March 22, 2019

دنیا بھر کی طرح پاکستان میں بھی آج پانی کا دن منایا جارہا ہے

جدت ویب ڈسیک :۔ پانی کے ممکنہ بحران سے بچنے کیلئے ملک میں مزید آبی ذخائر کی تعمیر ناگزیر ہے۔
اقوام متحدہ کے زیر اہتمام ہر سال22 مارچ کو پانی کا عالمی دِن منایا جاتا ہے۔ اس دن کو منانے کا بنیادی مقصد پانی کی بچت اور اُس کے باکفایت استعمال سے متعلق لوگوں میں آگاہی پیدا کرنا ہے۔
انڈس واٹر کمشنر سید مہر علی شاہ کہتے ہیں پاکستان اور بھارت کے درمیان پانی تقسیم کا جو معاہدہ طے پا چکا ہے ہم اس پر پوری طرح کار بند ہیں۔
پانی کی فی کس دستیابی کے اعتبار سے پاکستان کا شمار آبی قلت کے شکار ممالک میں ہوتا ہے اور اس صورتحال میں بہتری لانے کے لیے اگر بروقت اقدامات نہ اُٹھائے گئے تو پاکستان پانی کے شدید بحران کا شکار ہو سکتا ہے۔گزشتہ چالیس پچاس سال کے دوران ہمارے ملک میں پانی ذخیرہ کرنے کی صلاحیت میں کوئی اضافہ نہیں ہوا۔ 1976ء میں پانی ذخیرہ کرنے کی صلاحیت 16.26 ملین ایکڑ فٹ تھی ، جو کم ہو کر 13.68 ملین ایکڑ فٹ رہ گئی ہے۔پاکستان میں آبی وسائل کو ترقی کے ادارے واپڈا کے مطابق 2025ء تک پانی ذخیرہ کرنے کی صلاحیت میں 2 ملین ایکڑ فٹ ، 2030ء تک مزید 8 ملین ایکڑ فٹ جبکہ طویل مدتی پلان کی تکمیل پر 2050 ء تک ملک میں پانی ذخیرہ کرنے کی صلاحیت میں مزید 28 ملین ایکڑ فٹ اضافہ ہو جائے گا۔

March 20, 2019

ٹماٹر کے اجزاء معدے میں کینسر کے خلیات کی افزائش کو روکتے ہیں۔ تحقیق

جدت ویب ڈسیک ::ٹماٹر کو ہرگز سستا نہ سمجھیں یہ بڑے کام کی چیز ہے، ہمارے کھانوں میں استعمال ہونے والی بے حد عام شے ہے۔ حال ہی میں ماہرین نے انکشاف کیا ہے کہ ٹماٹر معدے کے کینسر سے بچاؤ میں معاون ثابت ہوسکتے ہیں۔معدے کا کینسر جسے گیسٹرک کینسر بھی کہا جاتا ہے دنیا بھر میں کینسر کی نہایت عام قسم ہے۔ یہ بعض اوقات موروثی بھی ہوسکتا ہے مگر زیادہ تر یہ غیر متوازن اور غیر صحت مند غذائی عادات کے باعث پیدا ہوتا ہے۔
طویل عرصے تک تمباکو نوشی کرنے والے اور بہت زیادہ نمک اور مصالحہ دار غذائیں کھانے والے افراد میں معدے کے کینسر کا شکار ہونے کے قوی امکانات ہوتے ہیں۔
حال ہی میں کی جانے والی اس تحقیق کے مطابق ٹماٹر کے اجزا معدے میں کینسر کے خلیات کی افزائش کو روکتے ہیں۔اس سے قبل بھی یونیورسٹی آف الی نوائے کی ایک تحقیق میں بتایا گیا تھا کہ ٹماٹر پروسٹیٹ کینسر سے بچاؤ کے لیے بھی نہایت معاون ثابت ہوتے ہیں۔ماہرین کے مطابق چونکہ ٹماٹر میں موجود اجزا کھانے پکانے کے دوران تیز آنچ کے باعث ختم ہوسکتے ہیں لہٰذا کھانے کے علاوہ انہیں کچا بھی استعمال کرنا چاہیئے جیسے سلاد کی صورت میں۔
ٹماٹر کے اندر موجود عنصر لائیکوپین جسم کے لیے نہایت فائدہ مند ہے۔ اس کے جسم میں پہنچنے کے بعد مثبت کیمیائی تبدیلیاں رونما ہوتی ہیں۔

