October 20, 2020

چاکلیٹ والے پاپ کارن بنانے کا طریقہ وہ بھی صرف پانچ منٹ میں

کراچی ویب ڈیسک :: پاپ کارن بچوں اور بڑوں سب ہی کو پسند ہوتے ہیں اور اگر بات ہو کیریمل پاپ کارن کی تو پاپ کارن کھانے کا مزہ دوبالا ہوجاتا ہے۔
پاپ کارن کو گھر میں بھی باآسانی بنایا جاسکتا ہے جس کے لیے بازار میں کارن کے پیکٹ دستیاب ہیں جنہیں اوون میں تیار کرنا ہوتا ہے۔
اسی طرح پاپ کارن تیار کرنا بھی چنداں مشکل نہیں اور مندرجہ ذیل ترکیب سے آپ باآسانی اسے گھر میں تیار کرسکتے ہیں۔
اجزا
مکئی ایک کپ
براؤن شوگر آدھا کپ
مکھن چوتھائی کپ
تیل آدھا کپ
پسی ہوئی چاکلیٹ حسب ذائقہ
ترکیب
فرائی پان کو چولہے پر رکھیں اور کچھ دیر بعد اس میں مکھن ڈالیں
پھر تھوڑا سا تیل اور براؤن شوگر ڈال دیں
اب اس میں مکئی ڈال کر اچھی طرح سے ملائیں اور پھر اوپر ڈھکنا ڈھک دیں تاکہ مکئی پھوٹ کر باہر نہ آئے
جب مکئی پھول جائے اور پاپ کارن کی صورت میں آجائے تو اس میں آدھی پیالی پسی ہوئی چاکلیٹ ڈال کر ملا لیں۔
یہ لیں پانچ منٹ میں چاکلیٹ پاپ کارن تیار ہوگئے۔
Chunky Caramel Popcorn Recipe | Land O'Lakes

 

October 19, 2020

کروناوائرس میں خطرناک تبدیلیوں کا انکشاف،نئی تحقیق

واشنگٹن: امریکا میں ہونے والی نئی تحقیق میں انکشاف کیا گیا ہے کہ کروناوائرس کے جینیاتی کوڈ میں کئی ہزار خاموش تبدیلیاں رونما ہوئیں جس کے باعث مہلک وائرس دنیا بھر میں خطرناک ثابت ہوا ہے۔
غیرملکی خبررساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق تحقیق کے دوران امریکی سائنس دانوں نے وائرس کے جینیاتی کوڈ میں 30 ہزار کے قریب خاموش تبدیلیوں کو شناخت کیا، اور اس تبدیلی نے ممکنہ طور پر وائرس کو جانوروں(چمگادڑ یا پینگولینز) سے انسانوں میں منتقل ہونے میں مدد فراہم کی۔
تحقیق کے مطابق انہیں تبدیلیوں کی وجہ سے کروناوائرس عالمی وبا بنا اور خطرناک ثابت ہوا ہے۔ ان تبدیلیوں کی بدولت ہی وائرس اپنے ‘آر این اے مالیکیولز’ کے ذریعے انسانی خلیات کو دھوکا دیتا ہے۔
یہ تحقیق ڈیوک نامی امریکی یونیورسٹی میں ہوئی، جس میں کہا گیا کہ وائرس کے جینیاتی کوڈ میں آنے والی تبدیلیوں سے اس کے ‘اسپائیک پروٹینز’ بھی تبدیل ہوئے، جس کی بدولت وائرل اقسام ان تبدیلیوں کے ساتھ زیادہ پھیلنے پھولنے میں کامیاب رہی، کرونا کے جینوم کے دو حصوں میں 30 ہزار کے قریب خاموش تبدیلیاں رونما ہوئیں۔
ان تبدیلیوں کو این ایس پی 4 اور این ایس پی 16 کا نام دیا گیا ہے۔
تحقیق میں شامل محققین کا کہنا تھا کہ یہ تبدیلیاں وائرس کے پروٹین کے بجائے جنیاتی مواد پر اثر انداز ہوتی ہیں، جن سے آر این اے (وائرس کا مالیکیول) بنا جو انسانی خلیات کے اندر مختلف شکلیں بدلنے اور افعال کی صلاحیت رکھتا ہے۔
انہوں نے بتایا کہ یہ تبدیلی وائرس کے پھیلاؤ کا اہم سبب بھی بنی، یہی وجہ ہے کہ موجودہ صورتحال نے 2003 میں سارس کے مقابلے میں کرونا وائرس کو زیادہ مشکل بنا دیا ہے۔
ماہرین کا مزید کہنا تھا کہ دو حصوں پر مشتمل نئی تبدیلیاں(این ایس پی 4 اور این ایس پی 16) ان اولین آر این اے مالیکیولز میں سے ایک ہیں جو اس وقت بنتے ہیں جب وائرس کسی نئے فرد کو متاثر کرتا ہے۔

