October 10, 2017

آئی ایس آئی کےچودہ رکنی وفدکا پاکستان سٹیل کاخصوصی دورہ

کراچی(جدت ویب ڈیسک 🙂 انٹر سروسز انٹیلی جنس کا 14رکنی وفد (بدھ کو) پاکستان سٹیل مل کا دورہ کرے گا۔ وفد کے ارکان کو ادارے کے مختلف تکنیکی پہلوؤں کے علاوہ فولاد سازی کے سب سے بڑے ادارے کی سیکیورٹی سے متعلق امور پر بریفنگ دی جائے گی۔ سٹیل انڈسٹری کے ذرائع حساس ادارے کے دورے کو پاکستان سٹیل کی بھرپور بحالی کے حوالے سے اہم پیش رفت قرار دے رہے ہیں۔ ایک قیاس آرائی یہ بھی ہے کہ پاکستان سٹیل کے معاملات فوج کے ماتحت کسی ادارے کو سونپ دیئے جائیں۔ اس حوالے سے فوجی فاؤنڈیشن اور ایف ڈبلیو او کا نام لیا جا رہا ہے۔میڈیا کو دستیاب دستاویز کے مطابق آئی ایس آئی کا وفد بدھ کی صبح پاکستان سٹیل پہنچے گا جہاں اس کا خیر مقدم قائم مقام پرنسپل ایگزیکٹو افسر اور ادارے کے دیگر سینئر افسران کریں گے۔ قائم مقام پرنسپل ایگزیکٹو افسر، قائم مقام چیف فنانشل افسر، کارپوریٹ سیکریٹری اورانچارج پی پی اینڈ سی وفد کو آپریشنز بلڈنگ کے کانفرنس ہال میں ادارے کے تکنیکی معاملات سے متعلق بریفنگ دی جائے گی۔ وفد کو ادارے کی پیداواری استعداد، ملازمین کی تعداد، پلانٹ کی صورتحال اور دیگر تکنیکی پہلوؤں سے آگاہ کیا جائے گا۔ منیجر سیکیورٹی وفد کو سیکیورٹی سے متعلق امور پر بریفنگ دیں گے۔وفد کیلئے پلانٹ کے دورے کا بھی اہتمام کیا گیا ہے۔ ظہرانے کے بعد وفد ادارے سے رخصت ہو جائے گا۔ پاکستان سٹیل میں جون 2015 سے پیداواری عمل مکمل طور پر بند ہے۔ ادارے کے ملازمین چار ماہ کی تنخواہوں اور ریٹائرڈ ملازمین اپنے واجبات سے محروم ہیں۔ اس حوالے سے ادارہ اربوں روپے کے قرضوں تلے دبا ہوا ہے۔ اس وقت ادارے کا کوئی سربراہ نہیں۔ تمام معاملات ایڈ ہاک بنیاد پر چلائے جارہے ہیں وفد کو ادارے کے مختلف تکنیکی پہلوؤں کے علاوہ فولاد سازی کے سب سے بڑے ادارے کی سیکیورٹی سے متعلق امور پر بریفنگ دی جائے گی

