April 2, 2020

کراچی میں کرونا سے مرنے والوں کے لیے نیا قبرستان بن گیا

کراچی: ویب ڈیسک ::سندھ حکومت نے شہر قائد میں کرونا وائرس سے جاں بحق ہونے والوں کی تدفین کے لیے نیا قبرستان بنا دیا۔
کراچی کے علاقے بن قاسم میں ایک نیا قبرستان بنایا گیا ہے جہاں کرونا سے مرنے والے شہریوں کو دفنایا جائے گا، یہ قبرستان 80 ایکڑ پر محیط ہے، جہاں پہلے شخص کی تدفین بھی کر دی گئی ہے جو کرونا وائرس کا مریض تھا جن کا دو دن قبل انتقال ہوا تھا اور ان کی عمر 74 سال تھی۔
خیال رہے کہ اس سے قبل کراچی میں کرونا وائرس سے جاں بحق ہونے والے افراد کی تدفین کے لیے 5 قبرستان مختص کیے گئے تھے، جن میں محمد شاہ، مواچھ گوٹھ، کورنگی، اورنگی ٹاؤن گلشن ضیا اور سرجانی کے قبرستان شامل تھے۔
گورکنوں کے حفاظتی لباس کا معاملہ بھی سامنے آیا تھا جس پر پی ڈی ایم اے سے رابطے کا فیصلہ کیا گیا تھا۔
چین سے پھیلنے والے جان لیوا وائرس کو وِڈ نائنٹین سے متاثرہ افراد کی تعداد میں سندھ بھر میں مسلسل اضافہ ہو رہا ہے۔ محکمہ صحت نے بتایا کہ کراچی میں مزید 17 نئے کیسز رپورٹ ہوئے، حیدر آباد میں 9، شہید بے نظیر آباد میں 6 اور جامشورو میں 2 نئے کیسز رپورٹ ہوئے ہیں جس کے بعد مجموعی طور پر سندھ بھر میں 743 لوگ کرونا وائرس کا شکار ہیں۔سندھ میں کرونا کے 34 نئے کیسز رپورٹ، مجموعی تعداد 743 ہوگئی۔۔۔ادھر محکمہ صحت سندھ نے کہا ہے کہ 34 نئے کیسز رپورٹ ہونے کے بعد سندھ بھر میں کرونا وائرس کے مریضوں کی مجموعی تعداد 700 سے تجاوز کر گئی ہے۔

March 29, 2020

وزیر اعظم عمران خان کی ہدایت پر این ڈی ایم اے نے کراچی میں 2 مزید لیباریٹریز کے قیام کا فیصلہ کر لیا

کراچی: وزیر اعظم عمران خان کی ہدایت پر این ڈی ایم اے نے کراچی میں 2 مزید لیباریٹریز کے قیام کا فیصلہ کر لیا ہے۔
تفصیلات کے مطابق آج گورنر سندھ عمران اسماعیل نے وزیر اعظم عمران خان سے ٹیلی فونک رابطہ کر کے انھیں سندھ کی صورت حال اور کرونا وائرس سے بچاؤ کے انتظامات سے متعلق آگاہ کیا۔
گورنر سندھ نے چیئرمین این ڈی ایم اے لیفٹیننٹ جنرل محمد افضل سے بھی رابطہ کر کے کرونا وائرس کے لیے ٹیسٹنگ لیبارٹریز کے جلد قیام کے سلسلے میں بات چیت کی، جس پر چیئرمین نے انھیں ٹیسٹنگ لیباریٹریز کے جلد قیام کی یقین دہانی کرا دی۔
گورنر سندھ کا کہنا تھا کہ وزیر اعظم خود کرونا وائرس صورت حال کی مانیٹرنگ کر رہے ہیں، مزید ٹیسٹنگ لیباریٹریز سے بروقت تشخیص اور روک تھام میں مدد ملے گی۔
اپنے ٹویٹ میں بھی گورنر سندھ عمران اسماعیل نے کہا تھا کہ وزیر اعظم کی ہدایت پر 2 کرونا ٹیسٹنگ لیبز قائم کی جائیں گی، این ڈی ایم اے، ایس آئی یو ٹی اور جے پی ایم سی مل کر لیبز قائم کریں گی، انشاء اللہ یہ لیبز ایک ہفتے کے اندر کام کرنا شروع کر دیں گی، سندھ میں مزید لیبز بھی کھولی جائیں گی۔
خیال رہے کہ نیشنل کمانڈ اینڈ کنٹرول سینٹر کا کہنا ہے کہ پاکستان میں کرونا وائرس کے کیسز کی تعداد 15 سو 26 ہوگئی ہے، ملک بھر میں 185 قرنطینہ سینٹرز میں 8 ہزار 66 مریض ہیں۔

