August 5, 2019

مجھے گولی لگ گئی ہے…ایک فوجی کی کہانی، جانیے

مجھے گولی لگ گئی ہے…!!!
وہ درد کی شدت کو برداشت کرتے ہوئے بمشکل بولا.
او شِٹ, میں نے میگزین میں موجود چند راؤنڈ فائر کر کے اس کی طرف دیکھا, وہ اپنا بائیاں کاندھا دبائے ہوئے بیٹھا تھا, خوں اس کی انگلیوں کی درزوں سے ابل کر باہر آ رہا تھا.
ہاتھ ہٹاؤ…. میں شولڈر بیگ کندھے سے اتارتے ہوئے کہا.
لالا آپ مورچے پر رہو, ایسا نا ہو وہ اوپر چڑھ آئیں… وہ دانت بھینچ کر کراہتے ہوئے بمشکل بولا,
نہیں چڑھتے… میں نے فرسٹ ایڈ کِٹ بیگ سے نکالتے ہوئے جواب دیا.
میں نے نرمی سے اس کے ہاتھ زخم سے ہٹائے, اور لرز کر رہ گیا, گولی نے ہنسلی کی ہڈی بری طرح توڑ ڈالی تھی, اسے فرسٹ ایڈ کی نہیں آپریشن تھیٹر کی ضرورت تھی.
خیر اے, زخم زیادہ نہیں ہے… میں نے اسے تسلی دیتے ہوئے کہا, اور قینچی کے ساتھ اس کی شرٹ کاٹنے لگا, فائرنگ اچانک تیز ہو گئی تھی, گولیاں ان پتھروں سے ٹکرا رہی تھیں, جو ہم نے مورچے کے لیئے چُن رکھے تھے, زخم میری توقع سے زیاد خراب تھا, خون روکنا بہت ضروری تھا, جو بھل بھل بہہ رہا تھا.
کِٹ میں ہر قسم کا سامان موجود تھا, مگر ایسا کچھ بھی نہیں تھا جو اسے چاہیئے تھا, میں نے اینٹی بائیوٹک لوشن اچھی طرح زخم پر چھڑکا, ڈھیر سی کاٹن جمائی, اور پٹی لپیٹنے لگا.
راځی…. بہت قریب سے آواز آئی,
میں نے خون سے سَنے ہاتھوں کے ساتھ جیکٹ کی پاکٹ سے میگزین نکالا, سرعت کے ساتھ میگزین بدلا, اور جست لگا کر مورچے کی دیوار پر پہنچا, ایک شخص چند قدم کے فاصلے پر موجود تھا, میں نے اسے باڑھ پر رکھ لیا, وہ بری طرح چیختا ہوا نیچے گرا اور ڈھلان پر لڑھکتا ہوا اندھیرے میں غائب ہو گیا.
ایک بار پھر بہت سی گنیں گرجنے لگیں.
میں ناصر کے پاس بیٹھ گیا, پٹی سرخ ہو چکی تھی, یعنی خون کا اخراج اب بھی جاری تھا.
ناصر ایک بیس سالہ نوجوان تھا, بھوری آنکھیں, شہد رنگ بال, گوری رنگت اور دلنشین نین نقش,وہ بلا کا حاضر دماغ اور خوش اخلاق نوجوان تھا, وہ اٹک کے قریب ایک گاؤں کا رہنے والا تھا, اور دو ماہ قبل پاس آؤٹ ہوا تھا, اس کی پہلی پوسٹنگ ہی سوات میں ہوئی تھی, وہ سوات جو ان دِنوں میدانِ جنگ تھا, لالا آپ کو میرے گاؤں کا پتہ ہے؟… وہ بولا
آھو, تم نے بتایا تو تھا… میں نے بیگ سے مزید کاٹن اور پٹی نکالتے ہوئے کہا
لالا تم میرے گاؤں جانا
آھو تمہارے ساتھ ہی چلوں گا… میں نے کہا.
میں شائد نا جا سکوں… اس کی آواز بہت مدہم تھی.
میں نے چونک کر اس کی طرف دیکھا, وہ نڈھال ہو رہا تھا, میں نے خطرے کی پرواہ کیئے بغیر ٹارچ جلا کر اس کا چہرہ دیکھا, وہ پیلا ہو رہا تھا, دھان پان سے لڑکے میں خون تھا ہی کتنا.