October 9, 2017

تھانے سے تاوان کیلئے اٹھایا گیا شہری بازیاب‘4اہلکار گرفتار

کراچی جدت ویب ڈیسک جوڈیشل مجسٹریٹ نے فیروز آباد تھانے پر چھاپہ مار کر تاوان کے لیے اٹھائے گئے ایک شہری کو بازیاب کرالیا جب کہ واقعے میں ملوث 4 اہلکاروں کو فوری طور پر حراست میں لے لیا گیا ہے۔ کراچی میں پولیس گردی عروج پر ہے اور قانون کے محافظ ہی عوام کو اغوا کرکے تاوان وصول کرنے میں مصروف ہیں۔ سیشن جج کے حکم پر جوڈیشل مجسٹریٹ کراچی شرقی نے فیروز آباد پولیس اسٹیشن کے باورچی خانے سے کسی قانونی کارروائی کے بغیر حراست میں لیے گئے ایک شخص کو بازیاب کرالیا۔مغوی اسد کے اہل خانہ کے مطابق 4 اکتوبر کو کراچی کے علاقے ڈیفنس ویو فیز ون میں پولیس نے اسد کو گھر سے اٹھایا تھا لیکن نا تو پولیس نے کوئی مقدمہ درج کیا تھا اور نا ہی گرفتاری ظاہر کی تھی۔ اغوا کاروں نے اسد کو چھوڑنے کے لیے 20 لاکھ روپے کا مطالبہ کیا تھا اور اس کے لیے 3 بار فون کیا لیکن جگہ کا تعین نہیں کیا لیکن پھر مغوی کی بیوی کو تاوان کی رقم لے کر فیروز آباد پولیس اسٹیشن پہنچنے کے لیے کہا گیا۔اسد کے گھر والوں نے عدالت کا دروازہ کھٹکھٹایا جس پر جوڈیشل میجسٹریٹ شرقی نے تھانے پر چھاپا مار کر اسد کو بایزاب کرالیا، میجسٹریٹ کے حکم پر 4 اہلکاروں کو فوری طور پر حراست میں لے لیا گیا جب کہ 4 فرار ہونے میں کامیاب ہوگئے۔

October 9, 2017

کراچی میں گرمی ‘ہوابند‘پارہ 40ڈگری ‘لوڈشیڈنگ نے چیخیں نکلوادیں

کراچی جدت ویب ڈیسک شہر قائد میں گرمی کی شدید لہر جاری ہے ،پیر کو درجہ حرارت 40 ڈگری تک جا پہنچا۔تفصیلات کے مطابق شہر قائد گزشتہ کئی روز سے شدید گرمی کی لپیٹ میں ہے ، سمندر کی جانب سے چلنے والی ہوائیں بند ہونے کی وجہ سے گرمی کی شدت میں مزید اضافہ ہوگیا ہے۔محکمہ موسمیات کے مطابق پیر کو بھی کراچی کا درجہ حرارت40 ڈگری تک رہا جس کی وجہ سے ہیٹ اسٹروک کا خطرہ بڑھ گیا ہے، جب کہ آئندہ 3 روز میں کراچی کے رجہ حرارت میں مزید اضافہ ہوسکتا ہے۔دوسری جانب شہر میں بڑھتی ہوئی گرمی کے باعث کے الیکٹرک نے لوڈشیڈنگ کے دورانیے میں اضافہ کردیا ہے جب کہ متعدد علاقوں میں فنی خرابی اور کیبل فالٹ کی وجہ سے بھی غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ بدستور جاری ہے جس کی وجہ سے عوام کو شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑرہا ہے۔گزشتہ روز بھی شدید گرمی کے باعث 70 سے زائد فیڈرز ٹرپ کرگئے تھے جس کے باعث کورنگی، لانڈھی اور شاہ فیصل سمیت کئی علاقوں کو بجلی کی فراہمی معطل ہوگئی تھی۔

October 9, 2017

نوازشریف کی احتساب عدالت میں حاضری سے استثنیٰ کی درخواست پر فیصلہ محفو ظ

اسلام آباد( جدت ویب ڈیسک )سابق وزیراعظم نواز شریف کی جانب سے احتساب عدالت میں حاضری سے استثنیٰ کی درخواست دائر کی گئی ہے جس پر عدالت نے فیصلہ محفوظ کرلیا ہے۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق نواز شریف کی جانب سے احتساب عدالت میں 15 دن تک حاضری سے استثنیٰ کی درخواست دائر کی گئی، جج محمد بشیر نے استفسار کیا کہ یہ استثنیٰ کیا آج کے دن کے لیے مانگا گیاہے جس پر خواجہ حارث کا کہنا تھا کہ جی، یہ آج کے دن کے لیے ہے، عدالت نے استفسار کیا کہ استثنیٰ کی ایک درخواست پہلے بھی پڑی ہوئی ہے جس پر خواجہ حارث نے کہا کہ نواز شریف کی اہلیہ بیمار ہیں اور سیکورٹی کے مسائل بھی ہیں۔نیب پراسیکیوٹر نے سماعت کے دوران کہا کہ جب تک ٹرائل شروع نہیں ہوجاتا استثنیٰ کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا، 2 ریفرنسوں میں ایک بھی ملزم عدالت کے سامنے پیش نہیں ہوا۔ عدالت نے فریقین کے دلائل سننے کے بعد سابق وزیراعظم نواز شریف کی حاضری سے متعلق استثنیٰ کی درخواست پر فیصلہ محفوظ کرلیا نواز شریف کی اہلیہ بیمار ہیں اور سیکورٹی کے مسائل بھی ہیں جب تک ٹرائل شروع نہیں ہوجاتا استثنیٰ کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا،نیب پراسیکیوٹرکی عدالت سے التجاء

