترکی کی جانب سے کردوں کے خلاف کی جانے والی اس کارروائی کا مقصد کرد افواج کو اس سرحدی علاقے سے نکالنا ہے۔ برطانیہ میں قائم سیرین آبزرویٹری برائے ہیومن رائٹس (ایس او ایچ آر) کے مطابق کم از کم 50 شہری اور 100 سے زیادہ کرد جنگجو ہلاک ہو گئے ہیں۔واضح رہے کہ ایس ڈی ایف اس علاقے میں امریکہ کی حریف رہی ہیں۔ترکی نے کردوں کی زیرِ قیادت شامی ڈیموکریٹک فورسز (ایس ڈی ایف) کے زیر کنٹرول علاقوں پر گذشتہ پانچ دنوں کے دوران شدید بمباری کی ہے جس میں دونوں جانب سے درجنوں عام شہری اور جنگجو ہلاک ہوئے ہیں۔ادھر اقوام متحدہ کا کہنا ہے کہ کردوں کے زیر کنٹرول علاقوں میں 130,000 سے زیادہ افراد بے گھر ہو چکے ہیں۔ ادارے نے متنبہ کیا ہے کہ یہ تعداد جلد ہی تین گنا ہو سکتی ہے۔دوسری جانب کرد حکام کا کہنا ہے کہ اتوار کو ترکی کی جانب سے کیے گئے حملے کے دوران شام کے شمالی علاقے میں واقع عین عیسیٰ نامی کیمپ سے دولتِ اسلامیہ سے وابستہ سینکڑوں غیر ملکی قیدی فرار ہو گئے۔کرد حکام نے مطابق دولت اسلامیہ سے وابستہ جنگجوؤں کے 800 کے قریب رشتہ دار اس کیمپ سے فرار ہوئے۔عین عیسیٰ کیمپ میں تقریباً 12,000 افراد موجود تھے جن میں 1,000 کے قریب خواتین اور بچے وہ تھے جن کے جہادی گروہوں سے تعلقات تھے۔ایس ڈی ایف نے گذشتہ ہفتے متنبہ کیا تھا کہ اگر ترکی کی جانب سے ان کے خلاف حملے جاری رہے تو وہ دولتِ اسلامیہ کے قیدیوں کی نگرانی کو ترجیح نہیں دیں گے۔ترکی کی جانب سے بدھ کو شروع کی جانے والی ان کارروائیوں اور امریکی فوج کے انخلا کی بین الاقوامی سطح پر تنقید کی جا رہی ہے کیونکہ ایس ڈی ایف شام میں دولت اسلامیہ کے خلاف جنگ میں مغرب کی اہم اتحادی رہی ہیں۔لیکن ترکی کرد گروہوں کو’دہشت گرد قرار دیتا ہے اور وہ اس علاقے میں ایک ‘محفوظ زون’ بنانا چاہتا ہے جہاں کردوں کا وجود نہ ہو اور جہاں ترکی آنے والے 30 لاکھ سے زیادہ شامی پناہ گزینوں کو رکھا جائے۔شمالی شام میں کردوں کی زیر قیادت انتظامیہ نے کہا ہے کہ معاہدے کے مطابق شامی فوج کو پوری سرحد پر تعینات کیا جائے گا۔ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ یہ تعیناتی ایس ڈی ایف کو ‘اس جارحیت کا مقابلہ کرنے اور ان علاقوں کو آزاد کروانے میں مدد فراہم کرے گی جن میں ترک فوج اور کرائے کے سپاہی داخل ہوئے تھے۔بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ ‘اس اقدام سے ترک فوج کے زیر قبضہ شام کے باقی شہروں کو بھی آزاد کرانے کی راہ ہموار ہو گی۔اس علاقے میں اپنے طویل مدتی امریکی شراکت داروں کے فوجی تحفظ کو کھونے کے بعد یہ معاہدہ کردوں کے لیے اتحاد میں ایک اہم تبدیلی کی نمائندگی کرتا ہے۔واضح رہے کہ شامی حکومت اور کردوں کے درمیان یہ معاہدہ صدر ٹرمپ کی جانب سے اس خطے سے امریکی فوجیوں کو نکالنے کے فیصلے کے بعد سامنے آیا ہے جس نے ترکی کو کردوں کے خلاف کارروائی کا راستہ فراہم کیا تھا۔