فائرنگ تھم گئی تھی, اکا دکا فائر ہو رہے تھے, شائد وہ اپنے ساتھی کی موت کے بعد کوئی نئی حکمتِ عملی بنا رہے تھے.
میں نے جلدی سے انجیکشن نکالا, سرنج میں بھرا اور ناصر کے بازو میں لگا دیا,
لالا وہ بھاگ گئے ہیں؟
آھو وہ حرام کے جنے بھاگ گئے ہیں, تو فکر نا کر ابھی کمک آ جائے گی, فیر ہم بیس کیمپ چلے جائیں گے, تو ٹھیک ہو جائے گا… میں نے اس کے بالوں میں ہاتھ پھیرتے ہوئے کہا.
لالا تم میرے گاؤں ضرور جانا… وہ میری بات شائد سن ہی نہیں رہا تھا.
وہاں میری اماں ہے, اسے نظر نہیں آتا, پر وہ مجھے دور سے آتا دیکھ لیتی ہے, پتہ نہیں کیسے… وہ کمزور سی آواز میں ہنسا.
مجھے آہٹ سنائی دی میں پھُرتی سے مورچے کی دیوار کے پاس پہنچا, کوئی نہیں تھا…. مگر چھٹی حِس کہہ رہی تھی کہ کوئی ہے,
لالا جاؤ گے نا… ناصر نیم غشی کی کیفیت میں بول رہا تھا.
اچانک مجھے ڈھلان پر موجود ایک درخت کے ساتھ سیاہ سی چیز ہلتی نظر آئی, وہ سر پر بندھی بڑی سے سیاہ پگڑی تھی, میں نے پورے سکون کے ساتھ نشانہ لیا اور فائر کر دیا, ایک کریہہ اوہ کی آواز بلند ہوئی اور کوئی چیز دھب سے زمین پر گری, ساتھ ہی ایک بار پھر فائرنگ شروع ہو گئی.
لالا اماں بلکل اکیلی ہوتی ہے, بابا چار سال پہلے فوت ہو گئے, ہماری ساری بکریاں وباء کا شکار ہو کر مر گئیں, مجھے فوجی بننے کا بہت شوق تھا… وہ ہانپنے لگا, وہ مر رہا تھا مگر میں اس خوبصورت جوان کے لیئے کچھ بھی نہیں کر سکتا تھا.
اماں کہتی تھی فوجیوں کی مائیں بھی بہادر ہوتی ہیں…. وہ ایک بار پھر ہمت جمع کر کے بولا
اتنی بہادر کہ ساری زندگی کی کمائی وطن کے نام لگا دیتی ہیں….
بس اب چپ کر جا… میں نے اس کے ماتھے پر ہاتھ رکھتے ہوئے کہا, جو اب سرد ہو رہا تھا.
لالا تم میرے گاؤں جانا, سب سے پہلے جانا
اس سے بھی پہلے کہ جب لوگ مجھے گاؤں لے کر جائیں… تم ان سے پہلے جانا…. سب سے پہلے… اس کے جملے بے ربط ہو رہے تھے.
ناصر…. میں نے اس کے دائیں کاندھے کو جھنجھوڑا.
اللہ کا واسطہ لالا…. میری… میری بات سن لو,,, اس کی آواز میں ایسا کرب تھا کہ میں تڑپ کر رہ گیا.
ہاں ہاں بول جانی, میں سن رہا… بول شہزادے
میں نے اس کا برفاب ماتھا چوما
لالا تم سب سے پہلے میرے گاؤں, میری اماں کے پاس جانا…. اور کچھ نا کرنا, بس میری ماں کے کانوں میں آہستہ سے کہنا کہ تیرا ناصر شھید ھو گیا…. بس
وہ بری طرح ہانپنے لگا, سانس اٹکنے لگی
کیوں شہزادے… ایسا کیوں؟ میں نے اس کا برف ہوتا ہوا ہاتھ اپنے ہاتھوں میں لے کر گرم کرنا چاہا.
لالا جب تم اسے بتاؤ گے نا, تو دیکھ لینا وہ اسی لمحے مر جائے گی, وہ مجھ سے پیار ہی اتنا کرتی ہے,
لالا میں چاہتا وہ مجھے مرا دیکھنے سے پہلے مر جائے, تم…. تم…. تم سب سے…سب سے پہلے گاؤں جانا لالا………….. 😢😢😢
#PakArmy 🇵🇰
.#منقول