October 19, 2020

گھنگھریالے بالوں کی حفاظت کرنے کے 5 طریقے ۔۔۔۔۔

ویب ڈیسک ::بال آپ کی شخصیت  کے  لئے بے حد  ضروری ہیں  ،بال چاہے لمبے، سیدھے، چمکدار، سلکی، خشک یا گھنگھریالے ہی کیوں نہ ہوں ان کی حفاظت سب سے زیادہ ضروری ہے کیونکہ جب ہم اپنے بالوں کو صاف ستھرا نہیں رکھتے ان کی حفاظت نہیں کرتے تو وہ روکھے اور بے جان ہو جاتے ہیں۔
کچھ خواتین سمجھتی ہیں کہ اگر ان کے بال گھنگریالے ہیں تو ان کو حفاظت کی ضرورت نہیں ہے یاان کے بال کبھی خراب نہیں ہوسکتے جوکہ سب سے بڑی غلط فہمی ہے۔ گھنگریالے بال بھی کسی نعمت سے کم نہیں ہیں کم از کم آپ کو بال کم ہونے یا نہ ہونے کی شرمندگی کا سامنا تو نہیں کرنا پڑتا ہے۔ آج ہم آپ کو ان گھنگھریالے بالوں کی حفاظت کے خاص طریقے بتائیں گے جو جان کر آپ بھی آزمائیے گا کیونکہ یہ آپ کے بالوں کی خوبصورتی کو بڑھانے میں سب سے زیادہ مفید ہیں۔
٭ رنگ/ ڈائی ہوئے:
اگر آپ کے بال گھنگریالے ہیں اور ان کو ڈائی کرکے خوبصورتی میں اضافہ کرنا چاہتی ہیں تو ضرور کریں۔ لیکن کوشش کریں کہ کوئی معیاری کمپنی کا پراڈکٹ استعمال کریں اس کی وجہ یہ ہے کہ ڈائی کرنا گھنگریالے بالوں کے لئے غیر محفوظ ہے اس لئے کہ گھنگریالے بالوں کی جڑیں بہت مضبوط ہوتی ہیں اور جب ان پر کوئی کیمیکل والے رنگ کو استعمال کیا جاتا ہے تو بال کمزور ہوجاتے ہیں۔
٭ کنڈیشنر:
بالوں کو دھونے کے بعد کنڈیشنر لازمی کریں لیکن بہت زیادہ کنڈیشنر کا استعمال نہ کریں۔ بالوں کو تر رکھیں خشک ہونے سے بچائیں تاکہ ان کو پانی برابر مقدار میں مل سکے۔
٭ کنگھی:
گھنگریالے بالوں میں موٹے شاخے والے کنگھے سے کنگھی کی جائے کیونکہ اگر باریک کنگھی کی جاتی ہے تو وہ بالوں کی شاخوں میں پھنس جاتی ہے جس سے زیادہ بال ٹوٹنے کا خدشہ ہوتا ہے۔
٭ تیل:
گھنگریالے بالوں کو تیل لگا کر کھلا چھوڑ دیں اور بیس منٹ بعد ان کو چوٹی بناکر یا ہیئر بینڈ کی مدد سے باندھیں، کیونکہ فوری باندھنے سے تیل بالوں کو مذید گھنگریالہ کردیتا ہے۔
٭ دھوئیں:
ہفتے میں ایک مرتبہ ان بالوں کو ضرور دھوئیں اور کوشش کریں کہ دھونے کے بعد ان کو کھلا چھوڑ دیں تاکہ پانی کی نمی بالوں کے اندر جزب نہ ہو۔
Sponsor spotlight: Ombu now offers Pintura highlights for curly hair - Lynnwood Today
October 19, 2020

