September 26, 2020

ایسوسی ایشن آف بلڈرز اینڈ ڈیولپرز (آباد) کے زیر اہتمام آباد ہاؤس میں “نیا پاکستان ہاؤسنگ اسکیم سے آگاہی اور اس میں کاروباری مواقع” کے موضوع پر منعقدہ سیمینار

 

کراچی  ویب ڈیسک ::نیا پاکستان ہاؤسنگ اینڈ ڈیولپمنٹ اتھارٹی کے چیئرمین لیفٹیننٹ جنرل ریٹائرڈ انور علی نے کہا کہ کم آمدن طبقے کو سستے گھروں کی فراہمی کیلئے وفاقی حکومت نے نیا پاکستان ہاؤسنگ اسکیم کیلئے فکس ٹیکس ریجیم کا نظام نافذ کیا ہے، کم لاگت گھروں کیلئے ٹیکس میں 90 فیصد چھوٹ دی اور ہاؤسنگ فنانس کی فراہمی کیلئے بینکوں کو ریگولیٹری اور مالیاتی مراعات دے کر بینکوں کیلئے ماحول کو سازگار بنایا، اگلے ہفتے سے بینک ہاؤسنگ فنانس کیلئے اپنی پروڈکٹس سامنے لائیں گے۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے ایسوسی ایشن آف بلڈرز اینڈ ڈیولپرز (آباد) کے زیر اہتمام آباد ہاؤس میں “نیا پاکستان ہاؤسنگ اسکیم سے آگاہی اور اس میں کاروباری مواقع” کے موضوع پر منعقدہ سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔

سیمینار میں آباد کے چیئرمین محسن شیخانی، سینئر وائس چیئرمین سہیل ورند، وائس چیئرمین عبدالرحمان، سدرن ریجن کے چیئرمین محمد علی توفیق رتاڑیا، آباد کے سابق چیئرمینز محمد حسن بخشی، محمد حنیف گوہر، عارف جیوا،  کے ڈی اے کے ایم ڈی آصف اکرام، ایچ بی ایف سی اے کے چیئرمین آشکار داوڑ، ایف بی آر کے سابق چیئرمین شبر زیدی، ایچ بی ایل کے اسلامک بینکنگ کے سربراہ  سلیم اللہ شیخ، میزان بینک کے جنرل منیجر سید تنویر حسین اور آباد ممبران کی بڑی تعداد شریک تھی۔

لیفٹیننٹ جنرل (ر) انور علی نے کہا بینکوں کی جانب سے مہنگے قرضے کم لاگت گھروں کی فراہمی میں بڑی رکاوٹ رہے ہیں، حکومت نے اس مرحلے کو بھی آسان کیا ہے اور گھروں کی تعمیر کیئے شرح سود 5 سے 7 فیصد کیا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ امید ہے کہ اگلے ہفتے سے بینک ہاؤسنگ فنانس کیلئے اپنی پروڈکٹس سامنے لائیں گے۔

چیئرمین آباد محسن شیخانی نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان میں ایک کروڑ 20 لاکھ گھروں کی کمی ہے، آباد گزشتہ 7 سال سے کم خرچ ہاؤسنگ اسکیم کیلئے کام کررہی تھی، جس سے متعلق آباد نے وزیراعظم عمران خان  کو بھی آگاہی فراہم کی، جس پر الیکشن سے کچھ عرصہ قبل وزیراعظم عمران خان نے آباد ہاؤس میں نیا پاکستان ہاؤسنگ اسکیم کا اعلان کیا۔

محسن شیخانی نے اپنے خطاب میں بتایا کہ وزیراعلیٰ سندھ  کے ساتھ اجلاس میں کم لاگت گھروں کی اسکیم پر پیشرفت ہوئی ہے، مراد علی شاہ نے سستی ہاؤسنگ کیلئے سندھ میں زمینیں فراہم کرنے اور دیگر مسائل حل کرنے کی یقین دہانی کرائی ہے، سندھ میں بھی خیبرپختونخوا اور پنجاب کے طرز پر سستی ہاؤسنگ کے منصوبے شروع کئے جائیں گے۔