July 26, 2019

وزیر اعظم کے دورہ امریکا پر کتنےہزار ڈالر اخراجات آئے؟ جانیے

جدت ویب ڈیسک ::وزیر اعظم نے دورہ امریکا کے دوران کفایت شعاری کی پالیسی اپنا کرپاکستانیوں کے دل جیت لیے ، وزیراعظم عمران خان کے دورہ امریکا پر صرف 60ہزار ڈالراخراجات آئے جبکہ ماضی کے حکمرانوں کے چند گھنٹوں کے اخراجات بھی اس سے زیادہ ہوتے تھے۔عمران خان نےبطوروزیراعظم ایک اور روایت بھی توڑ دی کہ واشنگٹن پہنچنے پر لگژری ہوٹل کی بجائے پاکستانی سفارتخانے میں رہائش کو ترجیح دی جبکہ ماضی کے حکمران امریکا یاترا کے موقع پر مہنگے ترین ہوٹلوں میں قیام کرتے رہے ۔
کپتان نے دورہ امریکا کے دوران کفایت شعاری کی پالیسی اپنا کرپاکستانیوں کے دل جیت لیے، وزیراعظم عمران خان اسپیشل طیارے کی بجائے کمرشل فلائٹ سے امریکہ گئے اور وطن واپس بھی عام طیارے کے ذریعے پہنچے ۔
وزیر اعظم کے ہمراہ وزرا کا لاؤ لشکر بھی نہ گیا حتیٰ کہ خاتون اول بھی وزیر اعظم کے ہمراہ نہ تھیں ، عمران خان نے صرف ساٹھ ہزار ڈالر میں امریکا کا دورہ مکمل کرکے سادگی کی نئی مثال قائم کردی۔
ماضی کے حکمرانوں کے چند گھنٹوں کے اخراجات بھی اس سے زیادہ ہوتے تھے۔نواز شریف نے تو امریکا کے ، دو دوروں پرقوم کے چھ کروڑ اٹھانوے لاکھ اٹھاسی ہزار روپے پھونک ڈالے تھے۔۔