March 20, 2019

آج دنیا بھر میں دانتوں کی صحت کا عالمی دن منایا جارہا ہے

جدت ویب ڈیسک :: ماہرین کا کہنا ہے کہ صحت مند دانت، صحت مند جسم اور صحت مند زندگی کے لیے ضروری ہیں۔
ماہرین کا کہنا ہے کہ لوگ عموماً دانتوں کی صحت کو نظر انداز کر دیتے ہیں کیونکہ ان کا خیال ہے کہ دانتوں کا علاج مہنگا ہوتا ہے۔
ان کے مطابق کسی پیچیدگی یا تکلیف کی صورت میں تو فوراً ماہر دندان سے رجوع کرنا چاہیئے، تاہم دانتوں کا خیال رکھ کے آپ دانتوں کی صحت اور ان کی عمر میں اضافہ کر سکتے ہیں۔
ماہرین دندان تجویز کرتے ہیں کہ دن میں 2 بار دانتوں پر برش کرنے (عموماً صبح سو کر اٹھنے کے بعد اور رات سونے سے قبل)، ماؤتھ واش استعمال کرنے اور فلاس کرنے سے دانت اور مسوڑھے صاف اور صحت مند رہتے ہیں۔
ان کے مطابق دانتوں کی صحت کے لیے مسواک بھی بہت مفید ہے۔ علاوہ ازیں سال میں ایک مرتبہ ڈینٹسٹ سے اپنے دانتوں اور منہ کا معائنہ ضرور کروانا چاہیئے۔آسٹریلوی طبی ماہرین کے مطابق چقندر کے باقاعدہ استعمال سے دانتوں کے امراض کو کم کیا جا سکتا ہے۔ چقندر کا استعمال خون میں اضافے کے ساتھ ساتھ دانتوں کی حفاظت بھی کرتا ہے۔
ان کے مطابق چقندر میں موجود غیر نامیاتی نائٹریٹ جسم میں داخل ہو کر نائٹرک آکسائیڈ میں تبدیل ہو جاتا ہے اور دانتوں کی حفاظت کرتا ہے۔
علاوہ ازیں مندرجہ ذیل غذاؤں کا استعمال کر کے دانتوں کو موتیوں کی طرح چمکدار بنایا جاسکتا ہے۔دانتوں کو صحت مند رکھنے کے لیے آسان تجویز
سرکہ
سرکہ اپنی تیزابی خصوصیت کے باعث دانتوں پر جمی میل کی تہہ کو توڑ ڈالتا ہے اور داغوں کو ہلکا کردیتا ہے۔ تاہم یہ دانتوں کی حفاظتی تہہ کے لیے نقصان دہ ثابت ہوسکتا ہے لہٰذا اس کا استعمال مہینے میں صرف ایک بار کیا جائے۔
اسے استعمال کرنے کے بعد عام ٹوتھ پیسٹ سے برش کرلینا بھی دانتوں کی حفاظت کر سکتا ہے۔
وائٹننگ ٹوتھ پیسٹ
شاید آپ کو علم نہ ہو مگر مارکیٹ میں وائٹننگ ٹوتھ پیسٹ بھی دستیاب ہیں۔ یہ ٹوتھ پیسٹ دانتوں کے داغ دھبوں کو مٹانے میں نہایت مؤثر ثابت ہوتے ہیں۔
خلال
دانتوں میں باقاعدگی سے خلال کرنا بھی دانتوں کو سفید اور چمکدار رکھتا ہے
اسٹرابیری
دانتوں کو جگمگانے کے لیے سب سے آزمودہ شے اسٹرابیری ہے۔ اس میں شامل اینٹی آکسیڈنٹس دانتوں کی صحت کے لیے فائدہ مند ہیں اور ان کا باقاعدہ استعمال دانتوں کو جگمگا دیتا ہے۔
کھانے کے علاوہ اسٹرابیری کو کچل کر دانتوں پر لگایا بھی جاسکتا ہے مگر یاد رہے اسے براہ راست لگانا دانتوں کی حفاظتی تہہ کو نقصان پہنچا سکتا ہے لہٰذا اسے احتیاط سے استعمال کیا جائے۔
بیکنگ سوڈا
دانتوں کی صفائی کا سب سے آسان طریقہ بیکنگ سوڈا کا استعمال بھی ہے۔ بیکنگ سوڈا کو ٹوتھ پیسٹ کی طرح ٹوتھ برش کی مدد سے دانتوں پر لگالیں واضح فرق محسوس ہوگا۔
لیموں اور نمک
دانتوں کی صفائی کے لیے لیموں اور نمک کا آمیزہ بھی بہترین ہے۔ لیموں کا رس نکال کر اس میں اتنا نمک ملائیں کہ پیسٹ بن جائے۔ اب ٹوتھ برش کی مدد سے اس آمیزے سے دانتوں کی صفائی کریں۔
یہ طریقہ ہفتے میں کم از کم 2 بار استعمال کریں۔ مستقل استعمال سے آپ کے دانت نہایت چمکدار اور سفید ہوجائیں گے۔
ناریل کا تیل
ناریل کے تیل میں دانتوں کو صاف اور بیکٹریا سے محفوظ رکھنے کی صلاحیت موجود ہوتی ہے۔ ناریل کے تیل سے برش کرنے کے علاوہ اسے 5 منٹ تک منہ میں بھر کر بھی رکھا جاسکتا ہے۔