October 14, 2019

ترکی شام میں کردوں کے خلاف فوجی کارروائی روک دے ‘فرانس اور جرمنی کی اپیل

پیرس جدت ویب ڈیسک:فرانسیسی صدر عمانوایل ماکروں اور جرمن چانسلر اینجیلا میرکل نے ترکی سے شمالی شام میں کردوں کے خلاف جاری فوجی کارروائی فوری طور پر روکنے کا مطالبہ کیا ہے۔انھوں نے خبردار کیا ہے کہ اس حملے کے سنگین انسانی اثرات مرتب ہوں گے اور سخت گیر جنگجو گروپ داعش کو پھر سے سر اٹھانے کا موقع مل سکتا ہے۔فرانسیسی صدر عمانوایل ماکروں نیایلزے محل ، پیرس میں جرمن چانسلر اینجیلا میرکل سے ملاقات کے بعد مشترکہ نیوزکانفرنس میں کہاکہ ہماری مشترکہ خواہش یہ ہے کہ اس حملے کو روک دیا جائے۔جرمن چانسلر نے اس موقع پر بتایا کہ انھوں نے ترک صدر رجب طیب ایردوآن سے کوئی ایک گھنٹے تک ٹیلی فون پر بات چیت کی ہے اور ان پر واضح کیا ہے کہ ”اس ترک چڑھائی کا اب خاتمہ ہوجانا چاہیے۔انھوں نے کہا کہ ”ہمارے مطالبے کی انسانی وجوہ ہیں۔ہم کردوں کے خلاف اس صورت حال کو تسلیم نہیں کرسکتے اور اس کا کوئی اور حل تلاش کیا جانا چاہیے۔عمانوایل ماکروں کا بھی کہنا تھا کہ اس حملے سے ناقابل برداشت انسانی صورت حال پیدا ہونیکے خطرات بڑھ گئے ہیں اور خطے میں داعش کے انتہا پسندوں کا دوبارہ ظہور ہوسکتا ہے۔ترکی کی مسلح افواج نے گذشتہ بدھ کو شام کے شمال مشرقی علاقے میں کرد ملیشیا کے زیر قیادت شامی جمہوری فورسز (ایس ڈی ایف) کے خلاف اس فوجی کارروائی کا آغاز کیا تھا۔ ترکی ایس ڈی ایف کو دہشت گرد گروپ قرار دیتا ہے اور اس کا کہنا ہے کہ اس میں بالادست قوت کرد ملیشیا (وائی پی جی) کے ترکی کے کرد باغیوں سے تعلقات ہیں۔امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے شام کے اس علاقے میں موجود اپنے فوجیوں کو ترک فوج کی کارروائی سے قبل انخلا کا حکم دیا تھا۔اس فیصلے پرامریکی صدر پر داعش کے خلاف لڑائی میں ایک وفاداراتحادی کردار ادا کرنے والے کردوں سے مْنھ موڑنے اور انھیں تنہا چھوڑنے کا الزام عاید کیا جارہا ہے۔

October 12, 2019

دبئی کے شیخ محمد بن راشد المختوم نے گھوڑے کو 43 لاکھ ڈالر میں خرید کر نئی تاریخ رقم کردی

لندن۔ جدت ویب ڈیسک ::: اگرچہ دوڑنے والے نسلی گھوڑوں کے دام سن کر ہوش اڑجاتے ہیں لیکن دبئی کے شیخ محمد بن راشد المختوم نے اس ضمن میں ایک نئی تاریخ رقم کرکے ایک نوجوان گھوڑے کی بولی 43 لاکھ 56 ہزار ڈالر لگائی جس کی پاکستانی روپے میں رقم 65 کروڑ سے زائد بنتی ہے۔
برطانیہ میں ہرسال اکتوبر میں ہونے والی ٹیٹرسال نیلامی میں اس کی بولی لگائی گئی جس پر مخالفین نے بڑھ چڑھ کر بولیاں دی لیکن آخرکار قرعہ شیخ محمد کے نام کھلا اور وہ اسےخریدنے میں کامیاب ہوگئے۔
اس موقع پر شیخ کے نمائندے انتھونی اسٹراؤڈ نے کہا کہ یہ بہت ’ایتھلیٹ‘ گھوڑا ہے اور سریع الحرکت بھی ہے اور خود دبئی کے شیخ نے بھی اسے پسند کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اسے خریدنے کے بعد وہ خود کو چاند پر محسوس کررہے ہیں کیونکہ یہ ایک حیرت انگیز گھوڑا ہے۔
گھوڑا گھڑسواری کی سب سے بڑی اور قیمتی ریس گوڈولفن میں حصہ لے گا اور کولمور نامی کمپنی سے سخت مقابلے کے بعد اسے خریدا گیا جس نے آخر تک بولی میں حصہ لیا ۔
دوسری جانب قطر کے شیخ فہد نے بھی اسی اسٹاک سے 13 لاکھ ڈالر کا ایک گھوڑا خریدا ہے۔ اس نیلامی میں مجموعی طور پر 164 گھوڑے فروخت کئے گئے جن کی مجموعی قیمت 45 ملین ڈالر تھی۔