July 16, 2019

پرانے زمانے میں کھانے کو محفوظ رکھنے کے لیے کیا استعمال ہوتا تھا؟

جدت ویب ڈیسک ::کیا آپ جانتے ہیں قدیم ادوار میں جب بجلی ایجاد نہیں ہوئی تھی تو لوگ کھانے پینے کی اشیا کو محفوظ کرنے اور ٹھنڈا کرنے کے لیے کیا شے استعمال کرتے تھے؟
چوتھی صدی قبل مسیح میں مصر کے لوگوں نے، جو دنیا کا عظیم عجوبہ اہرام مصر تعمیر کر کے رہتی دنیا تک اپنی ذہانت و قابلیت کی دھاک بٹھا چکے ہیں، غذا کو محفوظ کرنے کے لیے زیر زمین ’فریج‘ ایجاد کیا تھا جو اس وقت آس پاس کے علاقوں میں بھی بے حد مقبول ہوا تھا۔
یہ فریج جسے ’یخ چل‘ کہا جاتا تھا، نصف زمین کے اندر اور نصف زمین کے باہر ہوتا تھا۔ زمین کے باہر یہ ایک گنبد کی طرح 60 فٹ تک اونچا ہوتا تھا جبکہ زمین کے اندر 6 ہزار 5 سو گز تک وسیع ہوتا تھا۔
یخ چل عمل تبخیر کے ذریعے اپنے اندر موجود اشیا کو سرد رکھتا تھا۔اس زمانے میں ہر مقام پر بے تحاشہ پانی کی زیر زمین گزر گاہیں موجود ہوتی تھیں جو ایک سے دوسری جگہ پانی پہنچاتی تھیں۔ یہ فریج اپنے قریب موجود آبی گزر گاہوں سے پانی اور ٹھنڈک لے کر مختلف غذائی اشیا کو سرد رکھتا اور خراب ہونے سے بچاتا تھا۔اس فریج میں برف بھی جمائی جا سکتی تھی جبکہ اس کے اندر کھڑے ہو کر ایسا ہی محسوس ہوتا جیسے آپ کسی ریفریجریٹر کے اندر کھڑے ہیں۔یخ چل کو ریت اور چکنی مٹی سے بنایا جاتا تھا جبکہ اسے بنانے میں انڈے کی سفیدی اور بکری کے بال بھی استعمال کیے جاتے تھے۔

Image result for Yakhchal-3

Related image

Related image

June 29, 2019

کھیوڑہ میں نمک کی کان، دُنیا میں خوردنی نمک کا دوسرا بڑا ذخیرہ ہے نمک کے بڑے ذخائر موجود

جدت ویب ڈیسک : پاکستان کی سب سےبڑی نمک کی کان کھیوڑہ میں واقع ہے ، نمک کی کان دنیا میں خوردنی نمک کا دوسرا بڑا ذخیرہ ہے جہاں نمک کے 2کروڑ20لاکھ ٹن کے ذخائر موجود ہیں۔دنیا بھر سے لاکھوں سیاح کھیوڑہ کا رخ کرتے ہیں۔سیاحوں کے لئے منی ٹرین سروس موجود ہے ، نمک سے بنائے گئے مختلف ماڈلز جن میں شملہ پہاڑی ، مینار پاکستان اور خوب صورت مسجد قابل ذکر ہیں۔انگوری باغ میں نمک کی دیواروں پر بنے شفاف کرسٹلز پر کئی رنگوں کی روشنی سیاحوں کوسحرزدہ کردیتی ہے۔
کھیوڑہ میں نمک کی دریافت قبل از مسیح میں اس وقت ہوئی جب دریائے جہلم کے کنارے سکندر اعظم اور راجہ پورس کے مابین جنگ لڑی گئی۔سکندر اعظم کی فوج کے گھوڑوں کی پتھروں میں دلچسپی سے یہاں نمک کی موجودگی کا انکشاف ہوا تھا، اس وقت سے یہاں نمک نکالنے کا کام جاری ہے۔ کھیوڑہ کو ارضیاتی عجائب گھر بھی قرار دیا جاتا ہے، کروڑوں سال پرانے پری کیمبرین عہد سے موجودہ دور تک کے ہجری آثار موجود ہیں ۔