March 19, 2019

کھیرے کا باقاعدہ استعمال جسم پر کیا اثرات مرتب کرتا ہے؟

جدت ویب ڈیسک ::گرمیوں کی آمد آمد ہے ایسے میں کھیرا نہ صرف کھانے کو مزیدار بنا دیتا ہے بلکہ جسم و جاں کو فرحت بھی بخشتا ہے، کھیرے کو عموماً سبزی سمجھا جاتا ہے تاہم کھیرا ایک پھل ہے جو پھول سے بنتا ہے۔
کھیرا اپنے اندر بے شمار فوائد رکھتا ہے، کیا آپ جانتے ہیں روزانہ ایک کھیرا کھانا جسم پر کیا اثرات مرتب کرسکتا ہے؟ آئیں جانتے ہیں۔
وزن میں کمی
کھیرے کا باقاعدہ استعمال آپ کو کمزوری کا شکار کیے بغیر آپ کے وزن میں کمی بھی کرتا ہے۔ وزن کم کرنے کے لیے ایسی غذاؤں کا استعمال ضروری ہے جن میں پانی موجود ہو اور کھیرا اس کا بہترین ذریعہ ہے۔
کولیسٹرول میں کمی
کھیرے میں موجود اینٹی آکسائیڈز جیسے وٹامن سی، بیٹا کیروٹین اور میگنیز خون میں کولیسٹرول اور شوگر کی مقدار کو کم کرتے ہیں۔ کھیرا ہر لحاظ سے ایک بہترین غذا ہے چنانچہ اسے ہر کھانے کے ساتھ کھانا معمول بنا لینا چاہیئے۔
اضافی نمی کی فراہمی
گرمیوں کے موسم میں جب جسم ڈی ہائیڈریشن کا شکار ہونے لگتا ہے ایسے میں کھیرا جسم کو اضافی نمی فراہم کرتا ہے۔ کھیرا 95 فیصد پانی پر مشتمل ہوتا ہے، لہٰذا کھیرے کو کھانے کا مطلب بیک وقت اسے کھانا اور پانی پینا ہے۔
ضروری غذائیت کا حصول
ایک کھیرے میں صرف 15 سے 17 کیلوریز ہوتی ہیں تاہم اس میں جسم کو درکار دیگر تمام ضروری منرلز موجود ہوتے ہیں، ان میں فائبر، پروٹین، وٹامن سی، کے، بی، پوٹاشیئم، آئرن، زنک، اور میگنیشیئم شامل ہے۔ کھیرے کو چھلکے سمیت کھانا زیادہ فائدہ مند ہے۔