پیاز کا ایسا جادوئی نسخہ کہ آپ جاننے کے بعد استعمال یقینی بنالیں گے

ویب ڈیسک :ـ:  آپ کے کچن میں روزمرہ استعمال ہونے والا پیاز آپ کی اس مشکل کو چند ہی دنوں میں ختم کرنے میں مددگار ثابت ہوسکتا ہے آج کل اکثر خواتین ہی کمزور بالوں سے پریشان دکھائی دیتی ہیں کیونکہ اس سے اکثر خواتین بال ٹوٹنے کے باعث گنج پن کا شکار ہوجاتی ہیں۔ اور مختلف مہنگے تیل اور شیمپو کا استعمال کرتی ہیں جس کے کوئی خاص نتائج نہ ملنے کی صورت میں ان کی یہ پریشانی اور بڑھ جاتی ہے۔ لیکن کیا آپ کو معلوم ہے کہ آپ کے کچن میں روزمرہ استعمال ہونے والا پیاز آپ کی اس مشکل کو چند ہی دنوں میں ختم کرنے میں مددگار ثابت ہوسکتا ہے کیونکہ پیاز کے رس میں اینٹی بیکٹریل کی خصوصیت موجود ہوتی ہے جو کہ ایسے بیکٹریا جو آپ کے بالوں کو خراب کرتے ہیں ان کو ختم کرنے کی صلاحیت رکھتا ہے اور ساتھ ہی پیاز کا رس بالوں کو دوبارہ اگنے میں مدد بھی فراہم کرتا ہے۔ اس نسخے کے لیے بتایا گیا طریقہ استعمال کرنا ہے جو کہ حسب ذیل ہے۔

  •  بال کی لمبائی کے حساب سے پیاز لیں اور اس کا رس نکال لیں۔

  • اب اس میں حسبِ ضرورت ناریل کا تیل شامل کریں۔

  •   اور پھر ہاتھوں کی مدد سے بالوں پر لگائیں۔

  •  پیاز کا رس لگانے کے دو سے تین گھنٹے بعد اس کو سادے پانی سے دھولیں اور شیمپو کا استعمال نہ کریں۔

