December 10, 2019

نیپرا نے کے الیکٹرک پر 50 ملین روپے جرمانہ عائد کر دیا

کراچی: جدت ویب ڈیسک ::نیشنل الیکٹرک پاور ریگولیٹری اتھارٹی (نیپرا) نے کے الیکٹرک پر 50 ملین روپے جرمانہ عائد کر دیا ہے۔
تفصیلات کے مطابق کراچی میں بارشوں کے دوران کے الیکٹرک کے ناقص انتظام، طویل لوڈ شیڈنگ اور اموات سے متاثرہ خاندانوں کی سن لی گئی، نیپرا نے بجلی کی تقسیم کار کمپنی پر پانچ کروڑ روپے کا جرمانہ عائد کر دیا۔
نیپرا نے کے الیکٹرک سے کہا ہے کہ وہ اپریل 2020 تک تقسیم کا نظام مکمل محفوظ بنائے، کے الیکٹرک کو اپنے نظام کی تیسرے فریق سے بھی تصدیق کرانا ہوگی، جولائی، اگست 2019 میں کراچی میں بارشوں سے متعدد افراد جاں بحق ہوئے، طویل بارشوں کے دوران بجلی کی فراہمی بھی معطل رہی، نیپرا نے کہا کہ اموات کے حقایق اور وجوہ کا تعین کرنے کے لیے تحقیقات کا آغاز کر دیا گیا ہے، یہ معلوم کیا جائے گا کہ نیپرا قوانین کی خلاف ورزی ہوئی ہے یا نہیں۔
نیپرا کے مطابق تحقیقات میں انکشاف ہوا کہ کے ای کے لائسنس کے شرایط اور نیپرا کی خلاف ورزی کے باعث ایل ای ٹی، ایچ ٹی کے کھمبوں کی کمی اور کرنٹ کے باعث 19 ہلاکتیں ہوئیں۔ نیپرا اعلامیے کے مطابق غم زدہ خاندانوں کو نیک نیتی کے ساتھ معقول معاوضہ دینے کے لیے کے الیکٹرک گزارشات پر غور کیا گیا، متاثرہ خاندانوں کے لواحقین کو معقول معاوضے کی تفصیلات بھی نیپرا کے ساتھ شیئر کی جائیں۔
نیپرا نے کے الیکٹرک کو سوگوار خاندانوں کو جلد از جلد معاوضہ فراہم کرنے کا وعدہ پورا کرنے کا بھی حکم دیا ہے، معاوضہ فراہمی کے بعد دستاویزی ثبوت نیپرا کو فراہم کرنے کی ہدایت بھی کی گئی، نیپرا نے کہا کہ کے الیکٹرک اپنی داخلی تفتیش مکمل کرے اور اپنے ملازمین اور انتظامیہ کی کوتاہیوں کا تعین کر کے رپورٹ نیپرا کو پیش کرے