March 16, 2019

مارچ کے تیسرے جمعے کو نیند کا عالمی دن منایاگیا

جدت ویب ڈسیک ::پرسکون نیند کی اسی اہمیت کو اجاگر کرنے کے لیے ہر سال کی طرح آج یعنی مارچ کے تیسرے جمعے کو نیند کا عالمی دن منایا جارہا ہے۔
کیا آپ جانتے ہیں ہم اپنی زندگی میں اپنی بہترین صلاحیتوں کا مظاہرہ اسی وقت کر سکتے ہیں جب ہم رات میں پرسکون نیند سوتے ہوں اور نیند کی کمی کا شکار نہ ہوں؟
ماہرین کا کہنا ہے کہ نیند پوری نہ ہونے سے سب سے پہلا اثر آپ کی جسمانی توانائی اور دماغی کارکردگی پر پڑتا ہے۔ نیند کی کمی سے آپ سارا دن تھکن اور سستی کا شکا رہیں گے۔ آپ اپنے کام ٹھیک طرح سے انجام نہیں دے سکیں گے، نہ ہی نئے تخلقیی خیالات سوچ سکیں گے۔یہی نہیں نیند کی کمی آپ کو بدمزاج اور چڑچڑا بھی بنا سکتی ہے۔ طویل عرصے تک نیند کی کمی کا شکار رہنے والے افراد موٹاپے، ڈپریشن، ذیابیطس، ذہنی دباؤ اور امراض قلب کا شکار ہوجاتے ہیں۔
آج ہم آپ کو ان وجوہات سے آگاہ کرنے جارہے ہیں جو آپ کی پرسکون نیند کی راہ میں رکاوٹ بنتے ہیں۔
نیند نہ آنے کی صورت میں کیا کریں؟
اگر آپ کو نیند نہیں آرہی تو اپنے کمرے سے باہر بالکونی یا کسی دوسرے کمرے میں مدھم روشنی جلا کر بیٹھ جائیں۔ نیند لانے کا سب سے بہترین نسخہ کوئی کتاب پڑھنا یا ہلکی موسیقی سننا ہے۔
اس کے لیے روحانی طریقہ کار سے بھی مدد لی جاسکتی ہے۔ عبادت روحانی طور پر پرسکون کرتی ہے اور جسم اور دماغ کو آرام پہنچاتی ہے۔
اگر آپ رات میں بے سکون نیند سوئے ہیں اور اگلی صبح تھکاوٹ اور نیند محسوس کر رہے ہیں تو ٹھنڈے پانی سے غسل کریں، مراقبہ کریں، ہلکی سی چہل قدمی کریں اور ایک بھرپور ناشتہ کریں۔ یہ تمام کام آپ کو پورا دن چاک و چوبند رکھیں گے۔
ٹی وی اور موبائل کا استعمال
آج کے اس ترقی یافتہ دور میں ہر شخص باخبر رہنا پسند رہتا ہے۔ ٹی وی، اسمارٹ فون، کمپیوٹر کے ذریعہ ہم دنیا کے ہر کونے کی خبر جان سکتے ہیں۔ لیکن دراصل یہی چیز ہماری نیند کو سب سے زیادہ متاثر کرتی ہے۔
ٹی وی اور فون کی روشنی دماغ کو متحرک رکھتی ہے اور دماغ دن کے مطابق اپنے تمام افعال سرانجام دیتا ہے۔ اندھیرے میں ہمارے دماغ میں ایک ہارمون میلاٹونین متحرک ہوجاتا ہے جو نیند لانے میں معاون ثابت ہوتا ہے۔ اگر ہم سونے سے ایک گھنٹہ پہلے ٹی وی یا موبائل فون بند کردیں تو ہم پرسکون نیند سو سکتے ہیں۔
رات میں مرغن غذائیں کھانا
رات 8 بجے کے بعد مرغن، مصالحہ دار اور لمبا چوڑا کھانا کھانا بھی نیند نہ آنے کا سبب بنتا ہے۔ ڈاکٹرز کا مشورہ ہے کہ دن کا پہلا کھانا (ناشتہ) بھرپور، دوپہر کا ہلکا اور رات کا برائے نام ہونا چاہیئے۔
رات میں ہلکا پھلکا کھانا جسم کے اندرونی نظام کو بھی آرام دیتا ہے اور آپ کا جسم حالت سکون میں چلا جاتا ہے۔ طبی ماہرین کے مطابق اگر رات میں آپ کو بھوک لگ رہی ہے تو ایک سیب، یا ایک گلاس نیم گرم دودھ بہترین غذا ہے۔
کافی سے گریز
شام کے بعد کافی سے گریز کریں۔ کافی میں موجود کیفین دماغ کو جگا دیتی ہے اور اس کا اثر 12 گھنٹے تک رہتا ہے۔ یہ صرف دماغ کو ہی نہیں جگاتی بلکہ نیند کے دوران بھی خلل پیدا کرتی ہے۔
غلط وقت پر قیلولہ
قیلولہ صحت کے لیے فائدہ مند ہے لیکن یہ مختصر اور صحیح وقت پر ہونا چاہیئے۔ اگر آپ دوپہر ڈھلنے کے بعد سوئیں گے یا دوپہر میں لمبے وقت کے لیے سوگئے تو یہ آپ کی رات کی نیند پر اثر انداز ہوگا۔
شام میں اگر تھکاوٹ محسوس ہو رہی ہے تو تیراکی یا جم جانا نیند بھگانے کا بہترین حل ہے۔

