May 20, 2019

خطرے کی گھنٹی بج گئی ۔دُنیا کے کئی شہر دھنسنے لگے

جدت ویب ڈیسک :: دنیا کے لئے خطرے کی گھنٹی بج گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دنیا بھر میں زیر زمین سے نکالے جانے والے ذخائر اور سطح سمندر میں اضافے نے دنیا کے کئی ساحلی شہروں کا مستقبل داؤ پر لگا دیا ہے اور یہ شہر آہستہ آہستہ دھنسنا شروع ہوگئے ہیں۔
اس کی ایک وجہ بلند و بالا عمارات کی تعمیر بھی ہے جس کی ایک مثال تھائی لینڈ کا دارالحکومت بینکاک ہے۔ بینکاک اپنے اسکائی اسکریپرز کے بوجھ تلے دھنس رہا ہے اور صرف اگلے 15 برس میں یہ شہر زیر آب آسکتا ہے۔اس شہر میں کئی دہائیوں تک زمینی پانی یعنی گراؤنڈ واٹر نکالا گیا جس کے بعد زمین کی نیچے کی سطح کسی حد تک کھوکھلی اور غیر متوازن ہوگئی ہے۔
اور صرف بینکاک ہی اس خطرے کا شکار نہیں۔ دنیا کے 6 مزید بڑے شہر اسی خطرے سے دو چار ہیں۔
فلپائن کا دارالحکومت منیلا بھی اسی خطرے کا شکار ہے جس کی 1 کروڑ 30 لاکھ آبادی پینے اور زراعت کے لیے گراؤنڈ واٹر استعمال کرتی ہے۔ یہاں کی اہم زراعت چاول ہے جس کی فصل کے لیے بے تحاشہ پانی چاہیئے ہوتا ہے۔چین کا شہر شنگھائی دھنسنے کی وجہ سے 10 سال میں 2 ارب ڈالرز کا نقصان اٹھا چکا ہے۔ یہاں پر بھی زمین کے دھنسنے کی وجہ گراؤنڈ واٹر کا نکالا جانا ہے جس کے استعمال کی اب سخت نگرانی کی جارہی ہے۔بنگلہ دیشی دارالحکومت ڈھاکہ سطح سمندر سے نیچے واقع شہر ہے جو مون سون کی تیز بارشیں اور سائیکلون سے مستقل متاثر رہتا ہے۔ ڈھاکہ میں زمین کے نیچے ٹیکٹونک پلیٹوں کی حرکت کی وجہ سے یہ شہر ہر سال مزید 5 ملی میٹر نیچے دھنس رہا ہے۔ویتنام کا ہو چی من شہر دریا کے ڈیلٹا پر قائم ہے اور یہ بھی دھنس رہا ہے۔
امریکی شہر ہیوسٹن میں تیل اور گیس کے ذخائر کی تلاش کے لیے کی جانے والی ڈرلنگ نے اس شہر میں طوفانوں میں اضافہ کردیا ہے جبکہ سطح سمندر میں اضافے سے شہر کے ڈوبنے کا خدشہ بھی بڑھ گیا ہے۔
انڈونیشیا کا دارالحکومت جکارتہ نصف سے زیادہ سطح سمندر سے نیچے ہوچکا ہے جس کے باعث اب ملک کا دارالحکومت تبدیل کرنے کی منصوبہ بندی کی جارہی ہے۔ ہر سال یہ شہر 25 سینٹی میٹر مزید نیچے چلا جاتا ہے اور ماہرین کا اندازہ ہے کہ 95 فیصد شہر سنہ 2050 تک زیر آب آسکتا ہے۔