 

October 9, 2017

کیپٹن صفدرکی رات کوگرفتاری اور پچاس ہزار روپے کے عوض رہائی ،بیرون ملک جانے پر پابندی عائد

جدت ویب ڈیسک :کیپٹن صفدرکی رات کوگرفتاری اور پچاس ہزار روپے کے عوض رہائی ،بیرون ملک جانے پر پابندی عائد ,صفدر کی گرفتاری میں رکاوٹ ڈالنے پر وزرا اور ن لیگی کارکنوں کے خلاف قانونی کارروائی کا فیصلہ کیا ہے۔نیب نے گزشتہ رات صفدر کی گرفتاری میں رکاوٹ ڈالنے پر وزرا اور لیگی کارکنوں کے خلاف قانونی کارروائی کا فیصلہ کیا ہے۔نجی ٹی وی کے مطابق اسلام آباد ایئرپورٹ پر کیپٹن صفدر کی گرفتاری میں رکاوٹ ڈالنے والوں کے خلاف کارروائی ہوگی اور نیب گاڑیوں کو نقصان پہنچانے پر ایف آئی آر درج کرائے گا۔واضح رہے کہ رات گئے کیپٹن ریٹائرڈ صفدر اہلیہ مریم نواز کے ہمراہ لندن سے براستہ دوحہ اسلام آباد ایئرپورٹ پہنچے جہاں مسلم لیگ کے کارکنوں کی جانب سے کیپٹن صفدر کی گرفتاری کے خلاف مزاحمت کی گئی اور کارکن نیب کی گاڑی کے آگے لیٹ گئے جب کہ گاڑی پر مکے بھی مارے۔سابق وزیراعظم نواز شریف کے ملزم داماد ملزم کیپٹن ریٹائرڈ صفدر نے احتساب عدالت پہنچے تو انہوں نے میڈیاکو بتایا کہ رات اچھی گزری ہے وہ پاک فوج کے ٹرینڈسپاہی ہیں کوئی دشواری پیش نہیں آئی ۔واضح رہے کہ رات کو ائر پورٹ سے گر فتار کرلیا تھا 50 ہزار روپے کے مچلکے جمع کرانے پر رہائی ہوئی تھی سوال کے جواب میں بتایا کہ انہیں کسی قسم کی پریشانی کا سامنا نہیں کرنا پڑا ہے ،عدالت میں اپنے آپ کو بے گناہ ثابت کرنے کے لیے پیش ہوا ہوں اور انشاء اللہ سرخرو ہوں گا،کیپٹن ریٹائرڈصفدر نے مزید کہا کہ انہوں نے کوئی طیارہ ہائی جیک نہیں کیا اورنہ ہی کرپشن کی ہے اورنہ ہی دباؤ میں ہوں،ہاں اگر ایسے جرائم کا ارتکا ب کیا ہوتا تو ڈرتا ،جب یہ سب کچھ کیا ہی نہیں تو پھر ڈرنے والی کون سی بات ہے ۔ جج محمد بشیر نے کہا ”آرڈر میں لکھ دیتے ہیں کہ جب بھی کوئی ملزم ملک سے باہر جائے گا تو وہ عدالت کو پیشگی بتائے گا“۔ عدالت نے کیپٹن صفدر کو نیب ریفرنس کی کاپیاں فراہم کرتے ہوئے انہیں آئندہ عدالت کی اجازت کے بغیر بیرون ملک جانے سے روک دیا۔ کیپٹن (ر)محمد صفدر کو پیشی کیلئے احتساب عدالت پہنچا دیا گیا، انہیں بکتر بندگاڑی میں احتساب عدالت لایا گیا ،میڈیا رپورٹس کے مطابق کیپٹن (ر)محمد صفدر احتساب عدالت میں پیش ہونے کیلئے رات گئے اسلام آبادپہنچے تھے نیب کی ٹیم نے انہیں ایئر پورٹ سے ہی حراست میں لے لیا تھا، انہیں احتساب عدالت لانے سے قبل پمز ہسپتال لے جایا گیا جہاں ان کا طبی معائنہ کیا گی

