مجھے ڈی پورٹ نہ کیا جائے۔والد کی قبر ٹیکسلا میں ہے: امریکی خاتون

November 11, 2019 3:09 pm

اسلام آباد ۔جدت ویب ڈیسک :: پاکستان میں غیر قانونی طور پر 12 سال گزارنے والی امریکی معمر خاتون نے کہا ہے کہ ان کے والد کی قبر ٹیکسلا میں ہے، ڈی پورٹ نہ کیا جائے۔
تفصیلات کے مطابق 80 سالہ بزرگ امریکی خاتون کو آج پی آئی اے کی پرواز پی کے 701 سے مانچسٹر روانہ کیا جائے گا، خاتون مرے موڈ نے ڈی پورٹ ہونے سے انکار کرنے کے بعد ایئر پورٹ کو مسکن بنا لیا ہے۔
بزرگ خاتون نے بیان دیا ہے کہ ان کے والد کی قبر پنجاب کے تاریخی شہر ٹیکسلا میں ہے اس لیے وہ پاکستان سے نہیں جائیں گی، تاہم آج انھیں واپس مانچسٹر بھیجنے کی کوشش کی جائے گی۔
خاتون کا ایف آئی اے اہل کاروں سے یہ بھی کہنا تھا کہ وہ ان کے وکیل سے بات کریں، تاہم ایف آئی اے کا کہنا تھا کہ اگر کوئی وکیل ہے تو انھیں یہاں آ کر اجازت نامہ دکھانا چاہیے۔
امریکی خاتون 2001 میں 6 ماہ کے ویزے پر پاکستان آئی تھیں، تاہم انھوں نے ویزا مدت ختم ہونے کے باوجود 12 سال پاکستان میں غیر قانونی طور پر گزارے، آخر کار 2013 میں خاتون کو بلیک لسٹ کر کے پاکستان سے ڈی پورٹ کر دیا گیا۔گزشتہ روز وہ ایک بار پھر پی آئی اے کی پرواز پی کے 702 کے ذریعے مانچسٹر سے اسلام آباد پہنچی تھیں، امیگریشن کے وقت معلوم ہوا کہ ان کا نام بلیک لسٹ میں شامل ہے، چناں چہ انھیں ڈی پورٹ کیا گیا تاہم وہ پی آئی اے عملے کی غلطی سے بجائے ڈی پورٹ ہونے کے ہوٹل پہنچ گئیں، جس پر ایف آئی اے نے فوری ایکشن لیا۔
خیال رہے کہ ایف آئی اے نے امر یکی سفارت خانے کے عملے کو بھی ائیر پورٹ طلب کیا تھا، امریکی سفارتی عملہ بھی ڈی پورٹ ہونے والی خاتون مسافر کو واپس بھیجنے کی کوشش میں مصروف رہا۔

متعلقہ خبریں