Related image

Image result for world tallest building may be down in earth

May 16, 2019

.بھاری انعامی رقم ٹھکرا کر ’’حطیم‘‘ میں نوافل ادا کرنے والا خوش نصیب پاکستانی

جدت ویب ڈیسک :مکہ مکرمہ: مسجد الحرام میں صفائی ستھرائی کے کام پر مامور پاکستانی شہری کو بہترین کارکردگی پیش کرنے پر خادم الحرمین شریفین نے نقد انعام دینے کا اعلان کیا تاہم اُس نے رقم لینے سے انکار کرتے ہوئے ’’حطیم‘‘ میں نماز ادا کرنے کی خواہش پوری کرلی۔
عرب میڈیا رپورٹس کے مطابق خانہ کعبہ میں صفائی ستھرائی کا کام انجام دینے والے پاکستانی کو بہترین کارکردگی پیش کرنے پر مہینے کا بہترین ملازم قرار دیتے ہوئے اُسے انتظامیہ کی طرف سے بھاری رقم بطور انعام دینے کا اعلان کیا گیا۔
رپورٹ کے مطابق پاکستانی شہری نے انعامی رقم لینے سے انکار کرتے ہوئے انتظامیہ سے درخواست کی کہ اُسے پیسے دینے کے بجائےحجر اسماعیل ’’حطیم‘‘ میں نماز پڑھنے کی اجازت دی جائے۔
مسجد الحرام کی انتظامیہ نے پاکستانی شہری کی درخواست کو قبول کرتے ہوئے اُسے حطیم کے احاطے میں نماز پڑھنے کی اجازت دی۔ سماجی رابطے کی ویب سائٹ پر نوافل ادائیگی کی تصاویر بھی تیزی سے وائرل ہوگئیں۔عرب میڈیا نے ذرائع سے موصل ہونے والی اطلاعات پر یہ بھی بتایا کہ مہینے میں بہترین کارکردگی دکھانے والے ملازم کو انتظامیہ کی جانب سے تین ہزار سے پانچ ہزار ریال انعام دیا جاتا ہے، مسجد الحرام میں سیکڑوں کی تعداد میں پاکستانی صفائی ستھرائی کا کام کررہے ہیں۔تصاویر میں دیکھا جاسکتا ہے کہ خانہ کعبہ کی انتظامیہ نے حطیم کے دروازے بند کررکھے تھے تاکہ پاکستانی شہری اور مسجد الحرام کی خدمت کرنے والا مزدور سکون و اطمینان کے ساتھ نوافل ادا کرسکے۔

Image may contain: indoor

May 15, 2019

دنیا کے 20 ممالک کی فہرست میں پاکستان ہائیڈرو پاور کی ترقی میں تیسرے درجے پر فائز ‘انٹرنیشنل ہائیڈرو پاور ایسوسی ایشن (آئی ایچ اے)‘ کی رپورٹ

لاہور:جدت ویب ڈیسک :: پاکستان سال 2018 میں پانی سے بجلی بنانے (ہائیڈرو پاور) کی گنجائش کے اعتبار سے دنیا کے 20 ممالک کی فہرست میں 3 درجے پر رہا۔
پاکستان کو یہ درجہ برطانیہ سے تعلق رکھنے والی معروف ادارے ‘انٹرنیشنل ہائیڈرو پاور ایسوسی ایشن (آئی ایچ اے)‘ نے اپنی رپورٹ میں دیا۔
مذکورہ رپورٹ حال ہی میں جاری کی گئی جس کا عنوان تھا ’2019: ہائیڈرو پاور اسٹیٹس رپورٹ-سیکٹر ٹرینڈز اینڈ انسائٹس‘۔
اس ادارے کا قیام یونیسکو کی رہنمائی میں 1995 میں عمل میں آیا تھا جس کا مقصد ہائیڈرو پاور میں اچھے اور نئے طریقہ کار کو فروغ دینا تھا، اور اب آئی ایچ اے چیمپیئن اس شعبے میں مسلسل بہتر اور پائیدار طریقہ کار پر گامزن ہیں۔
آئی ایچ اے کی رپورٹ کے مطابق نئی گنجائش کی تنصیب کے بعد پاکستان 2018 میں 2 ہزار 487 میگا واٹ بجلی نظام میں داخل کرنے میں کامیاب ہوا۔
فہرست میں پاکستان سے پہلے برازیل 3 ہزار 866 میگا واٹ ہائیڈل بجلی اور فہرست میں سب سے اوپر چین 8 ہزار 540 میگا واٹ بجلی کے ساتھ موجود ہے۔
جس کے بعد نئی ہائیڈرو گنجائش کے تحت ترکی ایک ہزار 85 میگا واٹ اور انگولا 668 میگا واٹ ہائیڈل بجلی کے ساتھ چوتھے اور پانچویں درجے پر رہے۔
فہرست میں پڑوسی ملک بھارت اپنے سسٹم میں 535 میگا واٹ بجلی کا اضافہ کرنے پر 8 ویں درجے پر رہا۔
20 ممالک کی اس فہرست میں تاجکستان 605 میگا واٹ بجلی کے ساتھ چھٹے درجے درجے پر رہا جس کے بعد ایکواڈور (556 میگا واٹ)، بھارت (535 میگا واٹ)، ناروے(419 میگا واٹ)، کینیڈا(401 میگا واٹ)، آسٹریا(385 میگا واٹ)، کمبوڈیا(300 میگا واٹ)، لاؤس(254 میگا واٹ)، زمبابوے(150 میگا واٹ)، امریکا(141 میگا واٹ)، ایران(140 میگا واٹ)، کانگو(121 میگا واٹ)، کولمبیا(111 میگا واٹ)، پیرو(111 میگا واٹ) اور چلی (110 میگا واٹ) شامل ہیں۔
جہاں تک پاکستان میں ہائیڈرو پاور کے حالیہ اضافے کا ذکر ہے، ملک میں ایک سال میں پانی سے پیدا ہونے والی مجموعی توانائی میں 36 فیصد اضافہ ہوا۔
قبل ازیں واپڈا 1958 میں آغاز ہونے کے بعد سے 2017 تک صرف 6 ہزار 902 میگا واٹ پانی سے پیدا ہونے والی توانائی حاصل کرسکا تھا جبکہ ملک میں 60 ہزار میگا واٹ تک پانی سے بجلی پیدا کرنے کی بھرپور صلاحیت موجود ہے۔