  •  اس نسخے کے بہترین نتائج کے لیے اس کو ایک ماہ میں تین بار استعمال کریں۔

  • Top Benefits Of Onion For Hair | Femina.in
October 19, 2020

جلد دستیاب ہونے والی کورونا ویکسین کی ممکنہ قیمت کیاہوسکتی ہے ؟

بیجنگ: ویب ڈیسک :: چین میں فوجیوں اور طبی عملے پر تجرباتی طور پر استعمال ہونے والی کورونا ویکسین کی لاگت 60 ڈالر فی کورس آئی ہے جسے مارکیٹ میں کم سے کم منافع کے ساتھ لانے کی کوششیں کی جارہی ہیں۔
عالمی خبر رساں ادارے کے مطابق چین میں تیار کردہ سینوویک بائیوٹیک کی کورونا ویکسین کی آزمائش فوجیوں اور طبی عملے میں آخری مرحلے میں ہے اور جس کے اچھے نتائج سامنے آئے ہیں۔ اس ویکسین کی لاگت 29.75 ڈالر فی ڈوز آئی ہے جب کہ کورس دو ڈوزز یعنی 60 ڈالر تک کا ہوگا جو پاکستانی 9 ہزار 720 روپے بنتے ہیں۔ چینی کمپنی نے فی الحال ویکسین کی عام شہریوں کے لیے دستیابی کی حتمی تاریخ کا اعلان نہیں کیا ہے اور نہ ہی قیمت سامنے آسکی ہے تاہم کمپنی نے کم سے کم منافع کے ساتھ ویکسین کو جلد از جلد مارکیٹ میں لانے کے عزم کا اظہار کیا ہے۔ادھر انڈونیشیا کی سرکاری دوا ساز کمپنی بائیو فارما نے چینی کمپنی سینوویک سے 40 ملین خوراکیں خریدنے کا معاہدہ کیا ہے جس کے تحت قیمت فی خوراک 13.60 ڈالر یعنی کورس 27 ڈالر کے لگ بھگ ہوسکتا ہے جو پاکستانی 4 ہزار 374 روپے تک ہوسکتی ہے۔
دوسری جانب چینی حکام کا کہنا ہے کہ ویکسین سے منافع کمانا کمپنی کا حق ہے تاہم کمپنی کو کم سے کم منافع رکھنے کی اجازت ہوگی جو لاگت کے قریب سے قریب تر ہو۔

Indonesian Team in China for Covid-19 Vaccine Safety Audit

October 19, 2020

کھانوں میں استعمال کے علاوہ دار چینی کے چند طبی فوائد جانیے

ویب ڈیسک :: یہ لکڑی نما  چیز بڑے کام کی ہے مختلف کھانوں میں مصالحے کے طور پر استعمال کی جانے والی دار چینی کے حیرت انگیز فوائد سے ابھی بھی لوگ ناواقف ہیں جس کے باعث دار چینی کو صحیح معنوں میں زیر استعمال نہیں لایا جاسکا ہے۔

دار چینی درخت کی ایک چھال ہے، یہ سب سے زیادہ پاکستان، سری لنکا، بھارت، چین اور افریقہ کے مختلف حصوں میں
پائی جاتی ہے،اسے مختلف کھانوں میں مسالے کے طور پر استعمال کیا جاتا ہے۔

دار چینی کی افادیت: صحت کے لیے نہایت مفید دار چینی کے 100 گرام میں 274 کیلوریز پائی جاتی ہیں جبکہ اس میں 10 ملی گرام سوڈیم، 431 گرام پوٹاشیم، 81 گرام کاربوہائیڈرایٹس، 2.2 گرام شکر اور 4 گرام پروٹین پائی جاتی ہے، اسی طرح دار چینی کے100 گرام میں 5 فیصد وٹامن اے، 6 فیصد وٹامن سی، 100 فیصد کیلشیم، 46 فیصد آئرن، 15 فیصد میگنیشیم اور 10 فیصد وٹامن بی 6 پایا جاتا ہے۔

کھانوں میں استعمال کے علاوہ دار چینی کے چند طبی فوائد درج ذیل ہیں۔

وزن میں کمی

دار چینی کو وزن میں کمی کے خواہشمند افراد کے لیے بہتر مانا جاتا ہے، اس کے استعمال سے پیٹ کی چربی گھُلنے لگتی ہے اور اضافی وزن میں بھی کمی آتی ہے، جس کا طریقہ یہ ہے کہ صبح نہار منہ دار چینی کے ایک ٹکڑے کو گرم پانی میں ڈال کر 15 منٹ کے لیے رکھ دیں اور نیم گرم ہونے پر پی لیں۔

اگرآپ کو گرم مشروبات پینا پسند نہیں تو دار چینی کے ایک انچ کے ٹکڑے کو رات میں کسی کانچ یا اسٹیل کے ایک گلاس پانی میں ڈال کر رکھ دیں اور صبح نہار منہ اس پانی کو پی لیں۔