October 11, 2019

نوبل امن انعام ایتھوپیا کے وزیراعظم آبے احمد علی حقدار ٹھہرے

جدت ویب ڈیسک ::اسٹاک ہوم: افریقی ملک ایتھوپیا کے وزیراعظم آبے احمد دو ملکوں کے درمیان دہائیوں سے جاری خونی جنگ کے خاتمے کے لیے اہم کردار ادا کرنے اور امن کاوشوں کے اعتراف میں نوبل امن انعام کے حقدار ٹھہرے۔اپنی امن کاوشوں کے باعث دنیا کی توجہ کا مرکز بننے والے جواں سال اور پُر عزم ایتھوپیا کے وزیراعظم آبے احمد علی نوبل امن انعام 2019 اپنے نام کرنے میں کامیاب رہے۔ 2018 میں وزارت عظمیٰ کا عہدہ سنبھالنے والے 46 سالہ آبے احمد نے دہائیوں سے جاری پڑوسی ملک اریٹیریا کے ساتھ دشمنی کو ختم کرنے کے لیے سر توڑ کوششیں کیں اور خانہ جنگی سے بدحال ممالک میں امن کی شمعیں روشن کیں۔نوبل پیس پرائز کی چیئر پرسن بریٹ انئس اینڈرسن نے امن انعام کے لیے خوش نصیب انسان کے نام کا اعلان کرتے ہوئے کہا آبے احمد نے ایریٹیریا کے صدر اسياس أفورقی سے ہاتھ ملاتے ہوئے دونوں ممالک کے درمیان خلفشار اور خانہ جنگی کو ختم کرنے کا کامیابی سے بیڑا اُٹھایا اور ملک کو جمہوریت، خوشحالی اور امن کی راہ پر گامزن کیا۔
وزیراعظم آبے احمد کی کاوشوں سے ایتھوپیا اور اریٹیریا نے جولائی 2018 میں برسوں کی دشمنی اور دونوں ممالک کے درمیان 1998 اور 2000 میں شروع ہونے والی سرحدی جنگ کے خاتمے کا اعلان کرتے ہوئے دو طرفہ تعلقات بحال کر لیے تھے۔
واضح رہے کہ نوبل کے امن انعام کی رقم ’90 لاکھ سویڈیشن کورونا ہے جو آبے احمد کو 10 دسمبر کو اوسلو میں پیش کیا جائے گا۔ گزشتہ برس یہ انعام داعش جنگجوؤں کی قید میں زیادتی کا نشانہ بننے کے بعد اپنی زندگی جنسی تشدد کے خلاف وقف کرنے والی یزدی سماجی کارکن نادیہ مراد اور افریقہ میں جنسی استحصال کا شکار ہونے والی خواتین کی صحت کے لیے کام کرنے والے ڈاکٹر ڈینس مک وگی کو مشترکہ طور پر دیا گیا تھا۔