May 11, 2019

اپنے محسن کو نہ بھولی۔۔ ہر سال ملنے آتی ہے

جدت ویب ڈیسک ::امریکی ریاست جارجیا میں ایک سیکیورٹی افسر ہر سال ایک ننھے سے مہمان کا استقبال کرتا ہے، یہ مہمان کوئی اور نہیں ننھا سا ہمنگ برڈ ہے جو ہر سال اپنے اس محسن سے ملنے آتا ہے۔
دنیا کا سب سے چھوٹا پرندہ ہمنگ برڈ جو نصف انسانی انگلی سے بھی چھوٹا ہے، ہر سال اپنے اس دوست سے ملنے کے لیے آتا ہے۔
مائیکل کارڈنز نامی یہ سیکیورٹی افسر بتاتا ہے کہ 4 سال قبل اپنے گارڈن میں اسے یہ پرندہ اس حالت میں ملا تھا کہ اس کے پر ٹوٹے ہوئے تھا، یہ زخمی تھا اور اڑ نہیں سکتا تھا۔
مائیکل نے اس پرندے کی دیکھ بھال کی اور اس کی غذا کا خیال رکھا، 8 ہفتوں بعد جب پرندے کے پر دوبارہ اگ آئے اور وہ اڑنے کے قابل ہوگیا تو وہ واپس اپنے گھر کی طرف لوٹ گیا۔
اس کے اگلے برس مائیکل نے دیکھا کہ وہ پرندہ پھر اس کی کھڑکی پر موجود تھا۔ یہ پرندہ اس علاقے سے دور جنوب کی طرف رہتا ہے اور مائیکل کے مطابق یہ خاصا لمبا سفر کر کے اس سے ملنے آیا تھا۔
اس کے بعد یہ ہر برس کا معمول بن گیا۔ ہر سال جب پرندے ہجرت کرنا شروع ہوتے ہیں تو یہ پرندہ اپنے دوسرے گھر جانے سے قبل اپنے محسن سے ملنے ضرور آتا ہے جس نے اس کی جان بچائی تھی۔
مائیکل کہتا ہے کہ اپنے اس دوست سے ملاقات کر کے اسے بے حد خوشی ملتی ہے اور اب وہ ہر سال شدت سے اس کا انتظار کرتا ہے۔