March 26, 2020

سندھ حکومت نے 5 اپریل تک مساجد میں نماز کے اجتماعات پر پابندی عائد کر دی

 

ویب ڈیسک ::کورونا وائرس کے خدشے کے پیش نظر سندھ حکومت نے 27 مارچ سے 5 اپریل تک مساجد میں نماز کے اجتماعات پر پابندی عائد کردی۔صوبائی وزارت داخلہ نے اس حوالہ سے نوٹفکیشن جاری کر دیا گیا ہے جس کے مطابق مساجد میں عملہ امام، مؤذن کو ہی نماز کی اجازت ہوگی
نماز جمعہ کی ادائیگی کیلئے بھی شہری مساجد میں نہیں آئیں گے، صرف مسجد کا عملہ ہی نماز جمعہ ادا کرے گا۔
ترجمان سندھ حکومت مرتضیٰ وہاب کہتے ہیں کہ فیصلہ علمائے کرام کی مشاورت سے کیا گیا  عوام کو مساجد میں نہیں آ نے دیا جائے گا، مساجد میں اذان ہو گی او رامام کی قیادت میں ٹوٹل 3 افرد نماز ادا کریں گے،پیش امام اور مساجد کی دیکھ بھال کرنے والے افراد باجماعت نماز ادا کر سکیں گے ۔

محکمہ داخلہ سندھ کا کہنا ہے کہ تمام علما کرام اور ڈاکٹرز کی مشاورت سے پابندی کا فیصلہ کیا،وبائی امراض کے ایکٹ 2014کے تحت پابندی عائد کی گئی،خلاف ورزی پر دفعہ 188کے تحت کارروائی ہوگی،پولیس ،رینجرز اور قانون نافذ کرنے والوں کو کارروائی کا اختیار ہوگا،

کہ وہ گھرون میں نماز ادا کریں.سندھ کے صوبائی وزیر ناصر حسین شاہ کا کہنا ہے کہ سندھ حکومت کےلیے  فیصلہ مشکل اوربڑاتھا5اپریل تک تمام مساجد میں صرف 3 سے5متعین افرادباجماعت نمازپڑھیں گے،عوام گھروں میں اجتماعی یاانفرادی سطح پرنمازاداکریں ،ہاتھ جوڑ  کرگزارش کرتاہوں کہ مشکل فیصلہ ہےعوام ہماراساتھ دیں

March 26, 2020

وزیر ٹرانسپورٹ سندھ نے صوبے بھر میں کرفیو کی تجویز دے دی۔

 ویب ڈیسک ::کورونا وبا کے باعث سندھ حکومت نے شہریوں کی نقل و حرکت روکنے کیلئے پابندیاں مزید سخت کرنے کا فیصلہ کر لیا۔ وزیر ٹرانسپورٹ سندھ نے صوبے بھر میں کرفیو کی تجویز دے دی۔

وزیر اعلیٰ مراد علی شاہ نے معاملے پر اقدامات کیلئے مشاورت شروع کر دی۔ پابندیاں سخت کرنے سے متعلق باضابطہ ویڈیو بیان جاری کیا جائے گا۔

سندھ میں مکمل لاک ڈاون کا آج چوتھا دن ہے۔ آج بھی کراچی میں تمام کاروباری اور تجارتی مراکز بند ہیں۔ دکانیں ، مارکیٹیں، شاپنگ مال، پبلک ٹرانسپورٹ سب بند ہیں لیکن نجی ٹرانسپورٹ سڑکوں پر دیکھی جارہی ہے۔

مرکزی شاہراہیں ، چوراہیں ، گلیاں اور سڑکیں آج چوتھے دن بھی خالی ہیں۔ بیکری ، میڈیکل اسٹور ، پرچون ، دودھ کی دکانیں کھلی ہیں۔

پولیس اور رینجرز گشت بھی کررہی ہیں اور جگہ جگہ ناکے لگائے ہوئے ہیں۔ انتہائی ضروری کام سے نکلنے والے شہریوں کو آگے جانے دیاجارہاہے جبکہ بلا ضرورت گھروں سےنکلنے والوں سے سختی سے نمٹا جارہا ہے۔