نیا پاکستان ہاؤسنگ ٹاسک فورس کے چیئرمین ضیغم رضوی نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ وزیر اعظم عمران خان نے تعمیراتی شعبے کے ساتھ جڑی 70  صنعتوں سے آگاہی کے بعد نیا پاکستان ہاؤسنگ اسکیم کو مکمل کرنے کی ٹھان  لی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ نیا پاکستان ہاؤسنگ اسکیم کی بنیاد آباد ہاؤس میں ہی رکھی گئی تھی۔

ضیغم رضوی کا مزید کہنا تھا کہ گزشتہ 70 برسوں سے  بینکنگ انڈسٹری کا ہاؤس فنانسنگ میں کردار مایوس کن رہا ہے، 70 سال میں تمام بینکوں نے صرف 106 ارب روپے کی ہاؤسنگ فنانسنگ کی جو جی ڈی پی کا صرف 0.23 فیصد ہے۔

انہوں نے کہا کہ اب بینکوں کی جانب سے مثبت پیشرفت نظر آرہی ہے، صرف 2 محکموں محکمہ ریلوے اور وقف املاک کے پاس 3 لاکھ ایکڑ اراضی ہے جسے ہاؤسنگ پروجیکٹس میں استعمال کیا جاسکتا ہے۔

سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے شبر زیدی نے کہا کہ کم لاگت گھروں کی تعمیر صرف سستے قرضے ملنے سے ہی ممکن ہے، کم لاگت گھروں کیلئے 10 سالہ منصوبہ بنانا ہوگا، نیا پاکستان ہاؤسنگ اسکیم کی کامیابی کیلئے حکومت کو مفت اراضی فراہم کرنی ہوگی، بڑے شہروں میں حکومت کو سستے منصوبوں کیلئے مفت زمین دینا ہوگی۔

ان کا کہنا ہے کہ حکومت کو گھروں کی تعمیرات کیلئے مفت زمین کے ساتھ فنانس کی سہولت بھی فراہم کرنی ہوگی

۔ایچ بی ایل اسلامک بینک کے سربراہ سلیم اللہ شیخ اور میزان بینک کے جنرل منیجر سید تنویر حسین نے کہا کہ  بینک تعمیراتی پروجیکٹس کی تعمیر میں 80 فیصد فنانسنگ کرنے کیلئے تیار ہیں، کم لاگت گھروں کی تعمیر میں بینک کی جانب سے شرح سود میں رعایت دی جائے گی

کراچی ڈیولپمنٹ اتھارٹی کے ڈی جی آصف اکرام نے کہا کہ ہاؤسنگ پروجیکٹس میں کے ڈی اے بلڈرز اور ڈیولپرز کے ساتھ جوائنٹ وینچرز کرنے کیلئے تیار ہے، سندھ میں نیا پاکستان ہاؤسنگ اسکیم کیلئے زمین فراہم کرنے کیلئے اقدامات کئے جارہے ہیں۔

 

September 25, 2020

نواز شریف کی تقریر حکومت اور فوج میں دراڑیں ڈالنے کی سازش تھی، وزیراعظم

اسلام آباد:  وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ میاں نواز شریف کی تقریر بھارت کے بیان کی عکاس، حکومت اور فوج میں دراڑیں ڈالنے کی سازش تھی۔

ذرائع کے مطابق وزیراعظم نے یہ بات نیوز چینلز کے ڈائريکٹرز سے ملاقات کے دوران کہی۔ انہوں نے واضح کیا کہ نواز شریف کو تقریر کی اجازت اس لیے دی کہ آزادی اظہار کا شور مچ جاتا۔ نواز شریف کھیل سے باہر ہو چکے ہیں۔ اس لئے وہ چاہتے ہیں کہ نہ کھیلوں گا اور نہ کھیلنے دوں گا۔