October 11, 2019

شمالی شام میں ترک فوج اورایس ڈی ایف میں گھمسان کی جنگ

انقرہ جدت ویب ڈیسک :شام میں انسانی حقوق کی صورت حال پر نظر رکھنے والے ادارے ‘آبزرویٹری برائے انسانی حقوق کے مطابق شمالی شام میں ترک فوج اور کرد ڈیموکریٹک فورسز کے درمیان گھسان کی جنگ جاری ہے۔ اطلاعات کے مطابق کرد فورسز نے تل ابیض کے علاقے میں ترک فوج کے خلاف جوابی کارروائی کرکے اہم علاقہ ترک فوج سے واپس لے لیا۔انسانی حقوق گروپ کے مطابق ترک فوج کی طرف سے شمالی شام میں کردوں کے ٹھکانوں پر زمینی اور فضائی حملے بدستور جاری ہیں۔آبزرویٹری کے مطابق ترک فوج نے تل ابیض میں الیاسہ نامی ایک قصبہ قبضے میں لیا تھا مگر ایس ڈی ایف نے چند گھنٹے بعد اس پر دوبارہ قبضہ کرلیا۔ادھر راس العین کے مقام پر بھی ترکی اور اس کی حامی ملیشیا کے قبضے سے متعدد اہم مقامات آزاد کرالیے ہیں۔جمعرات کی شام سرحد پر واقع ترک دیہاتوں پر بھی گولہ باری کی گئی جبکہ شام کے آبزرویٹری نے جمعرات کی شام مالکیہ شہر پر بین الاقوامی اتحادی طیاروں کو بھی پرواز کرنے کی تصدیق کی ہے۔شام کے شہر قامشلی میں ترک فوج نے زمینی کارروائی کے دوران توپ خانے سے گولہ باری کی ہے جس کے نتیجے میں شہریوں کو جانی اور مالی نقصان اٹھانا پڑا ہے۔انسانی حقوق کے لیے کام کرنے والے ادارے آبزرویٹری کو معلوم ہوا کہ ترک حامی گروہوں کے ایک گروپ نے تل ابیض کے علاقے الدادات پر قبضے کے بعد بڑے پیمانے پر شہریوں کے گھروں میں لوٹ مار کی ہے۔انقرہ کے وفادار شامی گروہوں نے جمعرات کے روز اعلان کیا کہ ترک افواج نے راس العین اور تل ابیض شہروں کا محاصرہ کرلیا ہے۔شامی حزب اختلاف کے ترجمان میجر یوسف حمود نے کہا ہے کہ راس العین اور تل ابیض اب ان کے محاصرے میں ہے۔

October 11, 2019

تنقید جاری رہی تو مہاجرین کیلئے یورپ کے دروازے کھول دینگے’ اردوان کی دھمکی

استنبول جدت ویب ڈیسک :ترکی کے صدر رجب طیب اردوان کا کہنا ہے کہ ترکی میں شام کی کارروائیوں پر تنقید جاری رہی تو ملک میں بسنے والے 36 لاکھ شامی مہاجرین کیلئے یورپ کے دروازے کھول دینگے۔غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق استنبول میں اپنی جماعت کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے طیب اردوان نے دھمکی دیتے ہوئے کہا کہ شام میں کھلے عام درجنوں دہشتگرد گروہ متحرک ہیں اور دہشت گردوں کا قلع قمع کرنے کے لیے ترک آپریشن کو تنقید کانشانہ بنانا قبول نہیں کریں گے۔یورپی ملک فرانس، صہیونی ملک اسرائیل، امریکا اور دیگر یورپی ممالک کی طرف سے شدید تنقید کا نشانہ بنانے پر ترک صدر نے دھمکی دی کہ اگر ترکی کی کارروائی کو غاصبانہ اقدام قرار دیا گیا تو انقرہ اپنے دروازے کھول کر 36 لاکھ شامی مہاجرین کو یورپ کی طرف بھیج دے گا۔تقریب کے دوران انہوں نے سعودی عرب اور مصر پر بھی تنقید کی اور کہا کہ سعودی عرب آئینہ میں خود کو دیکھے کہ اس نے یمن میں کیا کیا ہے جبکہ مصر دیکھے کہ اس نے ایک منتخب جمہوری صدر محمد مرسی کیساتھ کیا سلوک کیا، مرسی کمرہ عدالت میں انتقال کر گئے اور ان کے خاندان کو آخری رسومات ادا کرنے کی بھی اجازت نہیں دی گئی، تم کس قسم کے قاتل ہو۔ترک صدر نے بتایا کہ شمالی شام میں آپریشن کے دوران اب تک 109 دہشت گرد ہلاک ہوچکے ہیں، 4 سالوں کے دوران ترکی نے 16 ہزار دہشت گردوں کو گرفتار کیا جس میں 7500 دہشت گرد ترک سرزمین اور 8500 دہشت گردوں کو بیرون ملک سے گرفتار کیا گیا۔