ادھر سندھ حکومت کا نیا حکم نامہ سامنے آگیا۔ صوبے بھر میں صبح 5 سے رات 8 بجے تک دودھ، انڈے اور پولٹری کی ترسیل کی اجازت ہو گی۔

March 20, 2020

سندھ حکومت کامحنت کش ، مزدوروں کے بچوں کو اعلیٰ نجی تعلیمی اداروں میں تعلیم دلانے کا فیصلہ۔ وزیر تعلیم ومحنت سعید غنی

کراچی : ویب ڈیسک ::وزیر تعلیم سعید غنی کی زیر صدارت اجلاس میں محنت کش و مزدوروں کے بچوں کو اعلیٰ نجی تعلیمی اداروں میں تعلیم دلانے کا فیصلہ کرتے ہوئے رجسٹر مزدوروں کے اکاؤنٹ میں فی بچہ6 ہزار روپے جمع کرانے کی بھی منظوری دے دی گئی۔
تفصیلات کے مطابق وزیر تعلیم ومحنت سعید غنی کی زیرصدارت ورکرز ویلفیئر بورڈکی گورننگ باڈی کااجلاس ہوا ، جس میں سیکرٹری محنت عبدالرشید سولنگی، گورننگ باڈی کے ارکان شریک ہوئے۔
اجلاس میں محنت کش و مزدوروں کے بچوں کو اعلیٰ نجی تعلیمی اداروں میں تعلیم دلانے کا فیصلہ کرلیا گیا، وزیر تعلیم نے کہا ایسے بچوں کے اخراجات ورکر ویلفیئر بورڈ ادا کرےگا، بچوں کواعلیٰ تعلیم دلاکر معاشرےمیں اعلیٰ مقام ملےیہ پارٹی کامنشورہے۔
اجلاس میں رجسٹر مزدوروں کے اکاؤنٹ میں فی بچہ6 ہزار روپے جمع کرانے کی بھی منظوری دے دی گئی، سعید غنی کا کہناتھا کہ امپلائرزاورمزدوروں کوخط لکھ کران کا اکاؤنٹ نمبرحاصل کیاجائےگا۔ گذشتہ روز صوبائی وزیر سعید غنی کا کہنا تھا کہ کوشش ہے روزانہ اجرت پر کام کرنے والوں کو معاشی مشکل نہ ہونے دی جائے،کاروباری مراکز کی بندش سے مزدوروں کو مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔اس سے قبل سندھ حکومت نے ضرورت مند افراد کے لئے صوبے بھر میں مفت راشن تقسیم کے لیے ہیلپ لائن بنانے کا فیصلہ کیا تھا، ہیلپ لائن پر رجسٹریشن کے بعد شہریوں کے گھروں تک ایک ماہ کا راشن پہنچایا جائےگا۔پہلےمرحلے میں 20 لاکھ خاندانوں کو ایک ماہ کا راشن دیاجائےگا ، مخیرحضرات،این جی اوز بھی راشن کی تقسیم میں سندھ حکومت کی معاونت کریں گے۔
پی ڈی ایم اے نے بڑے پیمانے پر رضاکاروں کی رجسٹریشن شروع کردی ، رجسٹرڈ رضاکار پی ڈی ایم اےکےتحت مختلف مقامات پر خدمات انجام دیں گے، رضاکاروں کوقرنطینہ،آئسولیشن ودیگرمقامات پرمعاونت کے لیے رکھا جائےگا۔
وزیر تعلیم سندھ نے کہا تھا کہ وزیر اعلیٰ سندھ نے مزدوروں کے حوالے سے ایک کمیٹی فوری تشکیل دی ہے، 24 سے 48گھنٹے میں روزانہ اجرت والوں کی امداد کا کام شروع کردیں گے۔انہوں نے مزید کہا کہ ہمیں مل کر اس وبا سے نمٹنے کے لیے اقدامات کرنے ہوں گے۔

March 19, 2020

ایکسپو سینٹر کراچی میں فیلڈ اسپتال کے قیام کا بڑا فیصلہ، شہر میں مزید 3 کیس رپورٹ سندھ میں کرونا وائرس کے کیسز کی تعداد 211 ہو گئی، صوبے میں تیسرا مریض بھی صحت یاب ہو گیا: وزیر اعلیٰ