ان کا کہنا تھا کہ ہماری حکومت کرپٹ نہیں، اس ليے فوج سارے فیصلوں کو بیک کرتی ہے۔ اپوزیشن سے خطرہ نہیں، کچھ وزیر اپنے خلاف ہی گول کر دیتے ہیں۔ ہر جماعت میں اختلاف رائے ہوتا رہتا ہے۔ سیاسی جماعتوں میں نظم وضبط بنانا ممکن نہیں ہے۔

وزیراعظم نے ایک مرتبہ پھر اپنے دوٹوک موقف کو دہراتے ہوئے کہا کہ میں کرپشن پر کسی کو این آر او نہیں  دوں گا۔ اگر اپوزيشن کے استعفے آئے تو ان نشستوں پر دوبارہ اليکشن کرا ديں گے۔ عمران خان کا کہنا تھا کہ میرا وژن ایسا پاکستان ہے جس کے ہاتھ میں کشکول نہ ہو۔ یوٹرن ہمیشہ ایک مقصد کے لیے ہوتا ہے۔

(ن) لیگ ہو یا (ش) لیگ یہ لوگ صرف خاندانی سیاست کریں گے۔ مولانا فضل الرحمان کو اس لیے ساتھ رکھتے ہیں کیونکہ ان کے پاس لوگ نہیں ہیں۔ میں نے پاکستان میں سب سے زیادہ سٹریٹ پاور استعمال کی۔

وزیراعظم نے تسلیم کیا کہ میں مانتا ہوں کہ میری حکومت میں میڈیا سے رابطوں کا فقدان ہے۔ دوران گفتگو انہوں نے ایک مرتبہ پھر نواز شریف کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ وہ مایوس ہو چکے ہیں۔ وہ فوج اور حکومت کے درمیان تاریخی ہم آہنگی کو توڑنا چاہتے ہیں۔ اپوزیشن کا ایجنڈا حکومت اور فوج کے درمیان لڑائی کرانا ہے۔ مجھے پاک فوج سے ہونے والی ملاقاتوں کا علم ہوتا ہے۔

دیگر ایشوز پر بات کرتے ہوئے وزیراعظم کا کہنا تھا کہ شوگر مافیا سے نمٹ رہے ہیں۔ ادویات کی قیمتیں بڑھائی تاکہ ان کی مارکیٹ میں دستیابی ہو سکے اور موجود ہوں۔ 18ویں ترمیم میں زرعی شعبہ صوبوں کو دے دیا گیا جو نہیں دینا تھا۔

وزیراعظم نے کہا کہ اچھی بات یہ ہے کہ چین کو پاکستان کی اتنی ضرورت ہے، جتنی پاکستان کو چین کی۔ پاکستان خوش قسمت ملک ہے کہ چین ہمارا دوست ملک ہے۔

September 25, 2020

وزیراعظم پاکستان عمران خان نے افغان صدر اشرف غنی کو ٹیلیفون امن عمل کی حمایت جاری رکھنے کا اعادہ اور بھرپور تعاون کی یقین دہانی

اسلام آباد:  وزیراعظم پاکستان عمران خان نے افغان صدر اشرف غنی کو ٹیلیفون امن عمل کی حمایت جاری رکھنے کا اعادہ اور بھرپور تعاون کی یقین دہانی کرائی ہے۔

دونوں رہنماؤں کے درمیان ہونے والی اس ٹیلی فونک گفتگو میں طالبان اور افغان حکومت کے مذاکرات پر بھی بات چیت کی گئی۔ وزیراعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ مثبت کوششوں سے امریکا طالبان امن معاہدہ اور انٹرا افغان مذاکرات کا آغاز ہوا۔