December 3, 2019

پاکستان سٹاک مارکیٹ : 100 انڈیکس دنیا کی بہترین مارکیٹ میں پہلے نمبر پر آگیا

کراچی: جدت ویب ڈیسک ::پاکستان اسٹاک ایکسچینج کی بہترین کارکردگی ، 100 انڈیکس دنیا کی بہترین مارکیٹ میں پہلے نمبر پر آگیا ہے ۔
تفصیلات کے مطابق بلوم برگ نے ایک رپورٹ جاری کی ہے جس کے مطابق پچھلے تین ماہ میں پاکستان اسٹاک کا 100 انڈیکس کارکردگی کی بنیاد پر پہلے نمبر پر آگیا ۔ہنڈرڈ انڈیکس میں گذشتہ تین ماہ میں 36 فیصد کا اضافہ ریکارڈ کیا گیا ہے ۔ یاد رہے کہ گزشتہ روز موڈی انویسٹرس سروس جو کہ تین عالمی کریڈٹ ریٹنگ ایجنسیوں میں سے ایک ہے اس نے بھی پاکستان کا کریڈٹ ریٹنگ نقطہ نظر کو منفی سے مستحکم کردیا ہے ، جس سے ملک میں غیر ملکی کرنسی کی آمد میں مزید بہتری کا اشارہ ملتا ہے۔
گزشتہ روز کاروباری ہفتے کے پہلے روز اسٹاک مارکیٹ کا آغاز مثبت زون میں ہوا جو کاروبار کے اختتام تک مثبت زون میں ہی ٹریڈ کرتا رہا۔ اسٹاک مارکیٹ میں مسلسل تیزی کے باعث سرمایہ داروں نے بھی انتہائی دلچسپی لی۔کے ایس ای 100 انڈیکس میں کاروبار کا آغاز 32 ہزار 287 پوائنٹس پر ہوا اور آغاز میں ہی انڈیکس 363 پوائنٹس کے اضافے کے ساتھ 39 ہزار 550 پوائنٹس پر ٹریڈ کرتا نظر آیا۔ کاروبار کے دوران انڈیکس مسلسل مثبت زون میں ہی ٹریڈ کرتا رہا۔کاروبار کے اختتام سے قبل انڈیکس 851 پوائنٹس کی بلند ترین اضافے کے ساتھ 40 ہزار 139 پوائنٹس پر پہنچ گیا تھا تاہم اسٹاک مارکیٹ میں کاروبار کا اختتام 836 پوائنٹس اضافے کے ساتھ 40 ہزار 124 پوائنٹس پر ہوا۔یاد رہے پاکستان اسٹاک ایکسچینج میں گزشتہ کاروباری ہفتے کے اختتام پر کاروبار حصص میں زبردست تیزی کا رجحان رہا تھا اور جمعہ کو کے ایس ای 500 پوائنٹس کے اضافے سے 39 ہزار پوائنٹس کی بالائی حد بھی عبور کرگیا۔

December 2, 2019

پاکستان اسٹاک ایکسچینج: 100 انڈیکس 9 ماہ بعد 40 ہزار پوائنٹس کی سطح عبور کر گیا

کراچی: جدت ویب ڈیسک ::کاروباری ہفتے کے پہلے روز یعنی پیر کے دن پاکستان اسٹاک ایکسچینج میں تیزی دیکھی گئی، 100 انڈیکس 40 ہزار کی سطح عبور کرگیا۔
تفصیلات کے مطابق گزشتہ ہفتے پاکستان اسٹاک ایکسچینج میں زبردست تیزی کے بعد نئے ہفتے کے پہلے روز یعنی پیر کے دن بھی مارکیٹ میں تیزی کا رجحان دیکھا گیا، دن کے آغاز پر 100 انڈیکس میں 200 سے زائد پوائنٹس کا اضافہ دیکھا گیا۔
ایک گھنٹے بعد 100 انڈیکس میں مزید 250 یعنی کل 450 سے زائد پوائنٹس کا اضافہ ہوا جس کے بعد انڈیکس 39 ہزار 740 پوائنٹس کی سطح عبور کر گیا۔
دن کے اختتام تک 100 انڈیکس میں 836 پوائنٹس کا اضافہ ہوا جس کے بعد 100 انڈیکس 9 ماہ بعد 40 ہزار کی سطح عبور کر کے 40 ہزار 124 پوائنٹس پر پہنچ گیا۔
100 انڈیکس میں 39 ہزار کی سطح گزشتہ ہفتے عبور ہوگئی تھی اور یہ 8 ماہ بعد ہوا تھا۔ گزشتہ ہفتے میں 100 انڈیکس میں 13 سو 61 پوائنٹس کا اضافہ ہوا تھا۔
جمعے کے روز 500 سے زائد پوائنٹس کے اضافے کے بعد 100 انڈیکس 39 ہزار 287 پوائنٹس پر بند ہوا تھا۔
گزشتہ ہفتے سرمایہ کاروں کا اعتماد بھی بحال ہوا، مارکیٹ میں 1.73 ارب شیئرز کے سودے ہوئے۔ مارکیٹ کے ہفتہ وار کاروبار کی مالیت 61 ارب روپے رہی۔
کاروبار میں تیزی کے بعد مارکیٹ کیپٹلائزیشن 264 ارب روپے اضافے سے 7511 ارب روپے رہی۔