کراچی.ویب ڈیسک : ضلعی انتظامیہ نے کرونا وائرس کے ہنگامی صورت حال سے نمٹنے کے لیے ایکسپو سینٹر کراچی میں فیلڈ اسپتال قائم کرنے کا فیصلہ کر کے تیاریاں شروع کر دی ہیں، ادھر کراچی میں کرونا وائرس کے مزید 3 کیس رپورٹ ہوئے ہیں۔
کمشنر کراچی افتخار شالوانی نے وفاقی وزارت تجارت کے حکام سے رابطہ کر کے ایکسپو سینٹر کراچی میں فیلڈ اسپتال کے قیام کی تجویز دی، جسے وفاق نے قبول کر لیا۔
ذرایع کا کہنا ہے کہ وفاق کی جانب سے تجویز منظور ہونے کے بعد ایکسپو سینٹر میں کرونا کے مریضوں کے لیے فیلڈ اسپتال قائم کرنے کی تیاریاں شروع کر دی گئی ہیں، وزیر اعلیٰ سندھ مراد علی شاہ نے کمشنر کو فیلڈ اسپتال کے لیے بستر اور دیگر سامان خریدنے کی ہدایت بھی کر دی ہے۔
ادھر کراچی میں کرونا وائرس کے مزید 3 کیس رپورٹ ہو گئے ہیں، محکمہ صحت سندھ کا کہنا ہے کہ کراچی میں تینوں کیسز مقامی ہیں، ان کی کوئی ٹریول ہسٹری نہیں، سندھ میں کرونا وائرس کے کیسز کی تعداد 211 ہو گئی، حیدر آباد میں ایک، کراچی میں وائرس کے کیسز کی تعداد 59 ہے، تفتان سے آئے زائرین سکھر میں 151 کیسز مثبت ہیں۔
آج کرونا وائرس پر اجلاس میں وزیر اعلیٰ سندھ مراد علی شاہ نے کہا کہ وائرس میں مبتلا سندھ میں تیسرا مریض بھی صحت یاب ہو گیا ہے، جو اچھی علامت ہے۔ ہانگ کانگ، سنگاپور، تائیوان اور جنوبی کوریا نے اس انفیکشن کی رفتار پر کنٹرول کیا ہے، صرف کم سے کم سفر اور مسلسل اسکریننگ سے کرونا وائرس کو روکا جا سکتا ہے، بڑے اجتماع پر پابندی، سخت قرنطینہ کا عمل ہونا چاہیے۔
دوسری طرف، کراچی سے ماہر ڈاکٹروں کی ٹیم بھی سکھر کے قرنطینہ پہنچ چکی ہے۔ سکھر کی ضلعی انتظامیہ نے کہا ہے کہ تفتان سے مزید 757 زائرین کی قرنطینہ سینٹر آمد کے بعد تعداد 1060 ہو گئی ہے، اسکرنینگ کا عمل شروع کر دیا گیا ہے، بس کے ڈرائیورز اور کنڈیکٹرز کے سیمپلز اور بایو ڈیٹا لے لیا گیا ہے، مسافر کوچز کے ڈرائیورز، کنڈیکٹرز کی تعداد 60 ہے، زائرین کو رہایش کے ساتھ کھانے پینے کی اشیا دی گئی ہیں

March 18, 2020

محکمہ داخلہ سندھ نے وبائی امراض ایکٹ کے تحت مزید پابندیوں کا نوٹیفکیشن جاری کردیا