وزیراعظم عمران خان نے دوحہ میں انٹرا افغان مذاکرات پر فریقین کے اقدامات کی تعریف کرتے ہوئے جنگ بندی اور تشدد میں کمی کیلئے افغان جماعتوں کے کردار کی اہمیت پر زوردیا۔

عمران خان کا کہنا تھا کہ تمام افغان سٹیک ہولڈرز کو اس تاریخی موقع سے فائدہ اٹھانا چاہیے۔ افغان قیادت کو خود ایک جامع سیاسی معاہدے کے لئے مل کر کام کرنا چاہیے۔

انہوں نے افغان صدر کو یقین دہانی کرائی کہ پاکستان افغان عوام کے بہتر مستقبل کے لیے کیے گئے فیصلوں کی مکمل حمایت کرے گا۔ وزیراعظم نے پاک افغان تعمیری روابط، امن واستحکام سمیت افغان عوام کی خوشحالی کی اہمیت پر بات کی۔

دوران گفتگو انہوں نے بتایا کہ افغان قومی کونسل برائے قومی مفاہمت کے چیئرمین ڈاکٹر عبداللہ عبداللہ اگلے ہفتے اسلام آباد آئیں گے۔ وزیراعظم نے دورے کی دعوت پر صدر اشرف غنی کا شکریہ ادا کیا اور کہا کہ وہ وہ جلد افغانستان کا دورہ کریں گے۔

September 25, 2020

بھارتی فوج کی کنٹرول لائن پر بلا اشتعال فائرنگ، 8 سالہ بچہ زخمی

راولپنڈی: (ویب ڈیسک) بھارتی فوج نے کنٹرول لائن (ایل او سی) پر ایک بار پھر بلا اشتعال فائرنگ کرکے بین الاقوامی قوانین کی دھجیاں اڑا دی ہیں۔ بھارتی فوج کی فائرنگ سے 8 سالہ بچہ زخمی ہو گیا۔

پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ (آئی ایس پی آر) کے مطابق بھارتی فوج نے کنٹرول لائن کے بروح سیکٹر میں بلااشتعال فائرنگ کی۔ جنوری سے اب تک بھارتی فوج 2340 بار جنگ بندی معاہدے کی خلاف ورزی کر چکی ہے۔

آج بھارت کے ایک اعلیٰ سفارتکار کو دفتر خارجہ طلب کرکے بھارتی قابض فوج کی جانب سے کنٹرول لائن پر جنگ بندی معاہدے کی خلاف ورزیوں پر پاکستان کا شدید احتجاج ریکارڈ کرایا گیا ہے۔

دفتر خارجہ کے ترجمان زاہد حفیظ چودھری کے مطابق بھارتی قابض فوج کی کنٹرول لائن کے بروح سیکٹر میں اندھا دھند اور بلا اشتعال فائرنگ کے نتیجے میں دو بے گناہ شہری شدید زخمی ہوگئے تھے۔

انہوں نے کہا کہ بھارتی قابض فوج کنٹرول لائن اور ورکنگ باونڈری کے ساتھ شہری آبادی کو مسلسل بھاری توپ خانے، مار ٹر گولوں اور خود کار ہتھیاروں سے نشانہ بنا رہی ہے۔

اس سال بھارت نے اب تک دوہزار تین سو چالیس بار جنگ بندی معاہدے کی خلاف ورزی کی ہے جس کے نتیجے میں اٹھارہ افراد شہید اور ایک سو ستاسی شہری شدید زخمی ہوئے۔