Related image

Image result for khewra salt

Related image

Image result for khewra salt

June 28, 2019

سیلفی یا موت ؟دنیا بھر میں سیلفی لینے کے دوران حادثات میں اضافہ

جدت ویب ڈیسک ::دنیا بھر میں سیلفی لینے کے دوران حادثات میں اضافہ ہو گیا۔ رپورٹ کے مطابق بھارت کے بعد سب سے زیادہ روس میں 16 نوجوان سیلفی لیتے ہوئے ہلاک ہوئے۔ تیسرے نمبر پر امریکا اور پاکستان ہیں جہاں سیلفی لینے کے جنون میں چودہ چودہ افراد موت کے منہ میں چلے گئے۔سیلفی لیتے ہوئے ہلاک افراد کی تعداد شارک حملوں میں مارے جانے والوں سے 5 گنا زیادہ ہو گئی۔
بھارتی جریدہ” جرنل آف فیملی میڈیسن اینڈ پرائمری کیئر “کی تحقیق کے مطابق اکتوبر 2011 سے نومبر2017 تک سیلفی لیتے ہوئے 259 افراد ہلاک ہوئے ۔ اسی عرصے میں 50 افراد شارک کے حملوں میں مارے گئے ۔ریسرچ کے مطابق سیلفی لیتے ہوئے ہلاک ہونے والوں کی اوسط عمر تئیس سال ہے، ان میں 72 اعشاریہ 5 فیصد لڑکے اور 27 اعشاریہ 5 فیصد لڑکیاں شامل ہیں ۔
صرف بھارت میں 2011 سے 2017 تک 159 افراد ہلاک ہوئے ۔ کئی واقعات میں کبھی کوئی نوجوان کسی ٹرین کے سامنے سیلفی لیتے ہوئے حادثے کا شکار ہو گیا تو کبھی سیلفی لیتے وقت کشتی کے ڈوب جانے سے ہلاکت ہوئی۔ اتنی بڑی تعداد میں اموات کے بعد حکومت کو کچھ ایسے جگہیں مختص کرنا پڑیں جہاں سیلفی لینے کی اجازت نہیں۔

Related image

June 7, 2019

– پھر کیا ہوا ؟؟جب آپریشن کے دوران مریض کے جسم کے اندر آگ بھڑک اٹھی

جدت ویب ڈیسک ::دُنیا میں بے شمار حادثے ہوتے رہتے ہیں حال ہی میں آسٹریلیا میں ایک شخص زندگی بچانے کے لیے ہونے والا آپریشن اس کی موت کا باعث بنتے بنتے رہ گیا، جس کی وجہ اچانک آگ بھڑک جانا تھا۔
اور یہ آگ کمرے میں نہیں بھڑکی تھی بلکہ مریض کے سینے کے اندر بھڑکنے لگی تھی۔ جی ہاں ایسا عجیب واقعہ آسٹریلیا میں پیش آیا جہاں 60 سالہ شخص دل کی شریانوں کے مسائل کے باعث اوپن ہارٹ سرجری کرانے کے لیے ہستپال میں داخل ہوا۔
ڈاکٹروں کے مطابق ایمرجنسی ہارٹ سرجری کے دوران وہ شخص ہلکا سا ترچھا ہوگیا، اور ایسا ہوتے ہی اس شخص کے کھلے ہوئے سینے (آپریشن کے لیے کیا جانے والا سوراخ) میں آگ بھڑک اٹھی۔
حیران کن طور پر ڈاکٹر ایمرجنسی کے اندر ایک اور ایمرجنسی پر گھبرائے نہیں بلکہ اس پر قابو پانے میں کامیاب ہوگئے اور آپریشن کو کسی پیچیدگی کے بغیر مکمل بھی کیا۔ اس عجیب کیس کی رپورٹ یورپین سوسائٹی آف Anesthesiology کے سالانہ اجلاس میں پیش کی گئی۔
یہ واقعہ 2018 کا تھا اور ڈاکٹروں کے مطابق اس مریض کو شریان کی اندرونی دیوار میں سنگین مسئلے کا سامنا تھا اور زندگی بچانے کے لیے فوری سرجری کی ضرورت تھی، مگر اس شخص کو پھیپھڑوں کے مسائل کا بھی سامنا تھا جیسے ہوا سے بھرے چھوٹے چھوٹے آبلے بنے ہوئے تھے جس نے آپریشن کو غیرمتوقع طور پر پیچیدہ بنادیا۔
مریض کے دل تک پہنچنے کے لیے ڈاکٹروں نے سینے کو درمیان سے کاٹ کر کھول لیا مگر اس عمل کے دوران دائیں جانب کا پھیپھڑا ہڈی میں پھنس گیا اور جب ڈاکٹروں نے احتیاط سے دائیں پھیپھڑے کو ہڈی سے نکالا، تو ایک ایسا ہی آبلے پھوٹ گئے جس سے ہوا کا اخراج ہوا، جس پر مزید anesthesia مریض کے جسم میں داخل کیا گیا جبکہ وینٹی لیٹر سے ہوا کے بہاؤ کو 100 فیصد آکسیجن سے تبدیل کیا گیا۔
آپریشن کے دوران ایک ڈیوائس کو استعمال کیا جاتا ہے جو کہ ٹشوز کو کاٹنے یا جلانے کے لیے استعمال ہوتی ہے، جبکہ مریض کے سینے کے سوراخ کے قریب ایک خشک سرجیکل پیک بھی رکھا گیا تھا، یعنی وہ بنڈل جس میں سرجیکل آلات ہوتے ہیں۔تو جیسے ہی مریض کے اندر ہوا کو تبدیل کیا گیا، ڈیوائس سے ایک اسپارک خشک سرجیکل پیک میں ہوا اور چونکہ مریض کے سینے سے خالص آکسیجن والی ہوا نکل رہی تھی تو آگ بھڑک اٹھی۔خوش قسمتی سے ڈاکٹروں نے فوری طور پر آگ کو بجھا بھی دیا اور مریض کو کوئی نقصان بھی نہیں ہوا، جس کے بعد آپریشن کو کامیابی سے مکمل کیا گیا۔