November 25, 2019

منی گرام کا 2020 تک پاکستان میں سرمایہ کاری 1ارب ڈالر تک لے جانے کا اعلان

اسلام آباد جدت ویب ڈیسک ::: منی گرام کے چیف ایگزیکٹو آفیسر ولیم الیگزینڈر نے 2020 تک پاکستان میں سرمایہ کاری 1ارب ڈالرتک لےجانے کااعلان کرتے ہوئے کہا پاکستان ایک بڑی مارکیٹ ہے، اپنا کاروبار بڑھانے جارہے ہیں۔تفصیلات کے مطابق منی گرام کے چیف ایگزیکٹو آفیسر ولیم الیگزینڈر نے میڈیا سے گفتگو میں 2020 تک پاکستان میں سرمایہ کاری 1ارب ڈالرتک لےجانے کا فیصلہ کرتے ہوئے کہا اس وقت پاکستان میں 60 کروڑ ڈالر کی سرمایہ کاری کی جارہی ہے ، منی لانڈرنگ کی روک تھام کیلئے پاکستان نے پیشرفت کی ہے، منی لانڈرنگ کی روک تھام کیلئے پاکستان میں25 کروڑ ڈالرخرچ کررہےہیں۔
سی ای او منی گرام کا کہنا تھا کہ رقوم بھیجنے اورموصول کرنیوالےکی شناخت یقینی بنائی جائے گی، پاکستان ایک بڑی مارکیٹ ہے، پاکستان میں اپنا کاروبار بڑھانے جارہے ہیں، قانونی طریقے سےرقوم کی ترسیل یقینی بنائی جائےگی

November 23, 2019

ایران سے ٹماٹر کے مزید 50 کنٹینر کوئٹہ پہنچ گئے

کوئٹہ: جدت ویب ڈیسک ::ایران سے ٹماٹر کے مزید 50 کنٹینر کوئٹہ پہنچ گئے، تاہم شہر میں ٹماٹر کی قیمت میں استحکام نہیں آ سکا۔
تفصیلات کے مطابق میں ملک میں ٹماٹر کے اچانک بحران کے بعد ایران سے ٹماٹر درآمد کیے جا رہے ہیں، جس کا سلسلہ جاری ہے، ایران سے مزید 50 کنٹینر کوئٹہ پہنچ گئے لیکن بتایا جا رہا ہے کہ کوئٹہ شہر میں ٹماٹر کی قیمت میں استحکام نہ آ سکا۔
ہزار گنجی سبزی مارکیٹ میں ٹماٹر فی کلو 90 سے 110 روپے میں فروخت ہو رہا ہے، لیکن شہر میں ٹماٹر کی قیمت بدستور 150 سے 180 روپے فی کلو برقرار ہے۔
یاد رہے کہ جمعرات کو کراچی سبزی منڈی میں ایران سے درآمد ٹماٹر کے مزید 12 کنٹینرز پہنچ گئے تھے، جس کے بعد قیمتوں میں نمایاں کمی ہوئی، سبزی منڈی ہول سیل مارکیٹ میں درجہ اول ٹماٹر 120 روپے کلو ہو گیا تھا، درجہ دوم 110 روپے کمی کے بعد 90 روپے کلو ہوا تھا، جب کہ ریٹیل مارکیٹ میں ٹماٹر 200 روپے کلو کی سطح پر آیا۔
واضح رہے کہ ایران سے مزید ٹماٹر درآمد کرنے کے سودے بھی طے پا گئے تھے، اس سلسلے میں مزید امپورٹ پرمٹ جاری کیے جا چکے ہیں، درآمد کنندگان نے 15 ہزار 500 ٹن ٹماٹر درآمد کے اجازت نامے حاصل کیے۔دو دن قبل فروٹ اینڈ ویجی ٹیبل ایسوسی ایشن کا کہنا تھا کہ ایران سے 1276 ٹن ٹماٹر پہنچ چکا ہے۔