Related image

May 8, 2019

طب کے شعبہ میں چار پاکستانی خواتین کا اعزاز

اسلام آباد:جدت ویب ڈیسک :: چار پاکستانی خواتین کا اعزاز………..امریکہ میں ہونے والی سائنسی تحقیقات کے حوالے سے 68 ویں سالانہ انٹیلی جنس کانفرنس میں جیفری پی کیپلن ایوارڈ کی تقریب ہوئی جس میں پاکستان کی چار خواتین ڈاکٹرز کو انعامات اور اعزازات سے نوازا گیا ہے۔جیفری پی کیپلن ایوارڈ کا آغاز2014 میں پہلی بار ہوا تھا۔ مذکورہ ایوارڈ طب کے شعبہ میں بہترین خدمات انجام دینے والے ڈاکٹرز کو دیا جاتا ہے۔
قومی ادارہ صحت کی طرف سے جاری کیے گئے اعلامیے میں بتایا گیا کہ ڈاکٹر منزہ قادری کو سائنٹفیک پوسٹر پریزنٹیشن کی کیٹیگری میں انعام سے نوازا گیا ہے۔ انہوں نے حیدر آباد میں پھیلنے والے مخصوص بخارٹائیفائڈ ایکس ڈی آر کے بارے میں کام کیا تھا۔ پاکستان کی ایک اور ہونہار ڈاکٹر صنم حسین تصاویر کے ذریعے صحت کی سہولیات کو اجاگر کرنے کے مقابلے میں تیسرے نمبر رہیں۔ انہوں نے سندھ میں صحت کی سہولیات پرکام کیا تھا۔
اس کیٹیگری میں پہلا انعام مصر اور دوسرا انعام انڈونیشیا کی ڈاکٹر کو دیا گیا۔قومی ادارہ صحت کے شعبے عوامی صحت لیبارٹریز سے تعلق رکھنے والی زروہ اشرف کو بھی نوجوان سائنسدانوں کی کیٹیگری میں اعزاز سے نوازا گیا ہے۔پاکستان ہی سے تعلق رکھنے والی ایک اور ڈاکٹرانعم کیلئے مخصوص بخارٹائیفائڈ ایکس ڈی آر کے ریسک فیکٹر(خطرے کی وجوہات) پر کام کرنے کے انعام میں انہیں ایوارڈ سے نوازا گیا۔

May 7, 2019

اس وقت پاکستان میں یتیم بچوں کی تعداد 42 لاکھ کے قریب ہے

کوھاٹ جدت ویب ڈیسک:الخدمت فائونڈیشن ملک بھر کے یتیم بچوں کی کفالت کے لےے کوشاں ہے اس وقت پاکستان میں یتیم بچوں کی تعداد 42 لاکھ کے قریب ہے خیبر پختونخوا میں پانچ لاکھ اور ضلع کوھاٹ میں آٹھ ہزار کے قریب یتیم بچے ہیں جن کے لےے پاکستان بھر میں دس آغوش سنٹر کام کر رہے ہیں بابری بانڈہ راولپنڈی روڑ پر اےک عظےم الشان ہسپتال الخدمت نسےم خان مےمورےل ہسپتال کروڑوں روپے کی خطےر رقم سے مکمل ہونے کے بعد گزشتہ ڈےڑھ سال سے بہترےن خدمات سرانجام دے رہا ہے اور اب تک 70 ہزار سے زےادہ لوگ مستفےد ہو چکے ہےںالخدمت فائونڈیشن سات شعبوں مےں کام کررہے ہےں جس مےں صحت،تعلےم،صاف پانی،قدرتی آفات،قرضہ حسنہ،الفلاح سکالر شپ،اور ےتےم بچوں کی پرورشکے لئے آغوش پروجےکٹ شامل ہےںکوہاٹ مےں اب تک 100 سےلاب سے متاثرہ خاندانوں مےں لاکھوں کا ضرورت زندگی کا سامان،45 معذوروں مےں وہےل چےئر،40 افراد مےں بلاسود قرضہ حسنہ،70طلبائ مےں سکالر شپ،اور42ہےنڈ پمپ جس سے ہزاروں لوگ مستفےد ہورہے ہےں ان خیالات کا اظہار الخدمت فائونڈیشن کے ضلعی صدرپےر محمد فہےم نے اےک انٹروےو مےں کےاانھوں نے کہا کہ دوسرے بڑے پروجےکٹ ےتےم بچوں کی اعلی پرورش،رہائش اور تعلےم وتربےت کے لئے 13 کنال اراضی پر آغوش الخدمت کے نام سے ےتےم خانہ کی تعمےر جاری ہے جس کی تخمےنہ 15 کروڑروپے ہے آغوش سنٹر کوھاٹ کو اراضی مفت فراہم کرنے والی معروف سماجی شخصیت پیر سعید اللہ شاہ اشکرےہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ کوھاٹ میں قائم ہونے والے سنٹر میں دو سو بچوں کی کفالت ہو گی جنہیں تعلیم سمیت جملہ سہولیات فراہم کی جائیں گی علاوہ ازیں الخدمت گھروں میں مقیم یتیم بچوں اور بیوہ خواتین کی مالی معاونت کا فریضہ بھی انجام دے رہی ہے مخیر حضرات ان یتیم بچوں کی کفالت میں الخدمت کا ہاتھ بٹائیں الخدمت سنٹرز میں یتیم بچوں کی معیاری تعلیم کا انتظام موجود ہے اور ایک بچے کی تعلیم پر سالانہ 42 ہزار روپے لاگت آتی ہے اس کے علاوہ بچوں اور ان کے مائوں کی ہیلتھ سکریننگ اور علاج بھی الخدمت کے ہسپتالوں میں کرایا جاتا ہے جبکہ یتیم بچوں اور ان کی مائوں کو مختلف قسم کی مہارتیں سکھلانے کا انتظام بھی کیا جاتا ہے کاروبار کے لےے مرد خواتین کو قرضہ دینے کی سکیم بھی رائج کی گئی ہےپےر محمد فہےم نے سماجی شخصیت پیر سعید اللہ شاہ کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ آغوش سنٹر کوھاٹ کے لےے اپنی قیمتی 13 کنال اراضی مفت فراہم کی انہوں نے یتیموں کی کفالت کو صدقہ جاریہ قرار دیتے ہوئے صاحب استطاعت لوگوں پر زور دیا کہ وہ اس میں حصہ لے کر دنیا و آخرت کی کامیابی حاصل کریں –