کینسر کے خلیات بنانے میں معاون

دار چینی پر کی گئی ایک تحقیق کے نتیجے میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ دار چینی کینسر کا بہترین علاج ہے، سال دوہزار دس میں کی گئی ایک تحقیق کے مطابق دار چینی جسم میں تیزی سے کینسر کے خلیات بننے کے عمل کو روکتی ہے۔

شوگر کے مریضوں کے لیے مفید

دار چینی خون میں موجود شوگر کے لیول کو متوازن رکھنے میں مدد دیتی ہے، انسولین کی مثبت افزائش کے سبب دار چینی ذیابیطس کا ایک مؤثر علاج ہے،شوگر کے مریضوں کے استعمال کے لیے دار چینی کوکھانے میں استعمال کیا جاسکتا ہے۔

صحت مند ہڈیاں

دار چینی میں آئرن اور کیلشیم کی بھر پور مقدار پائے جانے کے سبب ہڈیوں کی صحت بہتر ہوتی ہے، اس کے باقاعدہ استعمال سے بڑھاپے میں بھی ہڈیاں کمزور نہیں ہوتیں اور نا ہی ہڈیوں میں درد ہوتا ہے۔

قدرتی اینٹی آکسیڈنٹ جز

دار چینی ایک قدرتی اینٹی آکسیڈنٹ جز ہے، جس کے استعمال سے جسم میں موجود مضر صحت اجزا کا صفایا ہوتا ہے، دار چینی مضر صحت مادوں کے خلاف موثر کردار ادا کرتی ہے جو جسم کے لیے نقصان دہ ثابت ہوتے ہیں،اس میں موجود اینٹی آکسیڈنٹس اجزا مجموعی صحت کے لیے فائدہ مند ثابت ہوتے ہیں۔

بلڈ پریشر کو قابو رکھنے میں معاون

تحقیق کے مطابق اگر روزانہ آدھا چائے کا چمچ دار چینی کا استعمال کر لیا جائے تو اس سے بلڈپریشر متوازن سطح پر رہتا ہے۔

نزلہ زکام اور سردی سے بچاؤ میں موثر

دارچینی کے استعمال سے نزلہ، زکام جیسی وائرل بیماریوں سے بچت رہتی ہے اور یہ سردی کی شدت میں بھی کمی لاتی ہے، دار چینی کے استعمال سے تیز بخار کو بھی کم ہونے میں مدد ملتی ہے

Cinnamon Benefits And Its Side Effects | Lybrate

October 19, 2020

انناس کے رس سے ہر قسم کی کھانسی کا علاج کیا جاسکتا ہے .طبی ماہرین

ویب ڈیسک  ::قدرت کا تحفہ انناس ایک ایسا پھل ہے جو ذائقے دار تو ہے ہی مگر کیا آپ جانتے ہیں کہ اس سے کھانسی کا علاج بھی ممکن ہے۔

انناس ایک ایسا پھل ہے جس کو ذائقے کی وجہ سے ہر دوسرا شخص کھانا پسند کرتا ہے، طبی ماہرین کے مطابق انناس کے رس سے ہر قسم کی کھانسی کا علاج کیا جاسکتا ہے جبکہ یہ ہاضمے کے لیے بھی بہت مفید ہے اور اس سے مدافعتی نظام کو بھی مضبوط بنایا جاسکتا ہے۔

ماہرین کے مطابق انناس میں قدرتی طور پر کھانسی سے لڑنے والے اینٹی آکسیڈینٹس موجود ہیں، جو انسانی صحت کے لیے نہ صرف مفید ہیں بلکہ یہ جادوئی دوا کا کام بھی کرتے ہیں۔