March 13, 2019

ٹانگ میں اسکرو کیوں نہیں لگائے؟ شہری کا ڈاکٹر کے خلاف مقدمہ درج

اسلام آباد: جدت ویب ڈیسک ::مدعی کی درخواست سننے کے بعد سیشن عدالت کے جج عدنا خان نے فریقین کو طلبی نوٹس جاری کردیا ہے۔ وفاقی وزیر کی گاڑی سے زخمی ہونے والے شہری کودو بار آپریشن کی اذیت سے گزرنا پڑا، ڈاکٹر کی غفلت پر عدالت میں مقدمہ دائرکردیا۔
تفصیلات کے مطابق حافظ زوہیب نامی شہری میں اسلام آباد ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن کورٹ میں جج عدنان خان کی عدالت میں ڈاکٹر باسط کے خلاف مالی ، جسمانی اور ذہنی نقصان پہنچانے کا مقدمہ درج کرایا ہے۔
شہری کی جانب سے دائر کردہ درخواست میں موقف اختیار کیا گیا ہے کہ نجی میڈیکل سنٹر میں کام کرنے والے آرتھوپیڈک سرجن ، ڈاکٹر باسط نے ایک حادثے کے سبب اس کی ٹوٹ جانے والی ٹانگ کے آُپریشن میں غفلت برتی۔مقدمے کے مدعی حافظ زوہیب کی ٹانگ مبینہ طور پر وفاقی وزیر صحت عامر کیانی کی گاڑی سے ٹکرا کرٹوٹ گئی تھی۔
درخواست میں کہا گیا ہے کہ ڈاکٹر باسط نے ان کا آپریشن کیا تاہم انہیں آرام نہیں آیا۔ 46 دن تک تکلیف برداشت کرنے کے بعد انہوں نے لاہور کےایک اسپتال سے رجوع کیا جہاں ان کا دوبارہ آپریشن کیا گیا تھا۔ تکلیف کے دنوںمیں مدعی نے ڈاکٹر باسط سےرجوع کیا تاہم انہوں نے مریض کو کہا کہ آپریشن بالکل درست ہوا ہے، وہ آرام پر دھیان دے۔
مدعی کا کہنا ہے کہ لاہور کے اسپتال میں آپریشن کے بعد اسے بتایا گیا کہ پچھلے آپریشن میں راڈ تو ڈالی گئی تھی لیکن اسکرو نہیں لگائے گئے تھےجس کے سبب مریض کو اذیت کا سامنا کرنا پڑا۔
حافظ زوہیب کےمطابق اس نے ڈاکٹر باسط کے خلاف مقدمہ درج کرانے کے لیے ایس ایس پی کوبھی درخواست دی لیکن اس کی شنوائی نہ ہوئی جس کے بعد اس نے عدالت کا دروازہ کھٹکھٹایا ہے۔

March 13, 2019

’’عورت مارچ ‘‘آئین پاکستان کے منافی،عورت مارچ کرنے والی مغربی فنڈڈ آنٹیوں کیخلاف مقدمہ درج کیا جائے،ہیومن رائٹس نیٹ ورک

جدت ویب ڈسیک ::ہیومن رائٹس نیٹ ورک کے خواتین کے عالمی دن کے تناظر میں منعقدہ کانفرنس کے اعلامیہ میں قراردیا ہے کہ مارچ کو خواتین کے عالمی دن پر اسلام آباد ،لاہو ر میں فنڈڈ آنٹیوں کا ہونے والا ’’عورت مارچ ‘‘آئین پاکستان کے منافی ہے۔احتجاج آئین پاکستان کے خلاف تھا،پاکستانی عورت کا چہرہ مسخ کیا گیا ،مشکوک آنٹیوں کاچہرہ بے نقاب کریں گے
انہوں نے مظاہروں میں ذومعنی اور بے ہودہ جملوں کو سہارا لے کر حقوق کے نام پر پاکستانی عورت کا چہرہ مسخ کیاہے ،مغربی فنڈڈ آنٹیوں نے بے حیائی کی ترویج کی اوراس کی دعوت بھی دی جوپاکستان کی تہذیب اورتمدن کی نمائندگی نہیں کرتا کانفرنس میں کہا گیا کہ ہم ان آنٹیوں کا چہرہ بے نقاب کریں گے۔کانفرنس میں مطالبہ کیا گیا کہ عورت مارچ منعقد کرنے والی فنڈڈآنٹیوں کیخلاف فی الفور مقدمہ درج کیا جائے۔