May 6, 2019

امارات کے سفیر نے پھل فروش خاتون کو گھر تحفے میں دے دیا

اسلام آباد:جدت ویب ڈیسک ::امارات کے سفیر نے پھل فروش خاتون کو گھر تحفتاًدے دیا
اللہ تعالی نے ماہ رجب اور شعبان میں زیادہ ’پریشان‘ رہنے والی یاسمین بی بی کی اس طرح سنی کہ جب انہوں نے اپنے کرائے کے گھر سے بیدخلی کا معاملہ سماجی رابطے کی ویب سائٹ پہ شیئر کیا اوراس ضمن میں مدد چاہی تو وہ اپیل متحدہ عرب امارات کے سفیر کی نگاہ سے گزری جس پر انہوں نے یاسمین بی بی کو وفاقی دارالحکومت اسلام آباد ہی میں گھر خرید کر دینے کا فیصلہ کیا اوررمضان کے آغاز پر انہیں فرنشنڈ گھر تحفتاً دے دیا۔یقیناً! اسلام آباد کی پھل فروش یاسمین بی بی کے دکھ کے دن اگر پوری طرح نہیں بیتے تو بڑی حد تک کم ضرور ہوگئے ہیں کیونکہ اس مہنگائی کے دور میں انہیں کرائے کی ادائیگی نہیں کرنی پڑے گی اور نہ ہی ہر دم مکان سے بیدخلی کا خطرہ لاحق رہے گا۔ اسلام آباد میں رہنے والوں کی ایک بڑی تعداد پوش علاقے ایف -10 میں ریڑھی لگا کر پھل فروخت کرنے والی یاسمین بی بی سے بخوبی واقف ہے۔ خاوند کی وفات کے بعد اپنا اور بچوں کا پیٹ پالنے کے لیے پہلے ملازمت کرنے اور اس کے بعد پھلوں کی ریڑھی لگانے کا ’غیر روایتی فیصلہ‘ کرنے والی یاسمین بی بی کی محنت اور ایمانداری کی قدر نہ صرف ان کے خریدار کرتے ہیں بلکہ اردگرد کے دکاندار بھی معترف ہیں۔
سماجی رابطے کی ویب سائٹ پر یاسمین بی بی نے کہا تھا کہ ان کا چھوٹا سا کرائے کا گھر گولڑہ موڑ کے علاقے میں ہے لیکن چونکہ وہ کرایہ ادا نہیں کرپارہی ہیں اس لیے مالک مکان نے انہیں گھر خالی کرنے کی ہدایت کی ہے۔ انہوں نے اس ضمن میں مدد کی اپیل کی تھی۔پھلوں کی ریڑھی لگانے والی یاسمین بی بی کے دکھ کے دن اس طرح بیتے کہ متحدہ عرب امارات کے پاکستان میں تعینات سفیر حمد عبید ابراہیم نے انہیں جدید سہولیات سے آراستہ گھر تحقتاً دے دیا۔اسلام آباد کی رہائشی یاسمین بی بی ایف-10 میں خاوند کی وفات کے بعد سے پھل فروشی کرکے اپنا اورپانچ بچوں کا پیٹ پالتی ہیں۔ وہ گزشتہ تین سال سے علاقے میں پھل فروخت کرتی ہیں۔یاسمین بی بی کا کہنا ہے کہ ہمت و عزم سے ہر کام آسان ہو جاتا ہے اور میں خود اس کی جیتی جاگتی مثال ہوں۔