October 11, 2019

ایران میں گرفتار روسی صحافی یولیا یوزک کودو ہفتے بعد رہاکردیاگیا

تہران جدت ویب ڈیسک :ایران نے روسی صحافی یولیا یوزک کو رہا کردیا۔ یوزک کو ایرانی حکام نے دو ہفتے پیشتر تہران پہنچنے پر حراست میں لیا۔عرب ٹی وی کے مطابق تہران میں روسی سفارت خانے کی طرف سے جاری ایک بیان میں یولیا یوزک کی رہائی کی تصدیق کی ہے۔سفارتخانے نے مزید کہا کہ روسی وزارت خارجہ اور تہران میں روسی سفارت خانے کی مشترکہ کوششوں کے نتیجے میں ایران نے روسی شہری یولیا یوزک کی رہائی کا فیصلہ کیا۔سفارتخانے کے مطابق یوزک واپس ماسکو پہنچ گئی ہیں۔اس سے قبل تہران میں روسی سفارتخانے نے اعلان کیا تھا کہ پاسداران انقلاب نے ہوائی اڈے پر پہنچنے پر یوزک کو گرفتار کرلیا تھا۔ امریکا سے فارسی میں نشریات پیش کرنے والے ریڈیو کے مطابق یوزک کواسرائیلی انٹیلی جنس کیساتھ تعاون کے الزام میں گرفتار کیا گیا تھا۔یولیا یوزک نے چند سال پہلے تہران میں ایک رپورٹر کی حیثیت سے کام کیا تھا۔روسی صحافی بورس ووچیچکوسکی جو یوزیک کے ساتھی ہیں نے سماجی رابطوں کی ویب سائیٹ فیس بک پرلکھا کہ یوزیک کو ایرانی حکام کی طرف سے باقاعدہ دعوت دے کر بلایا گیا۔ جب وہ تہران پہنچی تو اس کا پاسپورٹ یہ کہہ کر لے لیا کہ واپسی پراسے دے دیا جائے گا مگر شام کو ایرانی پولیس نے ہوٹل پر چھاپہ مار کر یوزیک کو حراست میں لے لیا۔ایک خبر کے مطابق گرفتاری کے بعد یوزیک کی ماسکو میں موجود اس کے اہل خانہ سے ایک منٹ کی بات کرائی گئی تھی اس کے بعد اس سے رابطہ منطقع ہے۔اہل خانہ کا کہنا تھا کہ جب ان کا یوزیک کے ساتھ رابطہ ہوا تووہ جیل کے سیل میں فرش پر بیٹھی ہوئی تھی۔ اس کے بعد اس کے ساتھ کوئی رابطہ نہیں ہوسکا۔

October 10, 2019

بانی ایم کیو ایم سدک پولیس اسٹیشن سے گرفتار

لندن : جدت ویب ڈیسک ::بانی ایم کیو ایم کو نفرت انگیز تقریر اور تشدد پر اکسانے کے الزام میں فرد جرم عائد کرکے گرفتار کرلیا گیا ، بانی ایم کیوایم کو ٹیررازم ایکٹ کے تحت چارج کیا گیا، کراؤن پراسیکیوشن کا کہنا ہے پولیس کے پاس فرد جرم عائد کرنے کیلئے کافی شواہد ہیں۔
تفصیلات کے مطابق بانی ایم کیوایم ضمانت ختم ہونےپر سدک پولیس اسٹیشن میں پیش ہوئے، جہاں ان پر نفرت انگیز تقریر اور تشدد پر اکسانے کے الزام میں فرد جرم عائد کردی گئی، بانی ایم کیوایم پر فرد جرم ٹیررازم ایکٹ کے تحت عائد کی گئی۔کراؤن پراسیکیوشن کا کہنا ہے کہ پولیس کے پاس فرد جرم عائد کرنے کیلئے کافی شواہد ہیں۔
بعد ازاں بانی ایم کیو ایم کو سدک پولیس اسٹیشن سے گرفتار کرلیا گیا ، انھیں آج مجسٹریٹ کے سامنے پیش کیا جائے گا۔
یاد رہے 12 ستمبر کو لندن میں بانی ایم کیو ایم کو سدک پولیس اسٹیشن میں طلب کیا گیا تھا ،جہاں ان کی ضمانت میں دوسری بار توسیع کی گئی اور نفرت انگیز تقاریر سے متعلق پوچھ گچھ کی گئی تھی۔
رپورٹ کے مطابق شرائط کے تحت بانی ایم کیو ایم کسی اجتماع سے خطاب نہیں کرسکتے ہیں، شام سے صبح تک گھر سے باہر نہیں نکل سکتے ہیں، بانی ایم کیو ایم کے برطانیہ سے باہر جانے پر بھی پابندی ہے۔
پولیس کا کہنا تھا کہ بانی ایم کیو ایم کے خلاف تحقیقات جاری رہیں گی، انہیں دوبارہ کسی بھی وقت طلب کیا جاسکتا ہے۔