November 22, 2019

اسٹیٹ بینک نے مانیٹری پالیسی جاری کردی، شرح سود 13.25 فیصد برقرار

جدت ویب ڈیسک ::اسٹیٹ بینک آف پاکستان نے آئندہ دو ماہ کیلئے مالیاتی پالیسی کا اعلان کردیا جس کے تحت پالیسی ریٹ کو 13.25 فیصد پر برقرار رکھا گیا ہے۔ مرکزی بینک کی جانب سے جاری اعلامیے کے مطابق مہنگائی کی رفتار ابھی بھی بلند سطح پر ہے،کھانے پینے کی اشیاء کی قیمتوں میں اضافہ مہنگائی کی اہم وجہ ہے۔
اسٹیٹ بینک کا کہنا ہے کہ کرنٹ اکاؤنٹ خسارے میں کمی آنا شروع ہوئی ہے، مالی سال20-2019 میں مہنگائی کی شرح 11 سے 12 فیصد تک رہے گی۔
مرکزی بینک کا کہنا ہے کہ گذشتہ مانیٹری پالیسی اجلاس میں ہونے والے فیصلوں کے اچھے اثرات آرہے ہیں، کرنٹ اکاؤنٹ 4 سال بعد اکتوبر 2019 میں سرپلس رہا، تجارتی خسارے میں کمی بھی بہت اہم ہے۔اسٹیٹ بینک کا کہنا ہے کہ آنے والے مہینوں میں مہنگائی کی شرح میں کمی ہوتی دیکھ رہے ہیں، کھانے پینے کی اشیاء کی قیمتوں میں اضافے کے باوجود مہنگائی کی توقعات مستحکم رہیں گی۔
اسٹیٹ بینک کے مطابق مالیاتی دُوراندیشی کے سبب مارکیٹ کے احساسات بتدریج بہتر ہورہے ہیں، بیرونی کھاتوں پر دباؤ کم ہورہا ہے ، پہلے چار ماہ میں کرنٹ اکاؤنٹ خسارہ 73.5 فیصد کم ہو کر 1.5 ارب ڈالر رہ گیا، برآمدات میں معقول نمو ہو رہی ہے۔ اسٹیٹ بینک کا کہنا ہے کہ رواں سال جون کے مقابلے روپے کی قدر 5.6 فیصد بہتر ہوئی ہے، رواں مالی سال زرمبادلہ کے ذخائر میں ایک ارب 16 کروڑ ڈالر اضافہ ہوا۔

November 18, 2019

کراچی: آٹے کی قیمت میں ایک بار پھر اضافہ، شہری پریشان

کراچی: جدت ویب ڈیسک ::شہر قائد میں آٹے کی قیمت میں ایک بار پھر اضافہ ہوگیا، فائن آٹے کی قیمت 55 روپے فی کلو اور چکی کے آٹے کی قیمت 62 روپے فی کلو تک پہنچ گئی۔
تفصیلات کے مطابق محکمہ خوراک سندھ اور فلور ملز کے درمیان گندم اٹھانے کا معاملہ حل نہ ہوا لیکن آٹا مہنگا کر دیا گیا۔ کراچی میں فائن آٹے کی قیمت 55 روپے فی کلو اور چکی کے آٹے کی قیمت 62 روپے فی کلو تک پہنچ گئی۔ کمشنرکراچی کی جاری فہرست میں فائن آٹے کی ہول سیل میں قیمت 42 اور ریٹیل میں 44 روپے فی کلو ہے۔
محکمہ خوراک سندھ نے فلور ملز کو پاسکو سے براہ راست گندم اٹھانے کی ہدایت کر دی۔ فلور ملز مالکان نے پاسکو سے براہ راست گندم اٹھانے کی صورت میں کرائے کی مد میں آٹے کی قیمتوں میں اضافے کا مطالبہ کر دیا۔خیال رہے کہ محکمہ خوراک نے 28 اکتوبر کو سندھ فلور ملز اور آٹا چکیوں کے لیے سرکاری گندم جاری کرنے کا نوٹیفیکیشن جاری کیا تھا۔ سندھ حکومت نے سندھ کے 6 اضلا ع کو 41000 ہزار ٹن گندم اکتوبر کے کوٹے میں جاری کی تھی۔