Image result for yasmeen bibi fruit seller new home

Related image

May 4, 2019

پاکستان سمیت دنیا میں فائر فائٹرز کا عالمی دن آج منایا جارہا ہے

جدت ویب ڈیسک::پاکستان سمیت دنیا میں فائر فائٹرز کا عالمی دن آج منایا جارہا ہے!  پاکستان سمیت دنیا بھر میں آج ان بہادر جوانوں کا عالمی دن منایا جارہا ہے جو اپنی جان ہتھیلی پہ رکھ کر دوسروں کی جان و مال کو بھڑکتی آگ سے بچانے کےلیے بے خوف و خطر آتش میں کود پڑتے ہیں۔ دنیا انہیں فائر فائٹرز کے نام سے جانتی اور مانتی ہے۔عالمی سطح پر فائر فائٹرز کا دن منانے کا آغاز 1999 میں شروع ہوا تھا۔ اس کی بنیادی وجہ آسٹریلیا میں لگنے والی وہ آگ تھی جس کو بجھانے ک کوشش میں پانچ فائرفائٹرز اپنی جان کی بازی ہار گئے تھے۔آگ چارجنوری 1998 کو آسٹریلیا کے شہر لنٹن کے جنگلات میں لگی تھی۔ پانچ فائر فائٹرز کے انتقال کے بعد پوری دنیا میں یہ احساس شدت کے ساتھ محسوس کیا گیا کہ آگ پہ قابو پانے کی کوشش کرنے والے بہادر ’سپاہیوں‘ کی اہمیت کو دنیا کے سامنے اجاگر کرنے کی اشد ضرورت ہے۔
پوری دنیا میں فائر فائٹرز کو آگ پہ قابو پانے کے حوالے سے نہ صرف خصوصی تربیت فراہم کی جاتی ہے بلکہ ان کی حفاظت کا بھی مکمل خیال رکھا جاتا ہے۔
دنیا کے جدید اور ترقیافتہ ممالک میں وقتاً فوقتاً فائرفائٹرز کے لیے ریفرش کورسز کا بھی انعقاد کیا جاتا ہے اور انہیں جدید حفاظتی طریقہ کارسے آگاہی دلانے کے علاوہ نئی ایجادات سے بھی متعارف کرایا جاتا ہے لیکن جس طرح ہمارے ملک میں دیگر سرکاری و حکومتی ادارے زبوں حالی کا شکار ہیں تو اسی طرح یہاں کے فائر فائٹرز بھی بنیادی ضروریات تک سے محروم دکھائی دیتے ہیں۔
پاکستان کے فائرفائٹرزاس لحاظ سے زیادہ اہمیت کے حامل ہیں کہ جب وہ آگ پر قابو پانے کے لیے جاتے ہیں تو بسا اوقات ان کے پاس نہ تو ضروری سامان ہوتا ہے اور نہ ہی فائر سیفٹی قوانین کو ملحوظ خاطر رکھا جاتا ہے جس کی وجہ سے حقیقتاً وہ اپنی زندگیاں داؤ پر لگاتے نظر آتے ہیں۔پوری دنیا میں فائر فائٹرز کے حوالے سے طے شدہ قواعد و ضوابط کے تحت دو لاکھ والی آبادی کے لیے ایک فائر اسٹیشن، چار فائر ٹینڈرز، 30 ہزار گیلن پانی اوردس لاکھ آبادی کے لیے ایک اسنارکل لازمی ہے مگر پاکستان میں ان کی صریحاً خلاف ورزیاں ہر شہر میں نظر آتی ہیں