September 25, 2020

مقبوضہ کشمیر میں قابض فوج کی بربریت جاری، مزید 2 کشمیری نوجوان شہید

سرینگر:جدت ویب ڈیسک : مقبوضہ وادی میں بھارتی فوج نے ریاستی دہشت گردی کے دوران فائرنگ کرکے مزید 2 کشمیری نوجوانوں کو شہید کردیا۔کشمیر میڈیا سروس کے مطابق مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوج نے ضلع اسلام آباد میں نام نہاد سرچ آپریشن کے دوران فائرنگ کرکے مزید 2 کشمیری نوجوانوں کو شہید کردیا جب کہ قابض فوج کی جانب سے نصب کیا گیا بارودی مواد پھٹنے کے باعث مزید 2 کشمیری شدید زخمی ہوگئے۔کشمیر میڈیا سروس کے مطابق ضلع شوپیاں، پلوامہ اور بڈگام میں بھی قابض افواج کا علاقے کے داخلی اور خارجی راستوں کو بند کرکے سرچ آپریشن جاری ہے۔واضح رہے کہ گزشتہ روز بھی ضلع پلوامہ میں بھارتی فورسز نے نام نہاد سرچ آپریشن کے دوران فائرنگ کرکے ایک کشمیری نوجوان کو شہید کردیا تھا جب کہ گزشتہ ہفتے سے لیکر اب تک قابض بھارتی فوج کی فائرنگ کے نتیجے میں ایک خاتون اور 8 کشمیری نوجوان شہید ہوچکے ہیں۔

September 25, 2020

سانحہ اے پی ایس سیکیورٹی کی ناکامی قرار، رپورٹ منظرعام پر آگئی

اسلام آباد: جدت ویب ڈیسک :سانحہ اے پی ایس کی جوڈیشل انکوائری کمیشن کی رپورٹ میں دھمکیوں کے بعد سکیورٹی گارڈز کی کم تعداد اور درست مقامات پر عدم تعیناتی کی نشاندہی کی گئی ہے۔سانحہ اے پی ایس پر بننے والی جوڈیشل انکوائری کمیشن نے سانحے کی رپورٹ پبلک کردی ہے، جس میں سانحہ اے پی ایس کو سکیورٹی کی ناکامی قرار دے دیا گیا ہے، رپورٹ میں کمیشن نے اسکول کی سیکیورٹی پر بھی سوالات اٹھائے ہیں اور بتایا گیا ہے کہ دھمکیوں کے باوجود سیکیورٹی گارڈز کی کم تعداد اور درست مقامات پر عدم تعیناتی بھی نقصان کا سبب بنی، غفلت کا مظاہرہ کرنے والی یونٹ کے متعلقہ افسران و اہلکاروں کو سزائیں بھی دی گئیں۔رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ دھماکوں اور شدید فائرنگ میں سکیورٹی گارڈز جمود کا شکار تھے، دہشت گرد اسکول کے عقب سے بغیر کسی مزاحمت داخل ہوئے، اگر سیکیورٹی گارڈز مزاحمت کرتے تو شاید جانی نقصان اتنا نہ ہوتا، غداری سے سیکیورٹی پر سمجھوتہ ہوا اور دہشتگردوں کا منصوبہ کامیاب ہوا۔رپورٹ کے مطابق افغانستان سے دہشتگرد ممکنہ طور پر مہاجرین کے روپ میں داخل ہوئے، اور دہشتگردوں کو مقامی افراد کی طرف سے سہولت کاری ملی جو ناقابل معافی ہے، اپنا ہی خون غداری کر جائے تو نتائج بہت سنگین ہوتے ہیں، کوئی ایجنسی ایسے حملوں کا تدارک نہیں کر سکتی بالخصوص جب دشمن اندر سے ہو۔