اگر کھانسی کی بات کی جائےتو ویسے یہ موسمی بیماری ہے تاہم اس کا اگر بروقت علاج نہ کیا جائے تو یہ شدید ہوسکتی ہے جس کے بعد صحت کے بڑے مسائل پیدا ہوجاتے ہیں۔

کھانسی کے علاج کے لیے کچھ گھریلو ٹوٹکوں کو کاررآمد سمجھا جاتا ہے مگر اب ماہرین نے بتایا کہ اعتدال کے ساتھ انناس کے جوس کا استعمال آپ کو کھانسی اور سردی میں ہونے والی بیماریوں سے محفوظ رکھ سکتا ہے۔

بنانے کا طریقہ

انناس کے رس میں آپ کو سوائے شہد کے کچھ شامل نہیں کرنا، آدھا کپ جوس لیں اور پھر اس میں شہد شامل کردیں۔

طریقہ استعمال

طبی ماہرین کے مطابق فوری اور بہترین نتائج کے لیے نیم گرم جوس نوش فرمائیں کیونکہ شہد اور انناس دونوں سکون بخش اثر چھوڑیں گے اور کھانسی کو دور کرنے میں مدد فراہم کریں گے۔

مؤثر کھانسی کا شربت

اس کے علاوہ آپ مؤثر کھانسی کا شربت تیار کرنے کے لیے ان اجزاء کا مرکب بھی بنا سکتے ہیں، ایک کپ انناس کا رس، آدھا چمچہ شہد، ایک چُٹکی نمک اور ایک چُٹکی کالی مرچ لیں۔

ان تمام اجزاء کو اچھی طرح سے ملا لیں، اس مرکب کا ایک چوتھائی کپ دن میں تین بار پی لیں تو کھانسی سے افاقہ ہوگا۔ اس کے ساتھ دن بھر پانی کا زیادہ سے زیادہ استعمال بھی ضروری ہے۔

نوٹ: ذیابیطس اور عارضہ قلب سمیت دیگر سنگین بیماریوں میں مبتلا افراد ڈاکٹر سے مشورے کے بعد یہ جوس استعمال کریں۔

Health Benefits of #Pineapple | Pineapple health benefits, Pineapple benefits, Food

October 18, 2020

کورونا کی ممکنہ دوسری لہر، فعال مریضوں کی تعداد میں بتدریج اضافہ

اسلام آباد: جدت ویب ڈیسک :ملک بھر میں کورونا وائرس کے فعال کیسز کی تعداد 9 ہزار 296 ہوگئی جب کہ گزشتہ 24 گھنٹوں میں 16 افراد کورونا کے باعث جان سے ہاتھ دھوبیٹھے۔ نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سینٹرکے تازہ اعداد وشمارکے مطابق گزشتہ 24 گھنٹوں میں کورونا کے567 نئے کیسز رپورٹ ہوئے جس کے بعد ملک بھرمیں مجموعی کیسز کی تعداد 3 لاکھ 23 ہزار 019 ہوگئی۔ این سی او سی کے مطابق فعال کیسز کی تعداد میں گزشتہ 24 گھنٹوں میں اضافہ ہوا ہے جس کے بعد فعال کیسز کی تعداد 9 ہزار 296 ہوگئی جب کہ اب تک کورونا وائرس میں مبتلا 3 لاکھ 7 ہزار 069 مریض صحت یاب ہوچکے ہیں۔ گزشتہ 24 گھنٹوں میں مزید 16 اموات رپورٹ ہوئیں جس کے بعد مجموعی اموات کی تعداد 6 ہزار 654 ہوگئی۔ سندھ میں مریضوں کی تعداد ایک لاکھ 41 ہزار 713 ، پنجاب میں ایک لاکھ ایک ہزار 559، خیبرپختونخوا 38 ہزار 598 ، اسلام آباد میں 17 ہزار 996، بلوچستان میں 15 ہزار 669 ، آزاد کشمیر 3 ہزار 437 اورگلگت بلتستان میں 4 ہزار 047 تعداد ہوگئی۔