کراچی: جدت ویب ڈیسک ::محکمہ داخلہ سندھ نے وبائی امراض ایکٹ کے تحت مزید پابندیوں کا نوٹیفکیشن جاری کردیا ہے ، جس میں کہاگیا ہے کہ حکومتی اقدامات کی خلاف ورزی پر فوری سزا ہوگی جبکہ ڈپٹی کمشنرز اور اسسٹنٹ کمشنرز کو غیر معمولی اختیارات تفویض کئے گئے ہیں۔ نوٹیفکیشن کے مطابق تجارتی مراکز، میڈیکل اسٹورز،اشیائےضروریہ کی دکانیں کھلی رہیں گی جبکہ سندھ بھر میں تمام شاپنگ مالز ، بیوٹی پارلرز، شورمز، الیکٹرونکس مارکیٹس بند رہیں گے۔ محکمہ داخلہ سندھ کا کہنا ہے کہ سی ویو ،ہاکس بے،سینڈز پٹ، پیراڈائزپوائنٹ بھی بندہوں گے ، سندھ حکومت کی جانب سے پابندی آئندہ 15روز کیلئے ہوگی اور ہر طرح کی تجارتی وکاروباری سرگرمیاں 15روز کے لیے معطل رہیں گی۔
نوٹیفکیشن میں کہا گیا ہے کہ انٹرسٹی ٹرانسپورٹ 19مارچ سےمکمل بند کردی جائےگی، گڈز ٹرانسپورٹ،ادویات کی ترسیل پر مامور گاڑیوں پرفیصلےکااطلاق نہیں ہوگا جبکہ نجی ادارے ملازمین سےگھروں سےکام لینےکوترجیح دیں۔
خیال رہے پاکستان میں کروناوائرس کےمریضوں کی تعداد 240 سے تجاوز کر گئی ہے ، سندھ میں نو نئے کیسز رپورٹ ہونے کے بعد متاثرین کی تعدادایک سواکیاسی ہوگئی، سکھرمیں 134 ،کراچی میں 36 اور حیدرآبادمیں ایک مریض قرنطینہ سینٹر میں موجود ہیں۔
ترجمان سندھ حکومت مرتضیٰ وہاب نے کہا ہے کہ سندھ بھر میں 181 لوگ کرونا وائرس کا شکار ہیں، تفتان سے آئے لوگوں میں تقریباً 50 فی صد کے ٹیسٹ مثبت آئے ہیں۔
مرتضیٰ وہاب نے بتایا کہ سندھ بھر میں اب تک 3 اسپتالوں میں 844 لوگوں کے ٹیسٹ کیے جا چکے ہیں، آغا خان میں 506، اوجھا کیمپس میں 61، انڈس اسپتال میں 277 ٹیسٹ ہوئے۔ وفاق نے آغا خان اور اوجھا کیمپس کو صرف 100 ، 100 کٹس دیں۔ سندھ حکومت نے 10 ہزار ٹیسٹس کرنے کی سہولت امپورٹ کی ہے، وفاق سے ہمیں ابھی تک صرف 200 کٹس موصول ہوئی ہیں۔
انھوں نے عوام سے اپیل کی کہ اجتماعی بھلائی کے لیے سندھ حکومت کے ریسٹورنٹس اور شاپنگ مالز بندش اور دیگر فیصلوں پر ساتھ دیا جائے، سب سے آسان طریقہ یہ ہے کہ ہم خود کو 14 دن کے لیے قرنطینہ کر لیں۔ بندش کے فیصلے کا اطلاق دواؤں، پرچون، کریانوں، گروسری کی دکانوں پر نہیں ہوگا، سندھ حکومت کے فیصلے پر ابھی تک 100 فی صد عمل درآمد نہیں ہوا، دکانوں کو بند کرنے کے لیے کمشنر کراچی، پولیس حکام کو واضح احکامات ہیں، سخت اقدامات اٹھانے پر مجبور کیا گیا تو سخت اقدامات کریں گے۔
ترجمان کا کہنا تھا کہ سندھ حکومت کی جانب سے کرونا وائرس پر فنڈ قائم کر رہے ہیں، جس میں سندھ حکومت 3 ارب روپے دے رہی ہے، پیپلز پارٹی کے اراکین اسمبلی نے ایک ماہ کی پوری تنخواہ فنڈ کے حوالے کی ہے، نیک لوگوں نے سندھ حکومت سے رجوع کیا اور مدد کی پیش کش کی، فنڈز کے استعمال کے لیے 5 رکنی کمیٹی تشکیل دی گئی ہے، جس کی سربراہی چیف سیکریٹری سندھ کریں گے، دوسرے رکن سیکریٹری خزانہ ہوں گے، کمیٹی میں پرائیوٹ سیکٹر کے بھی 3 نمایندے شامل ہوں گے۔آج کراچی میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے سندھ حکومت کے ترجمان نے کہا کہ اب تک 290 ٹیسٹس کا نتیجہ آ چکا ہے، 147 افراد میں کرونا وائرس کی تشخیص نہیں ہوئی، جب کہ 143 افراد کا ٹیسٹ مثبت آیا، 290 افراد تفتان سے سکھر کے قرنطینہ سینٹر لائے گئے تھے۔
انھوں نے بتایا کہ کرونا وائرس میں مبتلا کراچی میں 36 لوگوں کو قرنطینہ میں رکھا گیا ہے، یہ تعداد 38 تھی تاہم 2 مریض صحت یاب ہو کر گھر جا چکے ہیں، مجموعی طور پر سندھ بھر میں 181 لوگ کرونا وائرس کا شکار ہیں