September 25, 2020

کرپشن اتنی بڑھ گئی کہ جانوروں کا کھانا چوری ہورہا ہے، اسلام آباد ہائیکورٹ

اسلام آباد: جدت ویب ڈیسک :چڑیا گھر میں جانوروں کی ہلاکت کے کیس کی سماعت میں چیف جسٹس اسلام آباد ہائیکورٹ نے کہا ہے کہ کرپشن اس حد تک آگئی ہے کہ جانوروں کے کھانے کو بھی چوری کیا جا رہا ہے. تفصیلات کے مطابق اسلام آباد ہائیکورٹ میں چیف جسٹس اطہر من اللہ نے چڑیا گھر میں جانوروں کی ہلاکت اور ذمہ داروں کے خلاف توہین عدالت کیس کی سماعت کی جس میں چئیرمین وائلڈ لائف مینجمنٹ بورڈ نے بتایا کہ کاون ہاتھی کو کمبوڈیا بھیجنے کی تیاری مکمل ہو رہی ہے۔ ریچھ رکھنے کی ذمہ داری کسی صوبے نے نہیں لی۔ کاون کو کمبوڈیا بھیجنے کی تیاری مکمل ہے ۔ چیف جسٹس نے کہا کہ حضور پاک صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے فرمان اور احادیث ہی سوچنے کا انداز تبدیل کر سکتی ہیں۔ عدالت نے چئیرمین وائلڈ لائف مینجمنٹ بورڈ ڈاکٹر انیس الرحمن کو ہدایت کی کہ آپ کے پاس ماہرین ہیں جو بھی جانوروں کے لیے بہتر ہو آپ نے وہ کرنا ہے۔چیف جسٹس نے کہا کہ بین الاقوامی سطح پر یہ سب کچھ پاکستان کے بہتر امیج کی نشاندہی کر رہاہے۔ اگر انسانی ہمدردی کا پہلو زندہ ہوتا تو دنیا میں دہشت گردی نہ ہوتی،ریچھ برف کے عادی ہیں ہم نے لا کر ان کو گرمی میں ڈال دیا۔ایک چیز میں نے فیصلے میں نہیں لکھیں کہ ہاتھی کے نام پر کیا کیا چیزیں آرہی تھیں۔انہوں ںے کہا اگر معاشرے میں جانوروں سے ہمدردی ہو تو بچوں کے ساتھ زیادتی اور ریپ کے کیسز بھی نہ ہوں،جس معاشرے میں جان کی قیمت نہ ہو وہاں اس طرح کے جرائم ہوتے ہیں،جو زندگی کی قدر کرے گا وہ جانور کو بھی کچھ نہیں کہے گا۔ جو جانور کا خیال رکھے گا وہ بچے اور خواتین کا بھی خیال رکھے گا۔ گھنانا جرم نہیں کرے گا۔

September 25, 2020

کراچی کے بیشترعلاقوں میں بجلی کی لوڈشیڈنگ کم نہ ہوئی

کراچی: جدت ویب ڈیسک :شہر کے بیشتر علاقوں میں پوری رات بجلی کی آنکھ مچولی جاری رہی۔ کراچی کے بیشترعلاقوں میں بجلی کی غیراعلانیہ لوڈشیڈنگ کا سلسلہ جاری ہے اور عوام گرمی اور لوڈشیڈنگ کی وجہ سے شدید پریشانی کا شکار ہیں، شہر کے مختلف علاقوں میں گزشتہ رات بجلی کی آنکھ مچولی جاری رہی۔ کراچی کیعلاقے کلفٹن، ڈی ایچ اے، پی ای سی ایچ ایس، برنس روڈ، نارتھ کراچی، گلشن اقبال، کورنگی، لانڈھی، ناظم آباد، اختر کالونی، لیاقت آباد، فیڈرل بی ایریا، کورنگی، سائٹ ایریا، بلدیہ ٹان، ملیر، سعودآباد، ماڈل کالونی اور اورنگی ٹاون سمیت متعدد علاقوں میں لوڈشیڈنگ جاری رہی۔ جب کہ لوڈ شیڈنگ سے مستثنی علاقوں میں بھی دو سے چار گھنٹے کی لوڈ شیڈنگ کی جارہی ہے۔ دوسری جانب کے الیکٹرک کے ترجمان کا کہنا ہے کہ گیس کا پریشر کم ہونے سے پاور پلانٹس سے بجلی کم بن رہی ہے، شہر کو 300 سو میگا واٹ کے قریب شاٹ فال کا سامنا ہے۔