کشمیر کا مسئلہ اقتصادی پیکیج کا نہیں بلکہ ایک کروڑ 40 لاکھ لوگوں کے بنیادی حق کا مسئلہ ہے‘ سید علی گیلانی

Syed Ali Gilani
May 21, 2018 3:06 pm

سرےنگر جدت ویب ڈیسک :مقبوضہ کشمےر مےں کل جماعتی حرےت کانفرنس کے چےئرمےن سید علی گیلانی نے کہا ہے کہ تاریخ گواہ ہے آج تک دنیا میں کسی قوم کو اقتصادی ترقی اور مراعات کے عوض غلام نہیں بنایا جاسکا ہے اور جو لوگ ایسا سوچتے ہیں وہ یا تو تاریخ سے نابلد ہےں یا احمقوں کی دنیا میں رہتے ہیں۔ سےد علی گےلانی نے سرےنگر مےں جاری اےک بےان مےں کہا کہ جموںو کشمیر کا مسئلہ اقتصادی پیکیج کا نہیں بلکہ ایک کروڑ 40 لاکھ لوگوں کے پیدائشی اور بنیادی حق، حق خودارادےت کا مسئلہ ہے جس کا وعدہ بھارت کے حکمرانوں نے قومی اور بین الاقوامی سطح پر کشمیریوں کے ساتھ کیا ہے۔انہوں نے بھارتی وزیرِ اعظم نریندر مودی کے بیان پر کہ ہر مسئلے کا حل اقتصادی ترقی ہے ، تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ اگر بھارت ہماری سڑکوں پر سونا چاندی بچھا دے اور ہیرے جواہرات کے محل تیار کرے ، جموںو کشمیر کے عوام تب بھی بھارت کے جبری قبضے کو تسلیم نہیں کریں گے۔انہوں نے کہابھارتی وزیر اعظم نے حقائق سے چشم پوشی کرکے تاریخ کو جھٹلانے کی ناکام کوشش کی ہے کےونکہ جتنی اقتصادی ترقی انگریزوں اور مغلوں کے دور میں ہوئی ہے، بھارت ستر سال بعد بھی آج انہی اقتصادی اور تعمیری شاہ کاروں کی وجہ سے جانا اور پہچاناجاتا ہے، اس کے باوجو د بھارت مےں انگرےزوں کے خلاف آزادی کی تحرےک چلی۔ حریت چیئرمین نے کہا کروڑوں روپے کے منصوبے شروع کرکے ہم پر احسان جتایا جارہا ہے اورغاصب طاقتوں کے مقامی حاشیہ بردار پھولے نہیں سمارہے ہیں۔ ہم ان بندگانِ شکم سیاستدانوں پر واضح کرنا چاہتے ہیں کہ یہ ڈرامے بھارت یہاں گزشتہ سات دہائیوں سے دہرارہا ہے اور ایسی مکارانہ چالوں سے حقائق تبدیل نہیں ہوا کرتے۔

متعلقہ خبریں