October 9, 2017

کوئٹہ پھر لہو لہو، مسلح افراد کی فائرنگ سے ہزارہ برادری کےکئی فراد جاں بحق

کوئٹہ جدت ویب ڈیسک :صوبہ بلوچستان کے دارالحکومت کوئٹہ میں کاسی روڈ پر نامعلوم مسلح افراد کی فائرنگ سے ہزارہ برادری سے تعلق رکھنے والے 5 افراد جاں بحق اور ایک زخمی ہوگیا۔پولیس کے مطابق واقعہ شہر کے مصروف علاقے کاسی روڈ پر پیش آیا جہاں نامعلوم موٹرسائیکل سوار مسلح ملزمان نے وین کو نشانہ بنایا۔ وین میں سوار افراد ہزار گنجی سبزی منڈی جارہے تھے ۔پولیس کا کہنا ہے کہ جیسے ہی وین کاسی روڈ پر پہنچی تو پہلے سے گھات لگائے ملزمان نے بس پر اندھادھند فائرنگ کردی جس کے نتیجے میں 5افراد موقع پر ہی جاں بحق ہوگئے۔ مرنے والوں میں 3 ہزارہ برادری کے افراد بھی شامل ہیں ۔ واقعہ کی اطلاع ملتے ہی پولیس اور ریسکیو ٹیمیں جائے وقوعہ پرپہنچ گئیں اور لاشوں کو ایمبولینسوں کے ذریعیاسپتال منتقل کردیا جہاں مرنے والوں کی شناخت حاجی محمد ،صالح محمد ،خادم حسین ،سید سرور اورمحمد علی کے نام سے ہوئی ہے۔دوسری جانب پولیس نے جائے وقوعہ سے ابتدائی شواہد اکٹھے کرلیے ہیں جبکہ جائے وقوعہ سے گولیوں کے خول بھی ملے ہیں ۔پولیس نے عینی شاہدین کے بیانات قلمبند کرتے ہوئے ملزمان کی تلاش کے لیے اطراف کے علاقے میں ناکہ بندی کرلی ہے۔خیال رہے کہ صوبہ بلوچستان میں مختلف کالعدم تنظیمیں، سیکیورٹی فورسز اور پولیس اہلکاروں پر حملوں میں ملوث رہی ہیں جبکہ گذشتہ ایک دہائی سے صوبے میں فرقہ وارانہ قتل و غارت میں اضافہ ہوا ہے، واضح رہے کہ گذشتہ 15 سال میں صوبے بھر میں ہزارہ کمیونٹی پر حملوں کے 1400 واقعات سامنے آئے۔یاد رہے کہ بلوچستان میں فرقہ وارانہ دہشت گردی میں ہزارہ کمیونٹی کو ان کے نمایاں جسمانی خدو خال کے باعث با آسانی شناخت کے وجہ سے نشانہ بنایا جاتا ہے۔10 ستمبر کو کوئٹہ کے علاقے کچلاک میں نامعلوم مسلح افراد کی فائرنگ سے ہزارہ برادری سے تعلق رکھنے والے 4 افراد جاں بحق اور دو خواتین زخمی ہوگئیں تھیں۔اس سے قبل 4 جون کو کوئٹہ کے علاقے سپینی روڑ پر نامعلوم مسلح افراد کی فائرنگ سے ہزارہ برادری سے تعلق رکھنیوالی ایک خاتون اور مرد جاں بحق ہوگئے تھے جبکہ 19 جولائی کو بلوچستان کے علاقے مستونگ میں فائرنگ سے 4 افراد کو ہلاک کیا گیا تھا۔پولیس نے جائے وقوعہ سے گولیوں کے خول سمیت دیگر شواہد اکٹھے کرلئے،ملزمان کی تلاش کیلئے آس پاس کے علاقوں کی ناکہ بندی کرکے سرچ آپریشن شروع کردیا گیا