Image result for australia fire on operation theatre

Image result for australia fire on operation theatre

May 30, 2019

سٹاک ایکسچینج۔۔۔۔۔کیا ھے؟؟

جدت ویب ڈیسک :: سٹاک ایکسچینج۔۔۔۔۔کیا ھے؟؟ایک گاؤں کے پاس ایک جنگل تھا جس میں بندر بہت تھے۔ایک کمپنی نے اپنا کیمپ لگایا اور سروے کیا کہ کتنے بندر ہیں جنگل میں۔ اِس کے بعد گاؤں میں اعلان کر دیا کہ کمپنی 300 روپے کا ایک بندر خریدے گی۔ گاؤں والوں نے سوچا مفت کا بندر ہے اور 300 ملیں گے۔گاؤں والوں نے بندر پکڑنا شروع کر دئیے۔
کمپنی نے 40% بندر خریدے اور اعلان کیا کہ اب بندر 400 میں خریدے گی۔ لوگوں نے اور محنت سے بندر پکڑنے شروع کر دئیے۔
کمپنی نے مزید 40% بندر خریدے۔
اب جنگل مین بندر بہت کم رہ گئے اور پکڑنا مشکل ہو گیا۔
کمپنی نے اعلان کروایا کہ اب بندر 1000 روپے کے حساب سے لے گی اور اپنا ایک ایجنٹ چھوڑ دیا جو لوگوں کو 300-400 میں خریدا ہُوا بندر 700 میں دینے لگا۔
لوگوں نے سوچا بندر پکڑنا اب مشکل ہے اس سے 700 میں لے کے کمپنی کو 1000 میں بیچ دیتے ہیں۔
کچھ دن کے بعد بندر بھی گاؤں والوں کے پاس تھے اور کمپنی اپنا کیمپ اٹھا کے غائب ہو چکی تھی۔
گاوں بھی وہیں ، بندر بھی وہیں اور کمپنی مالا مال..!!
یہ ہے سٹاک ایکسچینج۔۔۔۔۔