علی رضا عابدی کے قتل میں استعمال ہوئے اسلحے کی فارنزک رپورٹ سامنے آگئی ,سیکیورٹی گارڈ گن لوڈ کرتا رہ گیا

December 26, 2018 7:20 pm

کراچی جدت ویب ڈسیک ::ا یم کیوایم کے سابق رہنما علی رضا عابدی کے قتل میں استعمال ہوئے اسلحے کی فارنزک رپورٹ سامنے آگئی ۔ واردات میں نائن ایم ایم اور تیس بور پستول کا استعمال ہوا۔ایس ایس پی ساؤتھ پیر محمد شاہ کا کہنا تھا کہ علی رضا عابدی منگل کے روز دفتر سے گھر جلدی آئے تھے۔علی رضا عابدی کو نائن ایم ایم اور 30 بور پستول سے قتل کیا گیا۔ رپورٹ میں انکشاف ہوا ہے کہ واردات میں استعمال ہونے والے 30 بور پستول سے رواں ماہ 10 دسمبر کو لیاقت آباد میں احتشام نامی نوجوان کو قتل کیا گیا۔تفتیشی حکام کے مطابق ٹارگٹ کلر کے دونوں ہاتھوں میں پستول تھے جبکہ دوسرے پستول سے چلائی گئی گولیاں ابھی میچ نہیں ہوئیں۔پولیس نے واردات کے بعد علی رضا عابدی کے سیکورٹی گارڈ کو حراست میں لے لیا ہے۔ پولیس کا کہنا ہے گارڈ نے واردات کے وقت جوابی فائرنگ نہیں کی۔

متحدہ قومی موومنٹ پاکستان کے سابق رہنما مقتول علی رضا عابدی کے نجی نے کہا ہے کہ ملزمان فائرنگ کرتے رہے اور میں گن لوڈ کرتا رہا لیکن گن پھر بھی لوڈ نہ ہوسکی۔ تفصیلات کے مطابق علی رضا عابدی کے قتل کے بعد عینی شاہد سیکیورٹی گارڈ نے پولیس کو اپنا بیان ریکارڈ کرادیا ہےویڈیو میں سیکیورٹی گارڈ کا کہنا ہے کہ علی رضا پرملزمان فائرنگ کرتے رہے اورمیں گن لوڈ کرتا رہا، گارڈ روم میں بیٹھا تھا کہ صاحب کی گاڑی دروازے پہنچی اور ٹرن لیا، علی رضا صاحب کبھی ہارن نہیں بجاتے خلاف توقع گاڑی کا ہارن بجا۔
میرے بائیں ہاتھ میں گن تھی دائیں ہاتھ سے دروازہ کھولنے لگا، دروازے کا ایک حصہ ہی کھولا تھا کہ باہرسے فائرنگ شروع ہوگئی، میں نے دروازہ چھوڑ کر گن لوڈ کرنے کی کوشش کی۔  سیکیورٹی گارڈ کا بیان میں مزید کہنا تھا کہ ایک مرتبہ گن لوڈ نہ ہوئی تو دوبارہ لوڈ کرنے کی کوشش کی، باربار کوشش کے باوجود بھی گن لوڈ نہ ہوئی۔
سیکیورٹی گارڈ نے بتایا کہ علی صاحب کو دیکھا تو وہ گاڑی کی سیٹ پر گرے ہوئے تھے اور گردن سے خون نکل رہا تھا، جب سے میں ڈیوٹی پر تعینات ہوا ایک بار بھی گن چلا کرنہیں دیکھی، کمپنی یا علی رضا صاحب نے مجھے کبھی گن کو چیک کرنے کا نہیں کہا، گن میں5راؤنڈ ہروقت موجود ہوتےتھے۔بیان کے مطابق سیکیورٹی گارڈ ایک ماہ25دن پہلے علی رضا عابدی کے بنگلے پرتعینات ہو ا تھا، اس نے بتایا کہ میری ڈیوٹی شام سات بجے سے صبح7بجے ہوتی ہے، میں شام کو آتا تو صبح والاگارڈ روزانہ مجھے گن دے کر جاتا تھا۔

متعلقہ خبریں