May 4, 2019

مارک زکربرگ کا اربوں روپے مالیت کا نیا گھر کیسا ہے؟

جدت ویب ڈیسک  ::فیس بک کے بانی مارک زکربرگ دنیا کے امیر ترین افراد میں سے ایک ہیں بلکہ 5 امیر ترین شخص ہیں۔ بلومبرگ بلین ائیر انڈیکس کے مطابق مارک زکربرگ 75 ارب ڈالرز سے زائد کے مالک ہیں اور 2018 سے 2019 کے دوران ان کی دولت میں 23 ارب ڈالرز کا اضافہ ہوا۔اور اب انہوں نے چپکے سے اربوں روپے مالیت کا گھر خرید لیا تاکہ موسم گرما کی تعطیلات سے زیادہ لطف اندوز ہوسکیں۔ وال اسٹریٹ جرنل کی رپورٹ میں بتایا گیا کہ 34 سالہ ارب پتی نے حال ہی میں کیلیفورنیا کے معروف سیاحتی مقام لیک تاہو (Tahoe) پر 2 جائیدادیں حال ہی میں خریدی ہیں۔ عوام کی نظر سے اس معاملے کو دور رکھنے کے لیے مارک زکربرگ نے یہ دونوں گھر جن کی مجموعی مالیت 5 کروڑ 90 لاکھ ڈالرز (8 ارب 34 کروڑ پاکستانی روپے سے زائد) ہے، کو ایک کمپنی اور ویلتھ منیجر کے ذریعے خریدا۔

ان جائیدادوں کے معاہدے میں یہ شق بھی رکھی گئی کہ ان گھروں کی انٹرنیٹ پر فروخت کے لیے دی گئی تصاویر کو ہٹالیا جائے گا تاہم ان میں سے ایک جائیداد کی پروموشنل ویڈیو تاحال آن لائن موجود تھی

اس گھر کو دی Carousel Estate کا نام دیا گیا ہے جو کہ لیک تاہو کے مغربی کنارے پر موجود ہے اور اسے مارک زکربرگ نے گزشتہ سال 2 کروڑ 20 لاکھ ڈالرز (3 ارب پاکستانی روپے سے زائد) میں خریدا تھا۔

اس پرتعیشن گھر کی تصاویر دیکھیں۔یہ جائیداد اس جھیل کے مغربی کنارے پر ساڑھے 3 ایکڑ رقبے پر پھیلی ہوئی ہے۔

Image result for facebook owner Mark Zuckerberg new home oliver

فوٹو بشکریہ Oliverlux.com
فوٹو بشکریہ Oliverlux.com
فوٹو بشکریہ Oliverlux.com
فوٹو بشکریہ Oliverlux.com
فوٹو بشکریہ Oliverlux.com
فوٹو بشکریہ Oliverlux.com

اس جائیداد میں 200 فٹ کا کنارہ بھی شامل ہے۔

فوٹو بشکریہ Oliverlux.com
فوٹو بشکریہ Oliverlux.com

گھر کے آگے ایک پلیٹ فارم ہے جہاں کشتیوں کو لنگرانداز کیا جاسکتا ہے۔

فوٹو بشکریہ Oliverlux.com
فوٹو بشکریہ Oliverlux.com

جھیل کے قریب آرام کے لیے بھی ایک مقام بنایا گیا ہے۔

فوٹو بشکریہ Oliverlux.com
فوٹو بشکریہ Oliverlux.com

گھر کے مرکزی حصے میں ایک بڑی نشست گاہ ہے۔

فوٹو بشکریہ Oliverlux.com
فوٹو بشکریہ Oliverlux.com
فوٹو بشکریہ Oliverlux.com
فوٹو بشکریہ Oliverlux.com

گھر میں سونے کے لیے 8 کمرے جبکہ 10 باتھ رومز ہیں۔

فوٹو بشکریہ Oliverlux.com
فوٹو بشکریہ Oliverlux.com

سونے کا کمرا اس طرح سجا ہوا ہے۔

فوٹو بشکریہ Oliverlux.com
فوٹو بشکریہ Oliverlux.com

مہمانوں کا کمرا بھی بہت زیادہ آرام دہ ہے۔

فوٹو بشکریہ Oliverlux.com
فوٹو بشکریہ Oliverlux.com

یہاں کا کچن بھی بہت بڑا ہے۔

فوٹو بشکریہ Oliverlux.com
فوٹو بشکریہ Oliverlux.com
فوٹو بشکریہ Oliverlux.com
فوٹو بشکریہ Oliverlux.com

گھر کی دیکھ بھال کرنے والے ملازمین کے لیے بھی ایک الگ گھر بنا ہوا جس میں 3 بیڈرومز ہیں۔

فوٹو بشکریہ Oliverlux.com
فوٹو بشکریہ Oliverlux.com
فوٹو بشکریہ Oliverlux.com
فوٹو بشکریہ Oliverlux.com